certifired_img

Books and Documents

Books and Documents

شاہ جہاں کی دولت مندی اور خوشحالی کےتذکرے معاصرین کی تاریخ میں بہت ملتے ہیں اسی لئے اس عہد مغلیہ کا سنہری دور کہا جاتاہے اس سنہری دور کی مثالیں آج بھی تاج محل اور لال قلعہ کی شکل میں موجود ہیں جب کہ اس عہد میں مفلس و غریب عوام بھوک و فاقہ کے ہاتھوں خاموش سے زمین کی آغوش میں پنہا ں ہوکر مٹ گئے اور اپنی مفلسی کے نشانات بھی اپنے ساتھ لے گئے اس سنہری دور میں دکن اور گجرات میں جب قحط پڑا تو رحمدل بادشاہ نے برہان پور ، احمد آباد اور سورت میں لنگر خانے قائم کرائے اور دو شنبہ کو جو شاہ جہاں کی تخت نشینی کا دن ہونے کی وجہ سے مبارک تھا۔

 

مسلمانوں کی حکومت کے قیام سےدوسری تبدیلی یہ آئی کہ سیاسی و معاشی و سماجی وجوہات کی بنا پر یہاں کی مقامی آبادی میں کچھ لوگ مسلمان ہونا شروع ہوگئے ۔ ان کارد عمل اہل اقتدار طبقے پر یہ ہوا کہ اگر ان کےساتھ مساوات کاسلوک کیاجائے تو انہیں بھی اقتدار اور مراعات میں شامل کرنا پڑے گا اس لئے اقتدار اور مراعات سے محروم کرنے کےلئے اس طبقے کو نسلی اعتبار سےکمتر اور نیچا سمجھا گیا اور انہیں سماجی و معاشرتی و سیاسی زندگی میں برابر کا درجہ نہیں دیا گیا ۔

 

This attempt might seem bizarre for some, for what, they might ask, might the Quran, which appeared centuries after Jesus, have to contribute to our understanding of the historical Jesus? A great deal, a study of this voluminous tome will reveal, for Jesus is honoured as a prophet in the Quran, which refers to him in several verses. Belief in Jesus is integral to faith in Islam. Muslims regard Jesus as a ‘Muslim’ (that is, one who has submitted to God) and as having preached Islam—that is, submission to the one God.....

Without any hues of divine enlightenment, Lesley, a Jew settled in Seattle, talked of the Prophet as a boy who had very unusual and trying circumstances. A boy who had lost his father before he was born, he lost his mother when he was all of six. Brought up by his grandfather, his was a remarkable rise from the edges of the society to a reasonably well off and trusted business agent by the time he was getting into middle age. Except that all this paled when compared to what transpired on Mount Hira when he was 40, the moment he got the first revelation. It is here that Lesley rose above various biographers and put Muhammad’s reaction –– he was shaken to the bone –– in a dispassionate manner, casting aside various accounts of mythical peace and bliss…..

 

ہمارے معاشرے کی طبقاتی تقسیم میں مالک وملازم ’ آقا و خادم ، سرپرست و زیر دست اعلیٰ و ادنیٰ کی اخلاقی قدریں بھی جدا جدا ہیں ۔ مثلاًؑ ایک خادم اورملازم کےلئے ضروری ہے کہ وہ اپنے آقا کا وفادار ہو اور اس کی اطاعت و فرمانبرداری کرے۔ اس کے احکامات کےبے چوں چرا تعمیل کرے یہاں تک کہ ضرورت پڑنےپر اپنے آقا کی خاطر جان تک دے دے۔ خادم میں یہ احساسات و جذبات کیوں پیدا ہوتےہیں؟ اس حقیقت کو سمجھنے کےلئے آقا اور ملازم کی شخصیتوں کو دیکھا جائے :آقا وہ شخص ہے جو اپنے ملازم یا خادم کو معاش فراہم کرتاہے اس کی ضروریات زندگی پوری کرتا ہے ۔

Jinnah’s paranoia led to Pakistan’s reckless first invasion of Kashmir, months after independence. The author concludes that it is the dispute over Kashmir, and that alone, which ensures a “violent, unbridgeable chasm” still divides India and Pakistan. He might have considered an alternative possibility: the idea that Pakistan’s army, and its supporters, keeps alive the dispute in Kashmir as a means of preserving its outsized claim on public resources and policymaking....

 

‘‘ اقبال نے ہندوستان کےمسلمانوں کےسامنےملت اسلامیہ کی ایک سیاسی شخصیت رکھی، جس کا دنیا میں کہیں وجود نہ تھا ۔ حالانکہ ضرورت اس امر کی تھی کہ اگر اقبال کو ہندو مسلم متحدہ قومیت سے انکار تھا تو اس براعظم کی مسلمان آبادی کے گزشتہ آٹھ سو سال کی ہندی اسلامی فکر پر نظر ڈالتا اور اس کا احصاء اور تجزیہ کرتا، اس کی اساس پر اس سرزمین میں ہندی مسلم قومیت کی عمارت اٹھاتا ،لیکن وہ دوسرے مسلمان ملکوں کےشاندار ماضی ہی کےراگ الاپتا رہا اور اسلامی ہند کی تاریخی عظمتوں میں خال خال اسےکوئی پرکشش موضوع سخن ملا۔

 

ہندوستان میں ایسٹ انڈیا کمپنی کا عروج ہندوستان کی سیاست میں انتشار اور ناانصافی کی وجہ سے تھا کمپنی نے اس سیاسی صورت حال سے فائدہ اٹھایا اور آہستہ آہستہ اپنے اقتدار کو یہاں تک بڑھایا کہ مغل بادشاہ بھی اس وظیفہ خوار ہوگیا ۔ اس پورے عرصے میں ہندوستان کےحکمراں طبقے نے خود کو انتہائی نا اہل اور نالائق ثابت کیا ان میں نہ تو اتنی فراست تھی کہ وہ کمپنی کی بڑھتی ہوئی طاقت دیکھ کر سیاسی نشیب و فراز کا اندازہ لگا لیتے اورنہ ہی ان میں اتنی دانش مندی تھی کہ وہ آپس کے جھگڑوں کو ختم کرکےاپنی سیاسی حیثیت کو مضبوط کرلیتے ۔

 

سرسید کے بارےمیں دوسری بات یہ کہی جاتی ہے کہ انہوں نے مسلمانوں کوذلت و پستی سےنکالا اور ان میں تعلیم عام کی ان کے اس کارنامے کو بھی مبالغے کےساتھ پیش کیا جاتا ہے دراصل مسلمانوں کو پستی کا تصور ڈبلیو ہنٹر کی کتاب ‘‘ہمارے ہندستانی مسلمان’’ نے دیااس میں بنگال کے مسلمانوں کی پستی اور جہالت کاذکر ہے لیکن بعدمیں اس کو یورپی کے مسلمانوں پر لاگو کردیا ۔ جبکہ یوپی کے مسلمان پورے ہندوستان میں سب سے زیادہ تعلیم یافتہ اور معاشی طور پر خوشحال تھے اور تعلیم کےمیدان میں ہندوؤں سےبھی آگے تھے یہی حال سرکار ی ملازمتوں کا تھا ۔

 

ہندوستان کو جن مسلمان حکمرانوں نے فتح کیا ان کے دائرہ عمل میں لوگوں کو مسلمان کرنے کا کوئی منصوبہ نہیں تھا ان کی فتوحات خالصتاً سیاسی مقاصد کے لئے تھیں یعنی سلطنت کی حدود بڑھانا اورذرائع آمدنی میں اضافے کرنا ۔ اگر مفتوح قوم میں سے کچھ نےاسلام قبول کرلیا تو ان کی ہمت افزائی ضرور کی گئی لیکن انہوں نے اس پالیسی کو اختیار نہیں کہ مفتوحین کو تبلیغ کے ذریعے یا جبر کے ذریعے مسلمان کیا جائے اس عمل میں کئی دقتیں تھیں : یہ نا ممکن تھا کہ تمام مفتوحہ علاقے کے لوگوں کو جبراً مسلمان بنایا جاتا اور انکار کی صورت میں تمام آبادی کو قتل کردیا جاتا مذہب کی تبدیلی ویسے بھی اچانک نہیں ہوتی۔

 

جب ہندوستان میں مسلمانوں کی حکومت قائم ہوئی تو ان کا تعلق وسط ایشیا اور ایران  سےبھی رہا سیاسی و ثقافتی اثرات انہوں نے وسط ایشیاء اور ایران سے قبول کئے جب کہ مذہبی معاملات میں  وہ حجاز کےعلماء سےمتاثر تھے حجاز کی مذہبی درس گاہیں اسلام کی کلاسیکی تعلیمات کا مرکز تھیں اور زمانے کے تبدیلیوں سے دور اسلام کی تاویل  وتفسیر قدیم رجحانات کے ساتھ کرتی تھیں ہندوستان کےجو علماء ان درسگاہوں میں تربیت پاتے تھے وہ  واپس  ہندوستان آکر انہیں  مغربی رجحانات کو پھیلاتے تھے اس کی وجہ سےہمارے علماء اور مذہبی جماعتیں  متشدش اور بنیاد پرست ہوگئیں او رہندوستان کےسیاسی و سماجی حالات کو نہیں سمجھ سکیں۔

 

Qutb, Amin writes, misinterpreted the term Quwwah (power, strength) in this verse to mean force intended to subdue non-Muslims. Qutb claimed that the purpose of Quwwah was not just defence. He strongly propagated the use of offensive force, and claimed that Muslims were ordered to strike fear and disseminate terror in the hearts of the ‘enemies of God’. In Qutb’s misinterpretation of Quwwah, which Amin notes is not shared by many other exegetes of the Quran, the term shifts from being mere military preparedness for the purposes of deterrence to being an offensive tool whose purpose is to subdue others.....

ہندوستان میں مسلمان معاشرے کی ذات پات اورنسل کی تاریخ میں ایک اہم اضافہ ایک نامعلوم مصنف کی کتاب ‘‘مرزانامہ’’ ہے یہ کتاب برٹش میوزم میں نسخہ نمبر 1817-16 AD میں درج ہے اور اندازاً یہ 1660 ء میں لکھی گئی تھی اس کتاب کا انگریزی میں خلاصہ عزیز احمد نے کیا تھا اور اسی سے اس کا خلاصہ یہاں درج کیا جارہا ہے اگر چہ ‘‘مرزا نامہ ’’ کے عنوان سے اور کتابوں کا بھی پتہ چلتا ہے مگر اس میں جو تفصیل ہے وہ دوسری کتابوں میں نہیں ہے۔

 

Born in a world where the Muslim community has been divided into two indefinite sects makes for a reality that we have come to accept and also overlook. The conflict between Sunnis and Shias is the news of everyday, but there has never been a proper, unbiased understanding of the real issue. Where did all of this animosity really stem from? The Sunnis have their version and the Shias have theirs.....

آٹھویں صدی اور انیسویں صدی کا ہندوستان سیاسی و معاشی اور معاشرتی طور پر ٹوٹ پھوٹ کا شکار تھا، مغل سلطنت کی مرکزیت ختم ہوچکی تھی۔ صوبائی طاقتیں خود مختار ہوکر خانہ جنگیوں میں مصروف تھیں ۔ انگریز آہستہ آہستہ ہندوستان میں اپنے قدم جمارے تھے ۔ مسلمان معاشرے میں امراء اور علماء اپنی مراعات کو کھونے کے بعد عدم تحفظ کاشکار تھے ۔اگر چہ ایک مسلمان کےلئے ان حالات نے کوئی تبدیلی نہیں کی تھی، وہ پہلے ہی سے سماجی طور پر پس ماندہ تھا اور اس کے پاس بگڑتے ہوئے حالات میں کھونے کے لئے کچھ نہ تھا ۔

 

انگریزوں کی فتح کے بعد علماء کےمسائل میں مزید اضافہ ہوا ۔ سب سے پہلا مسئلہ تو یہ پیدا ہوا کہ کیا ہندوستان دارالحرب ہے یا دارالسلام ؟ اگر دارالحرب ہے تو پھر کیا اس ملک سے ہجرت کی جائے یا جہاد کیا جائے؟ دوسرا مسئلہ یہ تھا کہ اگر ہجرت نہ کی جائے او ریہاں رہائش برقرار رکھی جائے تو کیا اس صورت میں انگریز کی ملازمت کی جائے؟ کیا انگریزی زبان کو سیکھا جائے؟ اور کیا انگریزی طور طریق اور آداب کو اختیار کیا جائے؟ یہ وہ مسائل تھے کہ جن پر علماء نےاپنےاپنے مفادات کی روشنی میں فتوے دیئے ۔ ولی اللہ خاندان کے سربراہ شاہ عبدالعزیز کا اس سلسلے میں یہ موقف تھا کہ ہندوستان دارالحرب ہے لیکن ہندوستان سےہجرت ضروری نہیں ۔

جب مغلوں کا زوال ہوا اور اس کے ساتھ علماء کے وظیفوں او رمدد معاش کی جاگیروں کا سلسلہ ختم ہونا شروع ہوا تو اس میں سے کچھ چھوٹی چھوٹی مسلمان ریاستوں میں پناہ لینی شروع کردی او رکچھ نے ایسٹ انڈیا کمپنی کی ملازمت قبول کرلی ۔ مگر اکثریت کے لئے معاش کے دروازے بند ہوگئے، اس کا حل یہ نکالا گیا کہ جگہ جگہ مذہبی مدرسے قائم ہونا شروع ہوگئے اور چندوں کے ذریعے علماء نے اپنی گزر اوقات کا حل نکالا ، اس صورت میں ان کا تعلق  مسلمانوں کے اونچے طبقوں یعنی زمینداروں اور تعلقہ داروں سے ہوگیا ۔

While Islamic theological literature abounds in speculations about the rewards of paradise and the punishments of hell, these ‘expositions’ catered to the intellectual and emotional needs of the era, are not rooted in the Qur’an, and can hardly be of any help to the believer. To earn God’s blessings, a believer needs the glow of faith, the love of God, and compliance with divine guidance, rather than the attraction of hur4 or fear of hell. However, the believers can take a lesson from the Qur’anic description of human state in hell and paradise, and in doing so, cultivate a behaviour pattern that can make their life pleasant on earth......

 

دیوبند فرنگی محل اور مظاہر العلوم اور ان جیسے مدرسوں نے جن طالب علموں کو پیدا کیا وہ جدید تعلیم ، جدید روایات اور وقت کی تبدیلیوں سے قطعی ناواقف تھے ۔ اور ذہنی طور پر وہ عہد و سطی کی پیدوار تھے ۔ نئی سیاسی و سماجی اور سائنسی و فنی ایجادات اور تبدیلیوں سےنہ صرف ناواقف تھے بلکہ اس عمل کو سمجھنے سے قاصر تھے ۔ اس لئے یہ نہ کوئی پیشہ اختیار کر سکتے تھے او رنہ کوئی ملازمت ان کی جگہ صرف مدرسے اور مسجدیں تھی، او راپنے معاشی مسائل کو حل کرنے کے لیے ان کی کوشش تھی کہ مذہبی ادارے قائم  ہوتے رہیں چندہ جمع ہوتے رہے  او رلوگ مذہبی عقائد و توہمات سے چمٹے رہیں ۔

ہندوستان میں مسلمان معاشرہ، دو طبقوں میں منقسم تھا ۔ ایک اشراف یا امراء کا طبقہ اور دوسرا جلاف اور عوام کا۔ طبقہ اعلیٰ نے جو ثقافتی اقدار تخلیق کیں مثلاً ناموس ، عزت، عصمت،  شان و شوکت اور آن بان کے لئے بہترین قیمتی سازوسامان ، ہیرے جواہرات، ہاتھی گھوڑے اور محلات رکھتا تھا ۔ عمدہ کھانا کھاتا اور نفیس لباس استعمال کرتا تھا وہ اسی طرح اپنے حرم میں خوبصورت عورتیں جمع کرتا تھا جیسے دوسری قیمتی اشیاء اور جس طرح قیمتی اشیاء کی حفاظت کرتا تھا اسی طرح بیگمات کی حفاظت کی غرض سے اونچی اونچی دیواروں کی محل سرائیں تعمیر کراتا تھا او ر پہرے پر فوجی و خواجہ سرا رکھا کرتا تھا۔ ان پر پردے کی سخت پابندی ہوتی تھی تاکہ دوسروں کی ان پر نظر نہ پڑے ۔

ہندوستان میں اسلام اوّل جنوبی ہندوستان میں تاجروں کے ذریعے پھیلا پھر سندھ میں عربوں کی فتح کے بعد اور آخر میں ترکوں کی فتح کے بعد شمالی ہندوستان آیا ۔ ہندوستان میں مسلمان کی آمد سے قبل یہاں جو مذہبی ، سیاسی، سماجی، اور اقتصادی حالت تھی اس کی بنیاد ذات پات تھی ۔ معاشرے کےمختلف طبقے مختلف ذاتوں اور طبقوں میں تقسیم تھے ۔ اب ذات پات کی تقسیم میں اس بات کی کوئی گنجائش نہیں تھی کہ کوئی شخص اپنی صلاحیت کے ذریعے معاشرے میں کوئی اعلیٰ مقام حاصل کرسکے ۔ یہاں انسان کی پیدائش ہمیشہ کے لیے اسے ایک نہ تبدیہ ہونے والا سماجی مقام اور مرتبہ دیتی تھی۔ جس سے چھٹکارا پانا یا تبدیل کرنا اس کے لیے ایک ناممکن امر تھا ۔

روئے زمین کے بادشاہ خدائے بزرگ و بر تر کی بر گزیدہ مخلوق ہیں ان کے حکم کی خلاف ورزی یا اہانت شروع میں کسی طرح جائز نہیں ۔ پس کسی معاملے میں ظاہری یا پوشیدہ ان کی مخالفت جائز نہیں ..... نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا ہے کہ جس نے سلطان کی اطاعت کی اور جس نے میری اطاعت کی اس نے اللہ کی اطاعت کی اور جس نے اللہ کی اطاعت کی وہ بخشا گیا ۔ (1)

اسلامی معاشرے میں اس وقت سماجی تبدیلیاں آنا شروع ہوئیں جب اسلامی فتوحات کے ذریعے عراق و ایران فتح ہوئے اور ایک بڑی تعداد نے اسلام قبول کرلیا ۔ چونکہ عرب معاشرے میں کسی فرد کی شناخت اس کے قبیلے کے ذریعے سے ہوتی تھی اس لیے جب غیر عرب مسلمان ہوئے تو مسئلہ یہ پیدا ہوا کہ انہیں کس طرح عرب کے قبائلی نظام میں ضم کیا جائے ۔ چنانچہ اس کا حل یہ نکالا گیا کہ مسلمان ہونے والے افراد کو کسی نہ کسی عرب قبیلے کا رکن بننا پڑے گا۔ غیر عرب قبیلوں میں شمولیت کے بعد یہ لوگ موالی کہلائے کہ جس کا واحد مولا ہے ۔ چونکہ موالی عرب نہیں تھے اس لیے عرب قبائلی نظام میں ان کی حیثیت ثانوی ہوکر رہ گئی ۔

 

انسان کی فطرت میں توہمات کا اثر اس قدر ہوتاہے کہ اس کی وجہ سے اس کے جذبات کو آسانی سے بھڑکایا جاسکتا ہے ۔ اس لیے وہ روایات کہ جو عقیدہ اور توہمات کی بنیاد پر تشکیل دی جاتی ہیں، وہ جلد ہی مقبول ہوجاتی ہیں اور انہیں لوگ بغیر کسی تر دو کے قبول کرلیتے ہیں ۔ مثلاً اگر یہ مشہور کردیا جاتا ہے کہ کسی صوفی یا پہنچے ہوئے پیر کیے قبر اچانک دریافت ہوئی ہے لوگ اس کی تحقیق کئے بغیر عام طور سے قبر پر ثواب یا منت ماننے کی غرض سے جانا شروع ہوجاتا ہے ۔ اور اس قبر کی دریافت ہونے کے ساتھ ہی اس کے ارد گرد روایات بننے کا سلسلہ شروع ہوجاتاہے ۔

 

However, the word literally means ‘the close ones.’ Therefore, in the second instance it understandably stands for people who are close enough, but not necessarily relatives.4 The subsequent reference to the neighbour who is a ‘stranger’ neither a relative, nor ‘close enough,’ must therefore include anyone, regardless of religion, nationality, or race. In other words, this verse explicitly calls for kindness to all people including strangers who may belong to other faiths, nationalities or races.,,,,,

 


Get New Age Islam in Your Inbox
E-mail:
Most Popular Articles
Videos

The Reality of Pakistani Propaganda of Ghazwa e Hind and Composite Culture of IndiaPLAY 

Global Terrorism and Islam; M J Akbar provides The Indian PerspectivePLAY 

Shaukat Kashmiri speaks to New Age Islam TV on impact of Sufi IslamPLAY 

Petrodollar Islam, Salafi Islam, Wahhabi Islam in Pakistani SocietyPLAY 

Dr. Muhammad Hanif Khan Shastri Speaks on Unity of God in Islam and HinduismPLAY 

Indian Muslims Oppose Wahhabi Extremism: A NewAgeIslam TV Report- 8PLAY 

NewAgeIslam, Editor Sultan Shahin speaks on the Taliban and radical IslamPLAY 

Reality of Islamic Terrorism or Extremism by Dr. Tahirul QadriPLAY 

Sultan Shahin, Editor, NewAgeIslam speaks at UNHRC: Islam and Religious MinoritiesPLAY 

NEW COMMENTS

  • @Mohammad Hussain HINDUS HAVE ALWAYS LIVED IN HARMONY WITH ALL COMMUNITIES. TROUBLE SHOOTERS GET WHAT....
    ( By Dev Soni )
  • @Na H Il FACTS ARE BASED ON COMMON SENSE, WHICH IS MOST UNCOMMON WITH PEOPLE WHO USUALLY BRUSH IT ASIDE.
    ( By Dev Soni )
  • @ Dev Lmao even rioters nd supporters of mass murderers look concerned abt "harmony" No one can handle...
    ( By Mohammad Hussain )
  • @Dev Soni I would really like to know the fact....
    ( By Na H Il )
  • MADRASSAS ARE THE ROOT CAUSE OF RELIGIOUS FANATICISM AND SHOULD BE BANNED FOR RELIGIOUS HARMONY.
    ( By Dev Soni )
  • Iam humbly requesting all the learned friends please don't waste...
    ( By Attaullah Mahdi )
  • In India secularism means that tolerance of atrocity and exploration...
    ( By Satchidananda Mishra )
  • I think this is the best way to make presence on fb
    ( By Madhukar Sibal )
  • If any nation wants to learn how to treat a minority in times of need, please....
    ( By Ghulam Hussain )
  • Madarasas will flourish till the day of judgement. The critics and anmeies...
    ( By Ashiq Dar )
  • “It is reported that the Prophet (peace and blessings be upon him) said, “Surely, in the body there is a small piece of flesh....
    ( By Ghulam Ghaus Siddiqi غلام غوث الصديقي )
  • This write-up points out to us a very deplorable situation developing in Pakistan. Pakistan has done practically nothing to....
    ( By Ghulam Ghaus Siddiqi غلام غوث الصديقي )
  • Fully agree that "Oppression of Women Has Nothing to Do With Islam Rather It Is the Consequence of Cultural Practices"
    ( By Kaniz Fatma )
  • The usual meaningless whataboutery from Hats Off!'
    ( By Ghulam Mohiyuddin )
  • Hats Off maliciously exaggerates "muslim sense of entitlement. and of course their inbred hatred of idolaters and polytheists, ....
    ( By Ghulam Mohiyuddin )
  • by the where were you hiding after the lahore church blast? and under which stone....
    ( By hats off! )
  • islamophobia is the best defence against the islamic/muslim sense of entitlement...
    ( By hats off! )
  • sahih muslim 4-1039. so that is what the favorite wife of the prophet said...
    ( By hats off! )
  • Your criticism of Qutb was lukewarm but your support is firm.....
    ( By Ghulam Mohiyuddin )
  • Only the ignorant hatemongers still continue to badmouth CAIR...
    ( By Ghulam Mohiyuddin )
  • You read the Quran as a slavish literalist but you do not have the wisdom to see....
    ( By Ghulam Mohiyuddin )
  • You don't even have the sense to see that Pamela Taylor is not a critic of Islam...
    ( By Ghulam Mohiyuddin )
  • My question arose from your self-invented hypothesis that God sent subsequent....
    ( By Ghulam Mohiyuddin )
  • Only a slavish literalist would call someone an apostate for rejecting words that insult....
    ( By Ghulam Mohiyuddin )
  • Not only were Ilhan Omar's arguments valid, she knows the U.S. Constitution...
    ( By Ghulam Mohiyuddin )
  • The ILO defines "gender equality" as follows: "Gender equality entails the concept....
    ( By Ghulam Mohiyuddin )
  • I wonder how GM sb is blind to my criticism of Syed Qutub. However, I will not throw out the baby with the....
    ( By Naseer Ahmed )
  • every facilitator of cair or stealth jihadis by definition speak the truth. just like the "moderates".
    ( By hats off! )
  • I say what Allah says in the Quran about the Quran and about His previous Books. I do not say anything....
    ( By Naseer Ahmed )
  • You are digressing. Pamela only sees problems and not solutions and the fact that the guidance....
    ( By Naseer Ahmed )
  • You are the one who raised the question and have the answer as to why the final revelations....
    ( By Naseer Ahmed )
  • Are you asking questions or taking up a position ? You are rejecting the verses which makes you an apostate. You ....
    ( By Naseer Ahmed )
  • most of the islamic terrorists quote either hadees or the qur'an. those quoting....
    ( By hats off! )
  • Naseer sb. asks, "What is your basic belief about verse 9:5 which...
    ( By Ghulam Mohiyuddin )
  • Naseer sb. is now trying to use the Quran as a weapon of war against me....
    ( By Ghulam Mohiyuddin )
  • Naseer sb, asks, "Has GM sb proved that any people of earlier scriptures ....
    ( By Ghulam Mohiyuddin )
  • Without seeing a problem, how is one going to find a solution? As I said before...
    ( By Ghulam Mohiyuddin )
  • Naseer sb. says, "there is no such thing as my scripture and your scripture....
    ( By Ghulam Mohiyuddin )
  • Naseer sb. rushes to the defense of Qutb but he did not have a single kind word for either....
    ( By Ghulam Mohiyuddin )
  • Charles Blow speaks the truth.
    ( By Ghulam Mohiyuddin )