certifired_img

Books and Documents

Urdu Section

رسول اللہ ﷺ نے فرمایا: وہ شخص جھوٹا نہیں ہے جو لوگوں کے درمیان صلح وصفائی کراتا، بھلائی کی بات کہتا اور ایک دوسرے کو اچھی باتیں پہنچاتا ہے۔ (اگرچہ وہ صلح وصفائی کی نیت سے جھوٹ سے کام لے)امیر المومنین خلیفہ ثانی حضرت عمر فاروقؓ نے اپنے قاضیوں کے لئے یہ فرمان جاری فرمایا: رشتے داروں کے مقدمات کو انہی میں واپس لوٹا دیا کرو تاکہ وہ خود برادری کی امداد سے آپس میں صلح کی صورت نکال لیں ۔فقہاء نے لکھا ہے کہ اگر چہ فاروق اعظمؓ کے فرمان میں یہ حکم رشتے داروں کے باہمی جھگڑوں سے متعلق ہے مگر اس میں حکمت مذکورہ ہے کہ عام ہے، باہمی کدورت اور عداوت سے سب ہی مسلمانوں کو بچانا ہے، اس لئے حکام اور قضاۃ کے لئے مناسب یہ ہے کہ مقدمات کی سماعت سے پہلے اس کی کوشش کرلیا کریں کہ کسی صورت سے فریقین کی آپس میں رضا مندی کے ساتھ مصالحت ہوجائے ۔ (بحوالہ معارف القرآن ،مفتی محمد شفیع)۔    محمد ابراہیم خلیل

 

ایک طرف دونوں حکومتوں کا یہ جنگ جو یا نہ رویہ ہے ،دوسری طرف دونوں حکومتوں نے اپنے عوام کی فلاح وبہبود کو یکسر فراموش کررکھا ہے۔ نتیجے میں دونوں طرف کے شہری بیروزگار ی ، بے تحاشہ بڑھتی ہوئی آبادی ،جہالت، ظلم اور ناانصافی کی دلدل میں دھنستے چلے جارہے ہیں ۔ دونوں طرف مذہب کے نام پر سیاست کرنے والی جماعتوں اور طاقت کے سرچشمے پر قابض عناصر نے عوام کے شعور میں اضافے کی بجائے انہیں کچھ زیادہ تنگ دل ، تنگ نظر اور جنگی جنون کا ایندھن بنادیا ہے۔    زاہدہ حنا

 

Presently, the question is not about whether madrasas are encouraging terrorism or not?  The question of great concern is why madrasa officials are afraid and not interested in affiliation with a central Board. Some of them are talking about the danger of increasing corruption; in fact, they are afraid of losing their hold of proprietorship, status and authority as they will have to follow a code of conduct and certain terms and conditions. The corruption prevalent in the payment of teachers’ salary and the manner of imparting education will be exposed. The proposal of madrasa board may also expose the dishonesty of our Islamic scholars. This makes the prospect of reform very bleak as the ruling political parties are helpless before them and cannot afford their displeasure and annoyance. -- Tahir Khaleel. (Translated from Urdu by Raihan Nezami)

 

 

دراصل آج لوگوں نے مشاعروں کو اپنے اپنے طور پر مختلف مفادات کے حصول کا ذریعہ بنا رکھا ہے۔ مشاعرہ برائے مشاعرہ کے تصور نے جہاں ایک زمانے تک اردو زبان وادب اور خصوصاً اردو تہذیب کو توانائی بخشی تھی وہیں اب مشاعرہ برائے قومی یکجہتی مشاعرہ برائے مشترکہ تہذیب ، مشاعرہ برائے تحفظ امن وامان کی نئی روش نے مشاعروں کو پروپیگنڈہ سے قریب تر کردیا ہے لوگوں نے اس بنیادی امر کو فراموش کردیا ہے کہ اردو زبان وادب کاوجود بذاب خود قومی یکجہتی ،مشترکہ تہذیب اور باہمی اتحاد کا نتیجہ ہے۔....

 

Contemplating the plight of Muslims in the world despite their large numbers – one fourth of humanity - Zafar Agha concludes that this is because Muslims have gone back to the days of the pre-Islamic Jahiliya, though they still claim to abide by Islamic tenets. Islam had freed them from monarchy, feudalism, subservience to an obscurantist priestly class and ignorance. But once again they have left pursuing modern education and rule by consultation and have adopted a monarchical, feudal and exploitative system of governance in most parts of the Muslim world and have come to depend on conservative ulema alone for their education. Hence their degradation, political impotence and a life of slavery despite very large numbers.


اعداد وشمار کا یہ کھیل بظاہر سننے اور دیکھنے میں اچھا لگتا ہے ،لیکن اگر غور کیا جائے تو مسلمانوں کے لئے اس سے زیادہ بری صورت حال او رکوئی نہیں ہوگی۔ آج دنیا کی تمام طاقتیں اس کے خلاف متحد ہیں ،مگر وہ خود آپس میں ہی لڑرہا ہے۔ اس وقت مسلم ممالک کی تعداد 56یا اس سے کچھ زیادہ ہے۔ عرب ممالک بھی 22ہیں لیکن کیا یہ 56ممالک مسلمانوں کے تعلق سے کسی بھی ایک عالمی مسئلہ پر متحد ہیں؟ اور اگر وہ متحد ہو بھی جائیں تو کیا ان کے آگے کوئی ایک ملک بھی ڈر ے گا؟ فی زمانہ مسلمانوں کے جو اعمال ہیں، ان سے تو نہیں لگتا کہ تمام مسلم ممالک کے اتحاد سے بھی کوئی اسلام دشمن ملک کو خوف کھائے گا۔....

مثال کے طور پر آر جے ڈی سپریمو لالو پرساد  کو ہی لے لیجئے ، لالو جی اپنے سیاسی مفادات کے حصول کیلئے 15برسوں تک ریاست بہار میں مسلمانوں کی زبو ں حالی پر دکھاوے کا ناٹک کر کے رجھاتے رہے ،جس سے انہیں وہ تمام مقاصد تو حاصل ہوگئے ۔ جس کیلئے انہوں نے بہروپئے کا روپ اختیار کرلیا تھا۔15برس کے آر جے ڈی کے دور اقتدار میں مسلمانوں کی غربت پر اشک بہانے والے یہ لیڈراور ان کےمصا حبین مالا مال ہوتے رہے وہ زمین سے آسمان کی بلندی سرکرنے میں کامیاب ہوگئے مگر ریاست کے تقریباً 27فیصد مسلمانوں کی حالت لمحہ بھر کے لئے بھی نہیں بدلی ،وہ جہاں تھے اس سے بھی نیچے دھنستے رہے ۔....

 

مرنے والے بھی مسلمان اور مارنے والے بھی مسلمان یہ کن کے خلاف جنگ کررہے ہیں یہ سب کے سب تو اسلام کے ماننے والے ہیں اور سب کلمہ گو ہیں۔ اس طرح اسلامی اصول کے تحت دونوں آپس میں بھائی بھائی ہیں۔ تو کیااسے بھائی بھائی کی لڑائی کہیں گے ؟میرا خیال ہے کہ اس میں صرف یہی ایک ظاہری وجہ نہیں ہے بلکہ اس میں ایک بڑی وجہ یہ ہے کہ انہیں کئی سطحوں پر مشتعل کیا جاتا ہے ۔ اس اشتعال میں سیاسی ،معاشرتی اور ملکی مسائل اور غیر ملکی تسلط بھی بڑی اہمیت رکھتے ہیں۔...

 

By Abu Mohammad

 

 
دین اور مذہب میں فرق
ڈاکٹر اسرار احمد

مذہب ایک جزوی چیز ہے۔ یہ صرف چند عقائد اور کچھ مراسم عبودیت کے مجموعے کا نام ہے، جبکہ دین سے مراد ایک مکمل نظام زندگی جو تمام پہلوؤں پر حاوی ہو۔ گویا مذہب کے مقابلے میں دین ایک بڑی اور جامع حقیقت ہے۔ اس پس منظر میں اگرچہ یہ کہنا تو شاید درست نہ ہوگا کہ اسلام مذہب نہیں ہے، اس لئے کہ مذہب کے جملہ (Elements)بھی اسلام میں شامل ہیں، اس میں عقائد کا عنصر کا بھی ہے ،ایمانیات ہیں، پھر اس کے مراسم عبودیت ہیں، نماز،روزہ ہے، حج اور زکوٰۃ ہے، چنانچہ صحیح یہ ہوگا کہ یوں کہا جائے کہ اسلام صرف ایک مذہب نہیں، ایک دین ہے ۔ اس میں جہاں مذہب کاپوراخاکہ موجود ہے وہاں ایک مکمل نظام زندگی بھی ہے ۔لہٰذا اسلام اصلاً ایک دین ہے۔ .....

 

دراصل مرکزی مدرسہ بورڈ کی بحث اس وقت شروع ہوئی ، جب اس سلسلہ میں مرکزی وزیر برائے فروغ انسانی وسائل کپل سبل کی جانب سے ایک میٹنگ کا دعوت نامہ مرکزی مدرسہ بورڈ ایجوکیشن بورڈ کے قیام کے لیے زیر غور موصول ہوا۔ اس میں اس وقت مسئلے مسائل شروع ہوگئے ،جب خود حکومت کی مدرسہ ماڈر نائزیشن کمیٹی کے چیئر مین مولانا ولی رحمانی نےسرکار کی نیت پر شک کرتے ہوئے شدید ردّ عمل کا اظہار کیا۔حضرت مولانا موصوف تو  خود ہی یہ چاہ رہے ہیں کہ مدارس اسلامیہ کی جدید کاری ہو اور جس کے لیے انہوں نے خود ایک تفصیلی رپورٹ وزارت کوبہت پہلے روانہ کردی ہے۔...

امریکا کو اچانک یہ اطاعات ملی ہیں کہ طالبان اور القاعدہ کی اعلیٰ قیادت کوئٹہ میں موجود ہے۔ پاکستان میں امریکہ کی سفیراین پٹیرسن اور دوسرے امریکی اہلکار آجکل مقامی اور بین الاقو امی میڈیا میں یہ پروپیگنڈہ کرنے میں مصروف ہیں کہ اسامہ بن لادن اور ملا عمر کوئٹہ میں ہیں اور ان کے پاس ‘‘حقیقت’’ کے ثبوت موجود ہیں۔ حکومت پاکستان کے بارہا انکار کے باوجود امریکی اپنی جگہ قائم ہیں اور اپنا وہی راگ الاپنے میں مشغول ہیں ۔ حالات تیزی سے اس سمت بڑھ رہے ہیں جہاں ہم امریکی ڈرون حملوں کو کوئٹہ اور بلوچستان کو نشانہ بناتےدیکھ سکتے ہیں ۔  انصار عباسی

مدارس کے نصاب میں تبدیلی کا سب سے برانتیجہ یہ ہوگا کہ دینی تعلیم کی طرف سے طلبہ کا رجحان کم ہوجائے گا اور وہ عصری تعلیم میں ہی الجھ کر رہ جائیں گے۔ دوسرے یہ کہ تعلیم کے ساتھ ساتھ مدارس کا تہذیبی ڈھانچہ جو خالصتاً دینی امور پر قائم ہے متزلزل ہوجائے گا۔ قومی خدمت کی جگہ معاشی حصول ان کا نصب العین ہوجائے گا۔مولانا بدرالدین اجمل نے بہار ،بنگال اور دوسرے مدارس بورڈ کی مثال دیتے ہوئے کہا کہ جس طرح بہار میں بورڈ کےنفاذ سےمدارس کے بنیادی نظام اورتعلیم میں گراوٹ آئی ہے اسی طرح پورے ہندوستان میں یہ وبا پھیل جائے گی۔...

 

جس دور میں سرسید پیدا ہوئے وہ آج کے دور کی طرح پر آشوب اور مسلمانوں کے لیے نہایت مشکلات سے بھرا تھا۔ غیر ملکی تسلط سے استخلاص وطن کیا پہلی عمومی تحریک جسے انگریز ‘‘غدر’’ کہتے ہیں ناکام ہوچکی تھی، اور انگریز نے اس کا اصل سبب مسلمانوں کو قرار دیکر سارا نزلہ انہیں پرگرایا تھا، زمین دارہ ختم ہونے کے بعد ان کی اقتصادی کمر بھی ٹوٹ گئی ۔ ہر اعتبار سے ان کے لیے ایک شدید بحرانی دور تھا ایسے میں حالات کے رخ کو سمجھ کر سرسید انگریزو ں سے مصالحت کی طرف قدم بڑھائے ، اور اسباب الثورۃ الھند یۃ (اسباب بغاوت ہند) لکھ کر ان کے غصہ کو کم کرنے کی کوشش کی۔...

حافظ شیبر اعوان وادی سون سیکسر کے گاؤں مردوال میں پیدا ہوئے ، ان کے والد محکمہ زراعت میں چھوٹے سے ملازم تھے، حافظ صاحب دوبھائی ہیں اور یہ دونوں پیدائشی نابینا ہیں، حافظ صاحب کے پاس بچپن میں دو آپشن تھے، یہ دوسرے نابیناؤ ں کی طرح بھیک مانگ کر زندگی گزاردیں یا پھر زندگی کو اپنے سامنے گھٹنے ٹیکنے اور خود سے بھیک مانگنے پر مجبور کردیں، حافظ صاحب نے دوسرے راستے کا انتخاب کیا، انہوں نے لفظوں کو ٹٹول ٹٹول کر بی اے کیا، پھر بی ایڈ کیا، پھر پنجاب یونیورسٹی سے تاریخ میں ایم اے کیا اور پھر انٹرنیشنل اسلامک یونیورسٹی سے انگریزی میں ایم اے کیا، حافظ صاحب نے اس دوران قرآن مجید بھی حفظ کیا،یہاں تک ان کا سفر غیر معمولی نہیں تھا، پاکستان سمیت دنیا کے تمام ممالک میں بے شمار نابینا بچے اعلیٰ تعلیم حاصل کرتے ہیں لیکن حافظ صاحب کا کمال کمپیوٹر تھا۔    جاوید چودھری

The creation of a Madrasa board is an old demand of Muslims that is now being deliberately obfuscated and turned into a controversy – Dr khawja Ikram

Let Maulana Wali Rahmani agitate against the Board in Bihar where 3,000 madrasas are affiliated with it: Maulana Khushtar Noorani

Do not politicise this issue – Mohammad Adeeb, M P

Board increases the possibility of government interference in Islamic education: Prof. Haleem Khan

The government wants to interfere in Muslim affairs in the name of madrasa modernisation: Maulana Usman Ghani

The government is making empty noises, to entertain itself seeing Muslims making a fool of themselves fight among over the issue. Why doesn’t it establish the Board first? The question of affiliation will arise only later: Qari Mohammad Mian Mazhari. -- Hindustan Express (News Bureau), Translated from Urdu by Raihan Nezami

 

اس ویڈیو فلم میں فوجی جوانوں کی طرف سے بزرگ قیدیوں پر جو تشدد نظر آتاہے وہ طالبان کی طرف سے ایک لڑکی پر کئے جانے والے تشدد سے کئی گناہ زیادہ ہے ۔ اخباری اطلاعات کے مطابق افواج پاکستان کے ترجمان نے دعویٰ کیا ہے کہ بی بی سی اوریو ٹیوب پر موجود فلم میں نظر آنے والے واقعے کی تحقیقات شروع کردی گئی ہیں اور ذمہ دار افراد کے خلاف کارروائی ہوگی۔ حامد میر

 

Stop grievance-mongering, start making use of the myriad opportunities in India for all hard-working people, exhorts renowned Delhi-based columnist Zafar Agha, pointing out the fact that while in Muslim countries like Saudi Arabia, religious minorities cannot practice their religion publicly, India gives complete religious freedom to all its minorities. Muslims have the political power to determine who rules India. They should learn to benefit from the opportunities available in this country rather than bewailing their plight in rogue state likes Gujarat.

 


ڈاکٹر دینا ناتھ ورما نے اپنی کتاب ’’آدھونک بھارت‘‘ میں لکھا ہے کہ ہندوستان مسلمانوں کے علیٰحدہ مملکت کا خیال اقبال کا ذہنی تصور ہے۔ ایل پی شرما کی کتاب میں اقبال کے اس خط کا تذکرہ ہے جس میں انہوں نے جناح کو لکھا تھا کہ اگرشمالی ہند میں مسلمانوں کے لئے ایک یازیادہ مملکتوں کا قیام ناممکن ہے تو خانہ جنگی کے سوا کوئی راستہ نہیں ہے۔ جو ہندو مسلم فسادات کی شکل میں کچھ عرصے سے جاری ہے۔ پرتاپ سنگھ کتاب میں اقبال کو تقسیم کے لئے ذمہ دار ٹھہرایا گیا ہے ۔ویریند رسنگھ برن وال کی کتاب جناح میں کہا گیا ہے کہ جناح نے پاکستان کے تصور کو فرو غ دینے کی وجہ سے ہی اقبال کو اپنا روحانی استاد تسلیم کیا تھا۔ اقبال کے رابطہ میں آنے کے بعد جناح کے تیور بالکل بدل گئے۔ آتمہ دیپ  (فوٹو:علامہ اقبال)

اللہ اپنے اختیارات بندوں کو سونپ نہیں دیتا ۔آخری تجربے میں شیخ اور مرید کا تعلق اصل میں استاد اور شاگرد کا ہوتا ہے ۔ داتا گنج بخشؒ ،خواجہ غریب نواز ؒ اور فریدالدین شکر گنجؒ اپنی طرف نہیں ،خلق خدا کو پروردگار کی طرف دعوت دیتے تھے۔سچے ایمان ،صداقت شعاری ،مظلوموں اور محتاجوں کی دست گیری کے لئے ۔مجھے اس میں رتّی برابر بھی شبہہ نہیں کہ تحریک انصاف کی کامیابی کا راستہ گوجر خان سے ہوکر گزرتا ہے۔ مکرّر عرض ہے کہ اختیار اللہ کا ہے، کسی بندے کا نہیں اور یہ تو ہر گز نہیں ہے کہ ان کی سب آرا سے اتفاق کیا جائے ۔ بات وہی ماننی چاہئے ، جس پر دلائل و شواہد موجود ہوں اور کوئی کتنا ہی لائق ودانا ہو، اس کی رائے سے گریز کرنا چاہئے۔ اگر وہ قائل نہ کرسکے ۔  ہارون الرشید

 

میر واعظ کے یہ ارشاد ات اس امر کے غماز ہیں کہ اب کشمیر کی حقیقت پسند قیادت نے زمینی سچائیوں کو محسوس کرلیا ہے اور اب وہ اپنی مجبوریوں ،مصلحتوں اور حدود کے ادراک کے ساتھ حکومت ہند سے گفتگو کے ذریعہ اپنے مسائل کا پائیدار حل تلاش کرنے کے خواہاں ہیں اور اس کے لئے اب وہ اپنے تشدد کے دیرینہ موقف سے بھی دست بردار ہونے کے لئے تیار ہیں۔یادرہے کہ میر واعظ نے اب سے کچھ ہی عرصہ قبل کہا تھا کہ کشمیر کےمسئلوں کے حل کے لئے تشدد کا راستہ اختیار کرنے کے زمانے گزرگئے ۔...

مدارس کے قیام میں سیاسی عوامل بھی کار فرمارہے ۔ کہا جاتا ہے کہ جب حلافت عباسیہ کمزور ہوئی اور خلیفہ وحکمراں آئے دن تبدیلی ہونے لگے تو حکمراں اپنے نام کی بقا کے لیے مدارس تعمیر کرنےلگے ۔مدرسہ مستنصر یہ اس کی واضح مثال ہے۔ اسی طرح معتزلہ کے اثر و رسوخ کو ختم کرنے کو بھی مدارس کے قیام کی تحریک میں اہم مقام حاصل ہے۔ جیسا کہ پروفیسر ضیا الحسن فاروقی تحریر کرتے ہیں:‘‘دراصل سنی مدرسوں کے قیام کا سلسلہ دسویں صدی عیسویں کے نصف آخر سے شروع ہوگیاتھا، آغاز کار میں تو یہ اس چیلنج کے جواب کے طور پر تھا جسے معتزلی طرز فکر نے پیش کیا تھا ۔لیکن بعد میں مقصد یہ بن گیا کہ ان اداروں کے اثر کو کم کیا جائے جنہیں فاطمیوں نے شیعہ مبلغین کی تعلیم وتربیت کے لیے قائم کیاگیا تھا مثلاً فاطمی سپہ سالار جوہر اور خلیفہ المعز کی تعمیر کرائی ہوئی مسجد ازہر 1005۔395ھ ،خلیفہ الحکیم کا قائم کیا ہوا دارالحکمت اور مختلف دار الدعوۃ یعنی اجتماع وتبلیغ کے مرکز’’۔۳  محمود عالم صدیقی

 

ایک مرتبہ جب ہندوپاک کی تقسیم کو روکنے کے لیے ایک اہم ترین میٹنگ سابرمتی آشرم میں چل رہی رہی تھی تودرمیان میں سے گاندھی جی اٹھ کر جانے لگے کہ وہ اپنی بکری کی زخمی ٹانگ پر کھڑیا مٹی لگانے جارہے ہیں۔ جو دیگر اہم شخصیات اس میٹنگ میں موجودتھیں وہ تھیں : سراسٹا فرڈ کرپس ، لارنس ،سرائے ۔وی۔الکونڈر پنڈت نہرو ،سردار ولبھ بھائی پٹیل اور مولانا آزاد ۔جب پندرہ منٹ تک گاندھی جی جہیں آئے تو 2مئی 1946کی اس اہم میٹنگ کے شرکا باہر آنگن میں آگئے وہاں وہ یہ دیکھتے ہیں کہ گاندھی جی اپنی بکری کی ٹانگ پر لیپ لگا کر اس پر پٹی باندھ رہے تھے۔ بکری ذرا چھٹپٹا رہی تھی ۔ یہ دیکھ کر سرپیتھک لارنس بولے، ‘‘کمال ہے گاندھی جی ! اتنی چھوٹی سی بات کے لیے آپ اتنی اہم میٹنگ چھوڑکر آگئے ’’۔قریب میں کھڑے مولانا آزاد نے موقع کی نزاکت کو بھانپتے ہوئے کہا: سرپیتھک !گاندھی جی عظیم ہیں اور اسی وجہ سے وہ عظمت کے اس درجہ کو پہنچے ہیں کہ وہ ان چھوٹی چھوٹی اور معمولی سی دکھائی دینے والی باتوں کو اہمیت دیتے رہے ہیں ۔لوگ انہیں اسی لیے چاہتے ہیں کہ بڑی بڑی باتوں کے ساتھ گاندھی جی چھوٹی چھوٹی باتو کا بھی بے انتہا خیال کرتے ہیں!’’  فیروز بخت احمد

 
جدید خار جیت - Modern Karjism is Wahhabism
Zeeshan Ahmad Misbahi, ذیشان احمد مصباحی

جدید خوارج آج پوری دنیا میں اپنا نیٹ ورک قائم کرچکے ہیں، ان کی ہمنوائی کرنے والے تعلیم یافتہ بھی ہیں اور جاہل عوام بھی، مولوی بھی ہیں اور کالج کے تعلیم یافتہ جوان بھی ۔آج جب کہ ایک عام مسلمان کی سوچ یہ ہے کہ کس طرح جمہوری ملکوں کی مراعات سے فائدہ اٹھاتے ہوئے مسلمانوں کو دینی تعلیمی اور معاشی طور پر مستحکم کیا جائے، کس طرح دعوت تبلیغ کے دائرے کوبڑھایا جائے، کس طرح حکومت کے سامنے اسلام اور مسلمانوں کی پرامن شبیہ پیش کی جائے، ان خارجیت پسندوں کا وتیرہ یہ بن گیا ہے کہ وہ حکومتوں کے خلاف احمقانہ بغاوت کی سوچ میں جی رہے ہیں  ، انتخابات کا بائکاٹ اور عدلیہ وانتظامیہ کی مخالفت کررہے ہیں۔  ذیشان احمد مصباحی

یہ تمام باتیں اپنے آپ میں اس لیے متضاد نظر آتی ہیں کہ ایک طرف پاکستان کی جانب سے بار بار یہ اعلان کیا جارہا ہے کہ دہشت گردوں کو ہند کے خلاف حملے کے لئے پاکستان کی دھرتی کو استعمال کرنے کی اجازت نہیں دی جائے گی اور دوسری طرف لشکر کی طاقت میں مسلسل اضافہ ہوتا جارہا ہے ۔ ان دونوں میں سے کس بات کو غلط کہا جاسکتا ہے ؟ یا تو پاکستان کے دعوے اپنے آپ میں کہیں نہ کہیں کمزور اور کھوکھلے پن کے شکار ہیں یا لشکر طیبہ کی طاقت میں مسلسل اضافے کی خبریں غلط ہیں۔رپورٹ

 


Get New Age Islam in Your Inbox
E-mail:
Most Popular Articles
Videos

The Reality of Pakistani Propaganda of Ghazwa e Hind and Composite Culture of IndiaPLAY 

Global Terrorism and Islam; M J Akbar provides The Indian PerspectivePLAY 

Shaukat Kashmiri speaks to New Age Islam TV on impact of Sufi IslamPLAY 

Petrodollar Islam, Salafi Islam, Wahhabi Islam in Pakistani SocietyPLAY 

Dr. Muhammad Hanif Khan Shastri Speaks on Unity of God in Islam and HinduismPLAY 

Indian Muslims Oppose Wahhabi Extremism: A NewAgeIslam TV Report- 8PLAY 

NewAgeIslam, Editor Sultan Shahin speaks on the Taliban and radical IslamPLAY 

Reality of Islamic Terrorism or Extremism by Dr. Tahirul QadriPLAY 

Sultan Shahin, Editor, NewAgeIslam speaks at UNHRC: Islam and Religious MinoritiesPLAY 

NEW COMMENTS

  • I have already said supremacism is the nature of every human being
    ( By Huzaifa )
  • What is peace? Where is peace? In spiritual world, when your mind is not at peace, you are not peaceful. Respect for human beings is not limited ...
    ( By Ghulam Hasan )
  • I saw a video recently in which a muslim girl was checked at USA the way it made her feel inferiority actually the question of ...
    ( By Huzaifa )
  • Comparing someone who seems to be a dedicated jihadist with terroristic tendencies to "a (disturbingly large) number of expatriate muslims," is dumb and irresponsible. 
    ( By Ghulam Mohiyuddin )
  • "islam is more about prophet worship than allah worship. and they have the gall to hate idolators and polytheists!"this is totally wrong perception of ...
    ( By Talha )
  • Good question by Ghulam Mohiyuddin sb to Naseer sb, "Why can't you discuss issues instead of going boasting about your integrity and your superior understanding ...
    ( By Talha )
  • Not for those who come out with long pronouncements at the drop of a hat.'
    ( By Ghulam Mohiyuddin )
  • Why should that be a concern for Hats Off? He has left Islam anyway.
    ( By Ghulam Mohiyuddin )
  • Too much debate is about burqa, beard, kurta, pyjama, fundamentalism, tolerance for other people, Can anyone please talk about whether people of this 21 century are ...
    ( By Huzaifa )
  • Hats Off lives and dies for his singular mission: Keep smearing "moderate Muslims", whatever that means!
    ( By Ghulam Mohiyuddin )
  • Silly comment from Hats Off! How simplistic can you get!
    ( By Ghulam Mohiyuddin )
  • @anburaj  Atheism is more dangerous than religions of this world in this age people are unable to see the danger of atheism. Atheism is the kind of venom that ...
    ( By Talha )
  • sULTAN SHAIN   IS trying  to make islam relevant to 21 st century. He is trying to desalinate Islam. Muslims  are always Muslims. Self-centred mentality ...
    ( By dr.A.Anburaj )
  • Mohammed  wrongly had believed that  Arab culture alone was recognised  by God/Allah and he wanted  other cultures to be destroyed .His motto was Be ...
    ( By dr.A.Anburaj )
  • People in this age are in need of peace, let alone talking about 'love' the essence of which is hardly understood in the non-spiritual world. 
    ( By Ghulam Ghaus Siddiqi غلام غوث الصديقي )
  • AayinaAap bhi article likh sakte hoKashmiri pandist k bare m likhna h likho. Lekin jo likh rahe hai burma par wo bhi theek hain...Unko fake ...
    ( By Rumish )
  • Where is the philosophy of "love"? 
    ( By Ghulam Ghaus Siddiqi غلام غوث الصديقي )
  • it is very easy to do this. many.a (disturbingly large) number of expatriate muslims have nothing but contempt for the free mixing, binge drinking, ...
    ( By hats off! )
  • oh! so you are a closet atheist after all! but the garden variety.
    ( By hats off! )
  • silence is golden and speech is silvern.
    ( By hats off! )
  • islam is more about prophet worship than allah worship. and they have the gall to hate idolators and polytheists!no shame whatsoever. no self criticism. ...
    ( By hats off! )
  • in the famous words of "extremists"-enabling moderate muslims - the verse was quoted out of context.
    ( By hats off! )
  • Due you know genocide of Buddist in Tebet, Kshmiri pandits in Kshamir. Biased Matthew smith a fake humunist, shameless sultan Shahin has not put single ...
    ( By Aayina )
  • lets make it simple."There is no compulsion in relgion but humiliation" is this make clear the treatment of not agree with Mouhmmad self declared ...
    ( By Aayina )
  • hatts off, you cannot expect from Hindu hate lover like Gulam Mohyuddin to acknowledge that numerical system was given by Hindus, they will talk ...
    ( By Aayina )
  • The articles presents some wonderful quotes from different authors.My favorite is from Mark Twain: "Man is the Religious Animal. . . . He is ...
    ( By Ghulam Mohiyuddin )
  • Why are the United States and the Gulf Emirates silent on this subject?
    ( By Ghulam Mohiyuddin )
  • This is a great inspiring article. It was very helpful. Thanks for sharing sach a wanderfull post, It was really ...
    ( By Andrew Saiman )
  • I clicked this article also posted on quora. this is very good article and must read for young generation of todays kahsmirs.
    ( By Shahzeb )
  • What's the context of Hats Off's comment (which by the way he has repeated umpteen times!)?
    ( By Ghulam Mohiyuddin )
  • no kuffar might enter the cities of mecca or madina.very, very tolerant.
    ( By hats off! )
  • "Scholars at Makkah conference warn against sectarianism"Sectarianism is our worst enemy but these scholars at the Makkah conference warning us about sectarianism are themselves very ...
    ( By Ghulam Mohiyuddin )
  • Naseer sb.,Instead of responding to my post you have  launched a barrage of hollow assertions. You seem to be under the delusion that you ...
    ( By Ghulam Mohiyuddin )
  • We should say, "There shall be no compulsion in   religion," and stop there. Quoting the rest of 2:256 and 2:257 dilutes the message. ...
    ( By Ghulam Mohiyuddin )
  • Naseer sb.'s comment on Professor Moosa, Abdullah Saeed and other reformists is thoughtless and undignified. They have defined a crucial problem for our generation because ...
    ( By Ghulam Mohiyuddin )
  • It is very sad to know that civilians are mercilessly being killed in Yemen
    ( By Kaniz Fatma )
  • آج ضرورت اس امر کی ہے کہ ہم ہر وقت صبر و تحمل کی سواری پر سوار رہیں، مصائب، تکالیف، پریشانیاں اور غم آتے ...
    ( By Kaniz Fatma )
  • آج ضرورت اس امر کی ہے کہ ہم ہر وقت صبر و تحمل کی سواری پر سوار رہیں، مصائب، تکالیف، پریشانیاں اور غم آتے رہیں گے ...
    ( By Kaniz Fatma )
  • This verse means that the teachings of Islam are very clear and the proof and evidence of its soundness are so clear and definitive that there ...
    ( By Kaniz Fatma )
  • I have said that I know very little of Akbar's Deen-e-Ilahi and what I have endorsed is his genuine secularism. He may not have ...
    ( By Naseer Ahmed )