certifired_img

Books and Documents

Urdu Section

تاہم، اس میں بڑی الجھنیں ہیں ، اس لئے کہ اسلام کی تعین کا کوئی صحیح طریقہ ہے ہی نہیں ، لہٰذا اسلام کے حقیقی چہرے کی تلاش ہمیشہ ایک وہم ہی رہے گی۔ سب سے بڑی مصیبت یہ ہے کہ اسلام کے اندر انتہا پسندوں سے لیکر اعتدال پسندوں تک تمام جماعتیں حق پر ہونے کا دعوی کرتی ہیں۔ اسلامی روایت کی تکثیریت پسندی کو تسلیم کرنا ہی خود ایک فرحت بخش خیال ہے جس پر مجوزہ کونسل خاموش ہے۔

 

یہ پیغام ناامیدی کے تاریک صحرا میں ہمارے لئے امیدوں کی ایک کائنات ہے۔ اس سے ہمیں برائیوں کے مقابلے میں ثابت قدمی کی طاقت ملتی ہے۔ یہ پیغام ہمیں ہر کس و ناکس کے در پر سرجھکانے سے آزاد کردیتا ہے۔ اس سے ہمارے نقطہ نظر میں تبدیلی پیدا ہوتی ہے جس کے نتیجے میں ہماری پوری زندگی بدل جاتی ہے۔

 

اسلامی صحائف واضح طور پر طلاق دینے کا حق مردوں اور عورتوں دونوں کو عطا کرتے ہیں۔ لیکن خبروں کے مطابق بعض ائمہ گھریلو تشدد کا سامنا کرنے والی مسلم خواتین کو طلاق کا یہ اسلامی حق دینے کے لئے تیار نہیں ہیں جس کی وجہ سے بعض دفعہ ایسی خواتین کئی کئی سالوں تک ذلت آمیز رشتہ ازدواج میں بندھے رہنے پر مجبور ہوتی ہیں۔

 

اس دردناک سانحے کی طویل رات کے بعد بچوں کو بچانے کے لئے ان کی ہمدردی اور کوششوں پر ڈاکٹر کفیل کی میڈیا میں ہر جگہ تعریفیں ہونے لگیں۔ لیکن اس کے بعد ان کی پہچان انتہاپسندوں کو راس نہیں آئی۔ ایک مسلمان ہیرو کیسے بن سکتا ہے؟ آخر کار یہ ایک ایسی حکومت تھی جو مسلم مخالف مدوں پر انتخاب لڑ کر اقتدار میں آئی تھی اور ان کے لئے اس سے بھی بڑی تکلیف کی بات یہ تھی کہ حکومت کی مہلک خاموشی کے بیچ ایک ایسا مسلمان تھا جس کی مختلف مقامات پر تعریفیں کی جا رہی تھیں۔ ٹرول (troll) فعال ہوگئے۔ ڈاکٹر کفیل کے ماضی کے پنّے اُلٹے گئے اور ان پر احمقانہ الزامات عائد کئے گئے۔ جن میں مضحکہ خیز اور جھوٹے الزامات بھی تھے۔

 

قطر اخوان المسلمین کا استحصال نہیں کررہا ہے بلکہ سچائی اس کے برعکس ہے۔ لہٰذا ، سوال یہ ہے کہ کون سا جھٹکا قطر کی آنکھیں کھولنے کے لئے کافی ہو گا تاکہ اسے حقیقت کا ادراک ہو سکے؟ قطری اخوان المسلمین کو اور کون سی جانکاری اور کیسی شہادت چاہئے کہ جس سے اس کے عملہ کو اس بات کا احساس ہو سکے کہ وہ صرف قرضاوی اور ان کی تنظیم کے غلام ہیں اور وہ ان کا استعمال کر رہے ہیں ، انہیں بلیک میل (blackmail) کر رہے ہیں اور انہیں دھوکہ دے رہے ہیں؟

 

مختصر طور پر یہ عمل اسلام کے بنیادی ماخذ قرآن مجید کے احکام کی شدید خلاف ورزی ہے ، جس کا حکم یہ ہے کہ ایک زوجین کے درمیان مصالحت کی تمام تر کوششیں ناکام ہو جائیں تو انہیں طلاق کے ذریعہ مکمل طور پر علیحدہ کر دیا جاتا ہے۔ اب ان دو طلاق شدہ افراد کے درمیان دوبارہ عقد نکاح نہیں ہو سکتا جب تک کہ وہ عورت کسی نئے مرد سے شادی نہ کرے اور بھر ان دونوں کے درمیان بھی حسب سابق طلاق نہ ہو جائے۔ قرآن نے یہ طویل ترین مرحلہ اس لئے بیان کیا ہے کہ لوگ نکاح اور طلاق کو کھیل نہ بنا لیں۔

 

یہاں یہ نکتہ قابل ذکر ہے کہ حنفی اسلامی فقہاء نے عرفِ عام کا نظریہ قانون سازی کے لئے ایک ہدایتی اصول کے طور پیش کیا ہے۔ اگر ہندوستانی مسلمان کلاسیکی اسلامی قانون کے اندر عرف و عادت پر مبنی متعدد مفروضات کا بنظر غائر مطالعہ کریں تو وہ قرآنی اور سنت کی تازہ ترین تشریح کی بنیاد پر قرون وسطی کے بجائے موجودہ روایتی معمولات ، سماجی اقدار اور عہد حاضر کی اخلاقیات کی روشنی میں اپنے نقطۂ نظر کا دوبارہ جائزہ لینے کے قابل ہوں گے۔

 

‘‘کشمیر کے قانون سازوں نے پولیس اہلکار کو عصمت دری کے الزام میں گرفتار ہونے سے بچانے کے لئے احتجاجی مظاہرے کئے۔ عورتوں نے بھی بدکاروں کو بچانے کے لئے احتجاجی مظاہرے کئے: کیونکہ وہ ہندو ہیں اور جس بچی کی عصمت لوٹی گئی اور اس کے بعد اسے قتل کر دیا گیا وہ ایک مسلمان چرواہے کی بیٹی تھی۔ جب ذہنی پراگندگی اور ظلم و ستم کی سطح اس حد تک گر جائے تو مایوسی کے ساتھ آہ بھرنے کے علاوہ اور کوئی راستہ نہیں بچ جاتا ہے۔ لیکن جب غم و غصہ بڑھ جائے تو ناامیدی ختم ہو جاتی ہے۔"

 
God Is Greatest Mathematician  اللہ سب سے بڑا ریاضی دان ہے
Maulana Wahiduddin Khan
God Is Greatest Mathematician اللہ سب سے بڑا ریاضی دان ہے
Maulana Wahiduddin Khan, Tr. New Age Islam

خدا کے مظاہر اس کائنات میں ہزاروں طریقوں سے عیاں ہیں لیکن اس نعمت بے بہا سے صرف وہی لوگ بہرہ ور ہوتے ہیں جن کے دل اور دماغ اس کے مشاہدے کے لئے کھلے ہوئے ہیں۔ جو لوگ جو خدا کی تخلیق اور بے شمار مظاہر فطرت پر غور و فکر کرتے ہیں صرف انہیں ہی خالق کائنات کی اس قدر پختہ معرفت حاصل ہو سکتی ہے۔

 

ظلم کی داستان بیان کرتا آصفہ کا جسم اس انتہاپسند قوم پرستی کا نہ تو کوئی پہلا ثبوت تھا اور نہ ہی آخری ہوگا۔ کئی سال پہلے سورت میں بھی ایسا ہی ایک حادثہ پیش آ چکا ہے اور اس سے بھی کئی سال قبل کنان پوشپورا میں بھی اسی طرح کا ایک واقعہ پیش آیا تھا۔ اس بربریت کا شکار ہونے والے کچھ متاثرین تو انصاف تلاش کرتے کرتے اس دنیا سے چل بسے اور جو زندہ ہیں وہ اب بھی انصاف کی راہ تک رہے ہیں۔ اب یہ وقت ہی بتائے گا کہ آیا ہمارے غم و غصہ اور ہمارے اخلاقیات کا شعور آصفہ پر آ کر ختم ہو جاتا ہے یا یہ کہ آصفہ کے ساتھ پیش آنے والا یہ عظیم سانحہ ہمیں ہماری اجتماعی ذمہ داریوں کا گہرا محاسبہ کرنے پر آمادہ کرے گا۔

 

قرآن مجید کی مذکورہ بالا دونوں آیتوں کو پڑھنے کے بعد جنگ کا اسلامی تصور بہت واضح ہو جاتا ہے۔ جنگ سے متعلق آیتوں کا اطلاق ایسے علاقوں یا ملکوں پر نہیں کیا جا جاسکتا ہے جہاں مسلمان اور غیر مسلم کسی متفقہ قانون یا کسی بھی قسم کے امن معاہدے یا آئین کے تحت امن کے ساتھ رہتے ہیں۔ قرآن کی اس دلیل کی بڑے بڑے  فقہائے اسلام نے مکمل طور پیروی کی ہے اور فقہی احکام میں انہوں نے اسے بیان بھی کیا ہے۔ میں درج ذیل میں ان میں سے صرف چند کا حوالہ پیش کر رہا ہوں؛

 
There Is an Enormous Energy Reservoir in You  ہمارے اندر توانائی کا ایک بحر ذخار ہے
Maulana Wahiduddin Khan, Tr. New Age Islam
There Is an Enormous Energy Reservoir in You ہمارے اندر توانائی کا ایک بحر ذخار ہے
Maulana Wahiduddin Khan, Tr. New Age Islam

انسان خود اپنی تقدیر کا مالک ہے۔ انحصار صرف اس بات پر ہے کہ اس نے اپنے دماغ کو کس قدر استعمال کیا ہے اور اس کے دماغ نے اسے کتنی توانائی فراہم کی ہے۔ انسان کی بڑی یا چھوٹی کامیابی کا انحصار اس بات پر ہے کہ اس کے دماغ نے اسے کتنی توانائی فراہم کی ہے۔ ہر انسان اپنی شخصیت کی تعمیر خود کرتا ہے۔ لیکن کامیابی کی مقدار انسان کی اپنی منصوبہ بندی پر منحصر ہے۔ اچھی منصوبہ بندی انسان کو سب پر فائق کر دیتی ہے ، جبکہ غلط منصوبہ بندی سے انسان زندگی میں پچھڑا پن کا شکار ہو کر رہ جاتا ہے۔

 

اس کے بعد ہادیہ کو اس کے خاندان والوں کے حوالے کر دیا گیا اور ہادیہ نے کارکنوں اور عدالتوں کو بتایا ہے کہ اس کے والد نے اسے زد و کوب کیا اور اسے یوگا سینٹر میں داخل کر دیا ، جہاں ہادیہ کا کہنا ہے کہ اس پر تشدد کیا گیا اور اسے دوبارہ ہندو دھرم قبول کرنے پر مجبور کیا گیا۔ ہادیہ کے والد نے اس پر کچھ بھی بولنے سے صاف انکار کر دیا۔

 

تمام انبیاء کرام نے اپنی قوم و بت پرستی ، شرک اور اخلاقی و سماجی برائیوں سے روکنے کی کوشش کی ۔ نتیجے میں ان کی قوم نے ان کی مخالفت کی کیونکہ وہ اپنے آبا و جداد کے دین بت پرستی اور شرک کو چھوڑنے کو راضی نہیں تھے ۔ انبیا کرام کے دین اور پیغام کی مخالفت کی ایک وجہ یہ بھی تھی کہ وہ بھی بشر تھے اور اسی سماج کا حصہ تھے ۔ جب بھی کوئی بنی اپنی قوم سے کہتا کہ میں اللہ کا بھیجا ہوا بنی ہوں اور مجھے حکم ہواہے کہ تمہیں توحید کی تعلیم دوں اور بت پرستی و شرک سے روکوں تو ان کی قوم کے لوگ تعجب کرتے کہ انہی کے جیسا ایک بشر اللہ کا نبی یا رسول کیسے ہو سکتاہے جو انہی کی طرح کھانا کھاتا ہے اور بازاروں میں پھرتاہے۔

اس سال جس تعداد میں دہشت گرد عناصر کا انکشاف ہوا ہے اس میں گزشتہ برسوں کے مقابلے میں زبردست مثبت تبدیلی سامنے آئی ہے۔ اور مجھے پختہ یقین ہے کہ مختلف شعبوں میں اس کشادہ ذہنی کے دوام سے انتہاپسندی کا دائرہ مزید تنگ ہو گا اور دہشت گرد جماعتوں کو اپنے پیروکاروں کی تعداد میں اضافہ کرنے میں مزید پریشانیاں پیش آئیں گی۔

 

در اصل کشمیر میں تمام کی تمام شدت پسند جہادی بیانبازیاں جو سوشل میڈیا اور یوٹیوب پر مسلمانوں کو مشتعل کرنے کے لئے جاری ہیں ، ان میں کوئی خاص بات نہیں ہے اور ان کی تائید اسلامی احکام ات کے چار مصادر یعنی قرآن ، حدیث ، اجماع اور قیاس میں سے کسی ایک سے بھی نہیں ہوتی ہے۔ جو لوگ ہندوستانی علماء اور فضلاء کی تنقید کرتے ہیں اور ان پر 'حکومت کا ساتھ دینے' اور 'کشمیر میں جہاد کا فتویٰ دینے سے قاصر ہونے' کا الزام لگاتے ہیں انہیں اس بات کی فکر ہونی چاہئے کہ وہ کس طرح آخرت میں اللہ کو اپنا چہرہ دکھائیں گے۔

شریعت اسلامیہ نے جہاد کے جو شرائط  و استطاعات بیان کئے ہیں آج ہمارے زمانہ میں ان کا وجود نہیں۔مثال کے طور پر اس کی فرضیت کی ایک شرط تو عاقل و بالغ  ہونے کی ہے لیکن ان لوگوں کا کیا کہئے جو نفس کی غلامی و پیروی میں اس قدر ڈوب گئے ہیں کہ وہ گویا بے عقل و مجنوں ہو گئے ہیں  اور جہاد و فساد میں امتیاز کرنے کے قابل نہیں ۔ایسے مریضوں کو چاہیے کہ پہلے جہاد بالنفس کریں اور اس کی آزادی ہر ملک دیتا ہے  ۔ جب نفس کی غلامی سے آزاد ہو جائیں  تو دوسرے مسلمانوں کو  بھی نفس کی غلامی سے آزاد ہونے اور اسلام کے فرائض و واجبات کی  شریعت وحقیقت  اور  معرفت سے آگاہ کریں ۔

 

دوسرا گروہ  عوام الخواص کا ہے۔ان لوگوں میں یہاں دونوں پہلو پائے جاتے ہیں۔عوام کا بھی اور خاص کا بھی۔یہ گروہ روحانیت کی طرف متوجہ تو ہوتا ہے لیکن چونکہ رموز باطنی سے بے بہرہ ہوتے ہیں۔کبھی دنیا کے طالب ہوتے ہیں ، کبھی دین کے طالب ، لہذا ان کی باطنی آنکھیں نور باطنی سے پورے طور پر منور نہیں ہوتیں۔اس گروہ کو اہل طریقت کہتے ہیں ۔ تیسرا گر وہ  خالص الخاص کا ہے ۔ انہیں اہل معرفت بولتے ہیں۔ اے عمر (رضی اللہ عنہ)! ہدایت رہنمائی طالب استعداد اور جنس کے موافق ہوا کرتی ہے ۔یہ اسرار الہی کی نعمت عظمی نا اہل عوام الناس کو نہیں دی جاتی ، کیونکہ ان کو ایسی نعمت دے دینا اس نعمت کی ناقدر شناسی ہے ۔نیز چونکہ وہ اس نعمت کے متحمل نہیں ہو سکتے ،لہذا ان کے گمراہ ہونے کا اندیشہ ہے۔

 

آج کے دور میں ’’حقوق الأ قلیات الدینیۃ فی الدیار الاسلامیۃ‘‘ کے عنوان سے اس اسلامی و عالمی مؤتمر کا انعقاد بڑی اہمیت کا حامل ہے، یہ مؤتمر امیر المؤمنین الملک محمد السادس ۔ حفظہ اللہ۔ کی عنایت و توجہ سے منعقد کی جارہی ہے، کیونکہ اہل مغرب اور اسلام دشمنوں نے اسلام کی تصویر کوایسا مسخ کردینے کاتہیہ کر رکھا ہے، گویا اسلام تشدد کا علم بردار ہے اور عوام بالخصوص اسلامی قلم رو میں زندگی گذارنے والے غیر مسلموں کے درمیان امتیاز اورتفریق جیسا سلوک پیش کرتا ہے-

 

یہ آیتیں انسانی زندگی کا نصب العین عبادت قرار دیتی ہیں۔ خدا ہم سے رزق طلب نہیں کرتا، آیت البتہ یہ کہتی ہے کہ خود ہمارا رزق اللہ کے ذمے ہے۔ اس کا مطلب یہ ہے کہ ہماری زندگی کا مقصد خدا کی عبادت ہے جس کا محرک نہ تو باطنی خواہشات ہیں اور نہ ہی خارجی اثرات۔ بلکہ یہ تو صرف غور و فکر سے ہی معرض وجود میں آتا ہے۔ جب کوئی شخص اپنی نفس بینی اور اپنے ماحول سے اوپر اٹھے تبھی اسے اس بات کا اندازہ ہوسکتا ہے کہ اس کی زندگی کا ایک اعلی ترین مقصد بھی ہے جس پر اسے اپنی تمام تر توانائی صرف کرنی چاہئے۔

 

کثرت ازواج کے آئینی جواز پر چیلنج کا فیصلہ کرنے میں عدلیہ کا معیار یہ ہونا چاہئے کہ آیا یہ اسلام کا کوئی بنیادی مذہبی عمل ہے یا نہیں۔ اس امر کو بھی نظر انداز نہیں کیا جا سکتا کہ اس ملک میں تقریباً صرف 150 ملین مسلمان ہی اس فرسودہ معمول کو زندہ رکھے ہوئے ہیں۔ کثرت ازواج پر اس عمومی قانونی پابندی کو شکست دینے کے لئے مسلمانوں سے کہیں زیادہ دوسرے لوگ اسلامی قانون کا غلط استعمال کرتے ہیں۔ اس کے برعکس عدلیہ کے فیصلوں کے باوجود ، نئی بیویوں کی تلاش میں فرضی طور پر اسلام قبول کرنے کی روایت اب تک ختم نہیں ہوئی ہے۔

 

نفس کے بندے  کو سب سے پہلے نفس کی بندگی سے آزادی حاصل کرنی چاہیے تاکہ وہ زکوۃ حقیقی ادا کرنے کے قابل ہو جائے۔ نیز زکوۃ عاقل و بالغ پر فرض ہے ،دیوانہ و نابالغ پر فرض نہیں ہے ۔پس جس شخص پر غفلت و نفسانیت کا دیو سوار ہو اور وہ ہمہ تن نفس و شیطان کے پنچہ میں گرفتار ہو ۔ عارفان الہی کے نزدیک وہ عاقل و بالغ نہیں ہو سکتا ، بلکہ وہ ایک نابالغ شیر خوار بچے کی مانند ہے اور اہل معرفت کے نزدیک وہ کالعدم سمجھا جاتا ہے ۔اس پر زکوۃ حقیقی کیونکر فرض ہو سکتی ہے ۔پس سب سے پہلے یہ لازم ہے کہ بندہ نفس کی بے شعوری سے نجات حاصل کرے تاکہ وہ معرفت الہی کی آزادی اورعقل سے سرفراز ہو کر حقیقی  زکوۃ ادا کرنے کے قابل بن جائے۔

 

افسوس کی بات ہے کہ آج پوری دنیا میں بے شمار انتہاپسند جماعتیں اسلام کے نام پر سنگین جرائم کا ارتکاب کر رہی ہیں۔ ان کا یہ عمل اسلام کی خوبصورت اور پرامن تعلیمات سے براہ راست متصادم ہے۔ مسلمانوں کے لئے تعلیم کا سب سے بڑا سرچشمہ حضور نبی اکرم (صلی اللہ علیہ وسلم) کے اعمال یعنی آپ ﷺ کی سنتیں ہیں جو مسلمانوں کو مذہبی رواداری کی تعلیم دیتی ہیں۔ پیغمبر اکرم (صلی اللہ علیہ وسلم) کا رویہ انسانوں کے تئیں محبت ، عفو درگزر اور رأفت و رحمت پر مبنی تھا۔ آپ ﷺ کو اور آپ ﷺ کے پیروکاروں کو اہل مکہ نے جو اذیتیں اور تکلیفیں دیں وہ ذلت آمیز تشدد سے کم نہیں تھیں ، لیکن ان سب کے باوجود آپ ﷺ نے کبھی ان کی برائی نہیں چاہی۔ البتہ ، آپ ﷺ نے ان کے دلوں کی تبدیلی چاہی۔

 

جو علما و فقہا اور سالکین غیر مجذوب ہیں اور وہ کسی مرشد کامل کے فیض صحبت سے مستفیض نہیں ہوئے ۔وہ جذبہ اسرار الہی سے بالکل بے خبر ہیں ۔یہ لوگ دنیوی و زینت اور شہوت نفسانی کے پیچھے مارے مارے پھرتے ہیں ۔گویا وہ جبہ و دستار اور صوفیائے کبار کے جامہ میں ملبوس ہوتے ہیں ، لیکن در حقیقت ان کی اندرونی حالت یہ ہوتی ہے کہ حرص دنیوی اور خواہشات نفسانی میں گرفتا رہوتے ہیں ، ان کا مقصود اس جامہ فقیری سے خدا پرستی نہیں ہوتا ، بلکہ وہ سراسر طالب جاہ و مال ہوتے ہیں ۔ان کا کلمہ اور نماز و روزہ کیا حقیقت رکھتا ہے ۔

 

اس کے لئے ہمیں ایک مضبوط اور متنوع نسل پرستی مخالف تحریک کی بھی ضرورت ہے جو منافرت اور تقسیم و تفرقہ کی سیاست سے نمٹنے کے لئے پر عزم ہو۔ "لو اے مسلم ڈے (Love a Muslim Day)"، ایک اہم اقدام ہے لیکن جیسا کہ مجھے علم ہے اکثر مسلمان اس بارے میں فکر مند نہیں ہیں کہ ان سے محبت کی جائے ، بلکہ ان کا کہنا ہے کہ ہم صرف اپنے ملک میں محفوظ محسوس کرنا چاہتے ہیں۔ ہم پورے وقار کے ساتھ جینا چاہتے ہیں اور ہم یہ بھی چاہتے ہیں کہ ایک مکمل انسان اور ایک مکمل شہری کی حیثیت سے ہماری قدردانی کی جائے اور ہمیں یہ ثابت کرنے کی ضرورت پیش نہ آئے کہ ہم کتنے اچھے یا کتنے برے برطانوی شہری ہیں ۔

 


Get New Age Islam in Your Inbox
E-mail:
Most Popular Articles
Videos

The Reality of Pakistani Propaganda of Ghazwa e Hind and Composite Culture of IndiaPLAY 

Global Terrorism and Islam; M J Akbar provides The Indian PerspectivePLAY 

Shaukat Kashmiri speaks to New Age Islam TV on impact of Sufi IslamPLAY 

Petrodollar Islam, Salafi Islam, Wahhabi Islam in Pakistani SocietyPLAY 

Dr. Muhammad Hanif Khan Shastri Speaks on Unity of God in Islam and HinduismPLAY 

Indian Muslims Oppose Wahhabi Extremism: A NewAgeIslam TV Report- 8PLAY 

NewAgeIslam, Editor Sultan Shahin speaks on the Taliban and radical IslamPLAY 

Reality of Islamic Terrorism or Extremism by Dr. Tahirul QadriPLAY 

Sultan Shahin, Editor, NewAgeIslam speaks at UNHRC: Islam and Religious MinoritiesPLAY 

NEW COMMENTS

  • scientists (IMHO) probably will get it wrong when they stray into humanities. laws of science are...
    ( By hats off! )
  • You discuss the central idea of this article both historically and theologically. Through your discussion, many significant ....
    ( By Meera )
  • ہندستان ایک ایسا ملک ہے جہاں ہر قوم و مذہب کے لوگ بلا تفریق مذہب و ملت آباد ہیں، ہندستان میں ہندوؤں کے بعد مسلمان ...
    ( By ڈاکٹر ساحل بھارتی )
  • none of the articles is fruitful - people do not read nor do they accept = they do what their mind says ....
    ( By rss )
  • New Zealand's Prime Minister is a shining example for regressive societies. No wonder she sticks in Hats ....
    ( By Ghulam Mohiyuddin Faruki )
  • What she writes is a hundred times better than Hats Off's bilious vomitus.
    ( By Ghulam Mohiyuddin Faruki )
  • Hats Off's hatefulness has reached nihilistic proportions. He is need of help.
    ( By Ghulam Mohiyuddin Faruki )
  • What she writes is a hundred times better than Hats Off's bilious vomitus.....
    ( By H S )
  • آل انڈیا مسلم پرسنل لاء بورڈ کی تجاویز کہ مدارس کو رائٹ ٹو انفارمیشن ایکٹ (معلومات حاصل کرنے کا حق)کے تحت لانے کی تجویز خود ...
    ( By عبدالمعید ازہری )
  • the author does not have proper understanding of Naskh therefore his article is full of errors and does...
    ( By Alifa )
  • With people like Apoorvanand, India can't be so bad. Fortunately there are....
    ( By Ghulam Mohiyuddin Faruki )
  • Jacinda Ardern has set a great example for India...
    ( By Ghulam Mohiyuddin Faruki )
  • Religions should bring us together instead of driving us apart.
    ( By Ghulam Mohiyuddin Faruki )
  • a very simple minded woman with very mediocre capacity of analysis. incapable...
    ( By hats off! )
  • not to worry. it is a matter of parity. islam hates the kuffar as much...
    ( By hats off! )
  • ‘Lesson for World Leaders’: Imam Thanks New Zealand PM after Prayers" another islamist...
    ( By hats off! )
  • Only a hateful ex-Muslim would call Erdogan a "moderate Muslim". A much...
    ( By Ghulam Mohiyuddin )
  • This is a bogus article because it uses arbitrary, self-serving or false arguments to support its contentions...
    ( By Ghulam Mohiyuddin )
  • I agree with Mr Sultan Shahin that Islam needs to change itself from within...
    ( By A S MD KHAIRUZZAMAN )
  • Good article! It has given good suggestions. We should do self-introspection and reform ourselves. For ...
    ( By Kaniz Fatma )
  • the west should embrace all the muslims or else... but all Islamic....
    ( By hats off! )
  • Naseer sb., There is no compulsion in any of Jesus's sermons. He never said anything like, "“Kill....
    ( By Ghulam Mohiyuddin )
  • Naseer sb., It is not a question of believing or not believing in the Quran. It is a question of believing.....
    ( By Ghulam Mohiyuddin )
  • Happy Holi, everyone.
    ( By Ghulam Mohiyuddin )
  • GM sb says "In Christianity, there is no compulsion in religion. 2Ti 2:24 As the ....
    ( By Naseer Ahmed )
  • "It appears" is not the primary evidence. It is the supporting evidence to what the Quran...
    ( By Naseer Ahmed )
  • Hats Off's frenzied animus seems to be eating him from within. I hope he does not explode.
    ( By Ghulam Mohiyuddin )
  • Hats off's literalism is a mirror image of Naseer sb.'s literalism. One...
    ( By Ghulam Mohiyuddin )
  • More rubbish from Hats Off! Violent extremism, by whatever name, is the same....
    ( By Ghulam Mohiyuddin )
  • Yes, good call. BUT the President's comments connecting ANZAC with the deranged....
    ( By Rashid Samnakay )
  • there is a huge difference. the isis were quoting the Quran...
    ( By hats off! )
  • it is really a gladdening thought that there is nothing even remotely...
    ( By hats off! )
  • islam is about copting religions, grabbing mal e ghanimat, lying to mislead....
    ( By hats off! )
  • What is Hats Off talking about? Where does Wajahat Ali say anything...
    ( By Ghulam Mohiyuddin )
  • Naseer sb. says, "It appears that the people before Moses called themselves....
    ( By Ghulam Mohiyuddin )
  • Bandage treatment of marriage and inheritance laws will not help. What....
    ( By Ghulam Mohiyuddin )
  • The rise of Wahhabism, white nationalism and Hindu nationalism has shrunk...
    ( By Ghulam Mohiyuddin )
  • Very good article! The call to reject hate, intolerance, exclusion and violence must be vigorous and oft-repeated...
    ( By Ghulam Mohiyuddin )
  • what do you call a person who believes in a text that gratuitously denigrates...
    ( By hats off! )
  • Religion is from God and God alone can tell us about the history of His religion....
    ( By Naseer Ahmed )