certifired_img

Books and Documents

Urdu Section

Why has no representative of 1500 million Muslim women won Nobel Prize in science, literature or in any respect? 

There may be a simple answer to this demanding question. How can it be possible in such an anti-women environment, when a Sudanese woman is whipped for wearing the so-called anti-Islamic dress “Jeans” in the first decade of 21st century?

The Islamic heads of Saudi Arabia become sleepless at the opening of the first co-education school. The women in U.S, Europe, Britain, and Israel or in any other part of the world are no more intelligent than the Muslim women, but they qualify for the prizes. The reason being – they get equal opportunities in education, research and training.

They have acquired equal status after a long struggle of about five centuries for their educational, social and political rights without demanding any favour or reservation but they only asked for equal opportunities. The Muslim women are criticized for their failures ignoring the facts that they are handcuffed and fettered, made unable to aspire and achieve anything. -- Zahida Hina, Karachi (Translated from Urdu by Raihan Nezami)

یہ پہلے دوصفوں سے بھی زیادہ ضروری ہے ۔بیوی وہ ہی ہے جس کے محبت بھر ے الفاظ شوہر کے دل سے دنیا کی کدورتوں اور کلفتوں کا غبار زائل کرتے ہیں اور اس کے متفکر دل سے تشویش ہٹا کے شگفتگی بخشتے ہیں ۔ ضرور ہے کہ عورت کی تمام حرکات وسکنات محبت والفت شوہر سے لبریز ہوں ۔ ایک بزرگ نے اپنی بیٹی کی شادی کے وقت جو نصیحت اس کوکی تھی وہ نہایت دلچسپ ہے اس نے کہا کہ ‘‘بیٹی جس گھر میں تو پیدا ہوئی تھی اس سے اب تو نکلتی ہے ۔ ایسے بستر پر جاتی ہے جس سے تو واقف نہ تھی۔ ایسے آدمی کے پاس رہے گی جس سے پہلے سے الفت نہ تھی۔ تو بیٹی تو اس کی زمین بننا وہ تیرا آسمان بنے گا۔تو اس کے آرام کا خیال رکھنا وہ تیرا دل آرام بنے گا۔ تو اس کی لونڈی ہونا وہ از خود تیرا غلام بنے گا۔....

 
اسلام اور اصلاح معاشرہ
ڈاکٹر اصغر انجینئر

ثال کے طور پر اس زمانے کے علماء نے عورتوں کے تعلق سے قرآن کی آیات واحکامات کو ایک مخصوص طریقے سے سمجھا اور اس تفہیم کی بنیاد پر شرعی احکامات قائم کئے گئے۔ آج کے حالات اگر کوئی اصلاح پسند یاعالم قرآن کی انہیں آیات اور ان کے مفہوم کو اپنے طور پر سمجھنے کی کوشش کرے تو اس کا مطلب یہ تو نہیں ہوگا کہ وہ قرآن سے مختلف جارہا ہے یا کوئی نئی چیز پیدا کررہا ہے۔ لیکن ہمارے علماء فوراً فتویٰ دیں گے کہ فلاح شخص قرآن میں تحریف کررہا ہے اور شریعت کو منسوخ کررہا ہے۔ ....

حضرت عائشہ سے روایت ہے کہ ایک جوان عورت آنحضرت کی خدمت میں حاضر ہوئی او رپوچھا شوہر کا حق عورت پرکیا ہے۔ آپ نے فرمایا کہ اگر بالقروض شوہر کے سر سے پاؤں تک پیپ ہو اورعورت اس کو چاٹے تب بھی اس کا پورا شکر ادا نہ کرسکے گی۔ یہ حکایات امام حجتہ الاسلام نے لکھی ہیں جو ان کی چشم دید نہیں ہیں۔ لیکن ہم نے خود ایک مصیبت زدہ لڑکی دیکھتی ہےجس کی پیاری ماں حالت نزع میں تھی اور شوہر کی ممانعت کی وجہ سے وہ ماں کو دیکھنے نہ گئی۔ تھوڑی دیر میں اس کی ماں مرگئی ۔ اور اس بدنصیب لڑکی نے کہلابھیجا کہ مجھے آنے کی اجازت نہیں ہے مگر تم میری ماں کا جنازہ میرے دروازہ کے آگے سے لے جانا کہ میں اس مسافر کو گذرتا دیکھ لوں۔...

 

‘‘نبی اکرم ﷺ نے فرمایا کہ میری امت کا پہلا لشکر جو قیصر کے شہر (قسطنطنیہ ) پر حملہ کرے گا وہ بخشا ہوا ہے’’ (بخاری شریف ج اول) ۔یزیدی گروہ کی اس دلیل کا جواب یہ ہے کہ اللہ عزوجل کے محبوبﷺ کا فرمان حق ہے لیکن قیصر کے شہر قسطنطنیہ پر پہلا حملہ کرنے والا یزید نے قسطنطنیہ پرکب حملہ کیا، اس کے بارے میں چار اقوال ہیں۔ ۴۹عیسوی ، ۵۰ہجری، ۵۲عیسوی، اور ۵۵عیسوی دیکھئے کامل ابن اثیر جلد ۳۔ بدایہ ونہایہ جلد ۸۔ عینی شرح بخاری جلد ۱۴۔ اور اصابہ جلد اول ۔معلوم ہوا کہ یزید ۴۹ ہجری سے ۵۵ہجری تک قسطنطنیہ کی کسی جنگ میں شریک ہوا۔ چاہے سپہ سالات رہا ہو یا حضرت سفیان بن عوف کا معمولی سپاہی رہا ہو مگر قسطنطنیہ پر اس سے پہلے حملہ ہوچکا تھا۔  انتخاب عارد صدیقی

میاں بیوی میں اگر اتفاقاً کوئی نا چاقی پیدا ہوجائے اور شوہر بیوی پر خفا ہو یا غہ- کے الفاظ سے کام لے تو اس بات کا خیال چاہئے کہ دیگر مستورات کے سامنے اس طرح نہ کیا جائے۔ بلکہ تنہائی میں جو چاہئے کہے سب کے روبرو کہنے سے بیوی کی وقعت میں فرق آتا ہے اوراس کو اپنے ہم چشمو میں خفت اٹھانی پڑتی ہے ، جس کا اس کو ہمیشہ رنج رہتا ہے ۔ گھر میں جو مائیں یا انائیں ملازم ہوتی ہیں ان سے آرام یا تکلیف خود مستورات کو ہی زیادہ پہنچتی ہے اور گھر کی بیوی کے ہاتھ پاؤ ہوتے ہیں جن سے وہ کام لے کر اپنے شوہر کو آرام پہنچاتی ہیں پس کسی خادمہ کو رکھنے یا موقوف کرنے پر مردہ کو کوئی اصرار مناسب نہیں ہے۔...

 

حقیقت تو یہ ہے کہ معرکۂ کربلا میں اگر خواتین نہ ہوتیں تو مقصد قربانی شید الشہد ا امام حسینؑ ادھورا ہی رہ جاتا۔ یہی سبب ہے کہ نواسۂ رسول ؐ حسینؑ مظلوم اپنے ہمراہ اسلامی معاشرے کی آئیڈ یل خواتین کو میدان کربلا میں لائے تھے۔کربلا کی شیردل خواتین نے شدت مصائب میں گھر کر بھی اپنے کردار وعمل سے ثابت کردکھایا کہ آزادی ضمیر انسانی کے سرخیل امام حسینؓ کربلا میں خواتین کو بے مقصد نہیں لائے تھے۔ فاتح کوفہ وشام خاتون کربلا جناب زینبؓ کے بے مثل کردار وقربانیوں سے تاریخ کربلا کا ہرورق منور نظر آتا ہے۔  علی ظہیر نقوی

 

کیا مظلوم مخلوق پر یہ ظلم و بیدا د ہوگی او ر ادنیٰ ادنیٰ نالائق پاجیوں کی تنگ مزاجیاں سیکڑوں بے گناہ لڑکیوں کا خون کریں گی اور چار دیواری کے پردہ میں عاجز بیکس بے وارث عورتوں کے سروں پرجوتیاں ماری جائیں گی اور تمام تعلیم یا فتہ خلقت خاموش رہے گی؟ کیا ان ستم رسیدوں کی صدائے الم واضعان قانون کے کانوں تک نہ پہنچے گی؟ کیا قانون انصاف عورتوں کے ستی ہونے کو جو گھنٹہ آدھ گھنٹہ کے جلنے کا عذاب تھاموقوف کرکے عورتوں کے عمر بھر کے جلاپے کو قائم رکھےگا؟ ہم صاف کہتے ہیں کےرحم دلی اور انسانیت اور عقل اور انصاف اور سب سے زیادہ شریعت سب کا اتفاق ہے کہ ایسے پاجیوں کی پردہ گاہوں کوحکما ً توڑ ا جائے۔....

 

Probably India is the only country in the world where Muharram (Chehlum and Chup Taazia) processions can pass through Raj Path adjacent to such important monuments as Parliament and President’s House. Our beloved country does not give this sort of permission to any other religious group. It is a matter of pride for us that this procession did not stop even in the stormy times of 1947. The compassion inherent in Indian culture is indeed unique, not to be found elsewhere. That is why the sacrifice rendered by Imam Hussain 14 centuries ago is remembered better and with greater fervour in India than perhaps anywhere else in the world. -- Ali Abdi

 

ظالم شوہر کو حقہ کا بہت شوق تھا اور وہ عاجز بڑے شوق سے اس بے درد کو حقے بھر بھر کر پلایا کرتی تھی ۔ رنجوں او رمصیبتو ں نے اس کا پھیپھڑا چھلنی کردیا اور وہ شہید دق وسل ہوئی۔ موت سے پہلے سب طاقتوں نے جواب دے دیا اور اس کا شوہر جو ہمیشہ اس کو ستانے اور دل دکھانے پر کمر بستہ رہتا تھا ،آخر انسان کا بچہ تھا۔ دل نرما گیا اور ارادہ کیا کہ اس چلتے مہمان کی کچھ خاطر کرلوں۔ رات کو پٹی کے نیچے بیٹھا تیمار داری کیا کرتا تھا۔ کہتے ہیں کے جب وہ حقہ بھرتا تھا تو بیمار غم بے چین ہوجاتی تھی اور اصرار کرتی تھی کہ مجھے نیچے اتار دو ،بضد مشکل نیچے اتاری جاتی ۔اپنے کانپتے ہوئے ہاتھوں سے حقہ بھرتی تھی او رکہتی تھی کہ جب تک دم میں دم ہے اپنی آنکھوں کے روبرو آپ کو تکلیف نہ کرنے دوں گی۔...

 

پاجامہ معمولی چھینٹ کا اکہرا رہتا ہے اور صبح شام دولائی یارضائی اوڑھ کر چارپایوں پر اسباب کے پوٹ بن کر بیٹھ جاتی ہیں۔ کون کہہ سکتا ہے کہ اس قسم کے سلوک وحشیانہ اور خلاف انسانیت و مروت نہیں ہیں اور کیا اس سے بڑھ نالائقی تصور میں آسکتی ہے۔ ہمارا یہ ہر گز مقصد نہیں کہ جن بیچارے آفت زدوں کو مقدور نہیں ہے وہ عورتوں کی جڑا دل کےلئے مقروض بنیں۔ بلکہ ہم صرف انتا جتلا نا چاہتے ہیں کہ ہر ایک ذی مقدور صاحب استطاعت باپ جو بیٹا او ربیٹی رکھتا ہے وہ خود سوچے کہ ہر جاڑے کے لباس میں وہ بیٹے اور بیٹی دونوں پر یکساں خرچ کرتا ہے۔ کیا اس وجہ سے کچھ لڑکیاں گھر میں چھپی رہنے والی ہیں اورشریعت کے پردہ کو توڑ کران کالباس بھی داخل پردہ کیا گیا ہے۔....

 

مسلمان مردوں کے ا س وحشیانہ طریق نے جو وہ عورتوں کے ہمراہ جائز رکھتے ہیں ،عیسائیوں کے دلوں میں ایک عجیب غلط خیال اسلام کی نسبت پیدا کردیا ہے جو ان کی تصانیف  میں بھی پہنچ گیا ہے۔ عیسائیوں نے سمجھا ہے کہ مسلمانوں کے مذہب کے روسے عورتوں میں روح نہیں ہوتی۔ اس غلطی کا منشا ومبنی صرف یہ ہی امر ہے کہ مسلمان مردوں کا طریق عورتوں کے ہمراہ اس قسم کا ہے جیسا انسانوں کا غیر ذی روح حیوان کے ساتھ ہوا کرتا ہے۔ کبھی یہ خرابیاں اس وجہ سے پیدا ہوتی ہیں کہ بی بی بوجہ تعلیم یافتہ ہونے کے صرف امور خانہ داری کے انتظام اور پیدائش اولاد کا ذریعہ ہوتی ہے۔ یعنی وہ خدمتگار او رمادہ حیوان سے زیادہ مرتبہ نہیں رکھتی اور تعلیم یافتہ شخص کی روحانی خواہشوں کو پورا کرنے اور خوش خیال رفیق بننے کے قابل نہیں ہوتی ۔...

 

اس طبقہ کے بعض لوگ ایک نہایت شرمناک تمیز قائم کیا کرتے ہیں۔ یعنی وہ اپنے لئے عمدہ نفیس کھانا علیحدہ تیار کرواتے ہیں اور عورتو ں کےلئے ادنیٰ درجہ کا علیحدہ تیار ہوتا ہے ۔بعض لوگ اپنی بیبیوں اور لڑکیوں کو پوشاک اپنی حیثیت کے لحاظ سے ایسی ذلیل پہناتے ہیں کہ ا س بے حد خست کے چھپانے کے لئے انہیں ایک اور جابرانہ قاعدہ باندھنا پڑتا ہے کہ وہ کہیں برادری میں نکلنے نہ پائیں اور نہ برادری کی کوئی عورت ان کے گھر آنے پائے۔ ہم نے اوپر بیان کیا ہے کہ غربا میں نکاح کا اصول یہ ہے کہ روٹی ٹکرہ کا آرام ہوجائے اور تسلیم کیا ہے کہ ا س طبقہ میں یہ قابل اعتراض نہیں ۔...

 

ہر سال محرم کا مہینہ آتے ہی ذکر غم حسینؓ اور یاد شہادت حسینؓ سے فضا ئیں گونجنے لگتی ہیں، کتنے ہی لوگ ہیں جو یاد حسینؓ میں سینہ کوبی کرتے نظر آتے ہیں مگر انہیں یہ معلوم ہی نہیں ہوتا کہ حضرت حسینؓ نے اپنی اور اپنے پیاروں اور جاں نثار وں کی قربانی کیوں دی، وہ مدینہ چھوڑ کر کس مقصد کے لیے عراق جارہے تھے، شہادت کا واقعہ کس طرح پیش آیا ،کون لوگ اس کے ذمہ دار تھے ،کس مقصد کے لیے ان کو شہید کیا گیا، وقت کے ساتھ ساتھ اس قصے میں بہت سی بے سروپا اور من گھڑت باتیں شامل ہوگئی ہیں اور اصل واقعہ دھندلاپڑتا جارہا ہے ،ضرورت ہے کہ اس واقعے کو اس کے حقائق کے ساتھ زندہ رکھا جائے اور اس مقصد کو بھی پیش نظر رکھا جائے جس کے لیے حضرت حسینؓ نے اپنی جان کا نذرانہ پیش کیا تھا۔  مولانا ندیم الواجدی

 

یعنی 1857کے بعد مسلمانوں نے باحیثیت مسلمان نظام میں اپنے حصے کی جو مانگ کی تھی ، رنگناتھ مشرا رپورٹ نے کسی حد تک اس مانگ پر اپنی مہر ثبت کردی ہے۔گو ابھی اس کی کوئی آئینی اہمیت نہیں ہے، لیکن فی الحال رنگناتھ مشرا رپورٹ کی مسلمانوں کےکئے وہی حیثیت ہے، جو منڈل کمیشن رپورٹ کی اس رپورٹ کے نافذ ہونےسے قبل پسماندہ ذاتوں کے لئے تھی۔....

 

پیپلز پارٹی کی قیادت اور حکومت اندازہ ہی نہ کرسکی کہ محترمہ کے قتل ، مشرف کی رخصتی ،ڈوگرہ راج کے خاتمے، مسلم لیگ(ن) سے دوری ،آزاد عدلیہ کی بحالی اور توانا میڈیا کے ابھارتے سب کچھ بدل دیا ہے۔انہیں یہ بھی احساس نہ ہوا کہ اب ان کی سپاہ میں کوئی بینظیر نہیں رہی۔اگر  ان حقائق کا ادراک ہوتا تو پیپلز پارٹی پھونک پھونک کر قدم اٹھاتی ۔مد مقابل سیاستدانوں کی نااہلیوں، گورنر راج اور تخت لاہور پر قبضے کی مہم جوئی سےگریز کرتی۔ چٹکیاں کاٹنے کے بجائے قومی ادارو ں سے بہتر تعلقات کار قائم کرتی۔ وعدوں کا بھرم رکھتی ۔میثاق جمہوریت میں موجود احتسابی نظام کو عملی شکل دیتی ۔میثاق میں ایک سچائی اور مفاہمت کمیشن کا واضح نقشہ بھی تجویز کیا گیا ہے۔ یہ کمیشن تشکیل دے کر این آر او کا مقدر اس کے حوالے کردیتی۔ معافی تلافی کا اطلاق 1986اور 1999کی درمیانی مدت تک محدود رکھنے کے بجائے حقیقی مفاہمت اور ایک نئے پاکستان کے عزم راسخ کے ساتھ سارے ماضی پر محیط کردیتی ۔  عرفان صدیقی

 

اب پیپلز پارٹی دوبارہ اقتدار میں آچکی ہے۔یقیناً سپریم کورٹ کو بھی چائے کہ اس مقدمے کو انجام تک پہنچائے لیکن سپریم کورٹ میں صرف 17جج ہیں اور یہ 17جج اگر اس معاملے کو دوبارہ کھولیں گے تو فیصلے تک پہنچنے میں کافی دن لگیں گے ۔ اس دوران پارلیمنٹ کو بھی کچھ کرنا چاہئے۔ پارلیمنٹ کی پبلک اکاؤنٹس کمیٹی نیب کے حکام کو بلائے اور ان سے پوچھے کہ انہوں نے 1999سے 2009تک آئی ایس آئی کے فنڈ میں مختلف سیاستدانوں ،جرنیلوں اور صحافیوں میں بانٹے گئے 14کروڑ روپے کا کوئی حساب لیا یا نہیں ؟ آج بھی اس مقدمے سے متعلق بہت سا ریکارڈ نصیر اللہ بابر کے پاس محفوظ ہے۔ حامد میر

 

جس طرح شوہر کے اقارب باعث رنجش شوہر و زوجہ بنتے ہیں اسی طرح زوجہ کے والدین بھی طرح طرح کی رنجشوں کے باعث ہوجاتے ہیں خصوصاً زوجہ کی والدہ یا بڑی بہن عموماً یہ چاہتی ہیں کہ ان کی بیٹی یا بہن حد سے زیادہ گرویدہ اپنے شوہر کی نہ ہوجائے۔ وہ ہمیشہ یہ نصیحت کرتی ہیں کہ شوہر پر اپنا دباؤ رکھو تاکہ تمہاری قدر شوہر کے دل میں زیادہ ہو۔ بیوی کا یوں کھنچنا کبھی کبھی شوہر کی طبعیت کی اصلاح کردیتا ہے مگر بعض صورتوں میں سخت مضر بھی ہوتا ہے۔ جب کسی لڑکی کو نیک نہاد شوہر مل جاتا ہے اور پوری محبت کرتا ہے اور اپنی بیوی کو نہایت آرام سے رکھتا ہے تو وہ ضرور متوقع اس کا امر کارہتا ہے کہ وہ بھی اس کے ساتھ پوری محبت کرے گی اور اس کے آرام کو اپنا آرام سمجھے گی۔....

 

زمانہ بھر میں اگر کوئی ان کا شاکی ہے تو ان کی بیوی ایک ہمارےنہایت فاضل دوست ہیں جو بحر علوم  عربیہ میں شنا دری کرنے والے اور نہایت خوش مذاق خوش خیال شخص ہیں جن کی ذات گروہ علما میں منعتنمات سے ہے مگر ہم طریق زندگی نے ان کو کسی کام کانہیں رکھا ۔ان کے بے انتہا علم سے ایک ذرہ کی برابر فیض کسی کو نہیں پہنچتا ۔ ہم تو جب کبھی ان کی خدمت میں حاضر ہوئے ہیں تو یہ سنا کہ مولوی صاحب بیڑھا ٹھوک رہے ہیں۔یاچار پائی کی ادوائن کس رہے ہیں۔ یا پسناری کو گیہوں تول کر دے رہے ہیں۔یابچوں کی آبد ست کررہے ہیں ۔ پس جس شخص کو اس قسم کی خانہ داری نصیب ہو اس کو کیا راحت نصیب ہوسکتی ہے۔ بعض لوگوں کو ایسی بیویاں ملتی ہیں جو اچھی پڑھی لکھی ہیں۔....

 

ذرا دھیان سے تصور کرو ایک بے زبان کی کیفیت قلبی کا ۔ جب ایک جفا کا ر کسی کسی کو اپنی بیٹھک میں بلاتا ہے اور اپنی ولفگار رفیق سے اس کے لئے کھانا پکواتا ہے اور اپنا منہ اور عاقبت سیاہ کرتاہے اور وہ اشرف زادی اس حرامکاری کی جابرانہ اور کافر انہ حکموں کی تعمیل کررہی ہے۔ آنسو کی لڑی اس کی آنکھوں سےجاری ہے اور وہ اس بیدرو سفاک کے خون سے جلدی جلدی اپنی آنکھیں پونچھتی ہے کہ وہ کہیں دیکھ نہ لے اور ایسا ظاہر کرنا چاہتی ہے کہ چولہے کے دھویں سے آنکھوں سے آنسو نکلے ہیں ۔ ارے ظالم اس لڑکی کی آہیں نہیں ہیں جلے بھنسے دل کادھواں آنسو نہیں ہے ۔جگر پانی ہوکر آنکھوں کے راستہ سے بہ رہا ہے۔....

 

رخصت کے وقت دولہن کے ہمراہ اس سے عزیزوں میں سے کسی مرد اور کسی قدرعورتوں کا جانا موجب ا سکے آرام وسہولت و اطمینان کا ہے۔ سسرال میں پہنچ کر دولہن کا کمال حیا وشرمگیں نگاہ کے ساتھ اتر نا اور معتدل رفتار کے ساتھ چلنا اور سب سے ملنا اور مودبانہ پیش آنا ۔ہر سوال کا معقول مختصر جواب دینا آدمیت کی باتیں ہیں ، نہ اندھا بھینسا بن جانا۔ دوسروں کے چلائے چلنا اور دوسروں کے اٹھائے اٹھنا ۔دولہن کے پاس ہر وقت بھیر کا رہنا بھی خوب نہیں بلکہ بیبیوں سے ملا نے کا ایک وقت خاص چاہئے ۔.....

 

منگنی کے ایام میں لڑکی اور لڑکے کے اقربا میں جو خط وکتابت ہووہ ضرور ہے کہ سچے اخلاص او رمحبت سے پر اور یگانگت  کے رنگ سے رنگین ہو ہمارے ہاں منگنی کے ایام میں جس قسم کی خط وکتابت ہوتی ہے ہم اس کو سخت ناشائستہ تصور کرتے ہیں یہ صحیح ہے کہ منگنی سے پہلے دونوں خاندان ایک دوسرے کے حال کی تفتیش بہت چھان بین کے ساتھ کرتے ہیں لیکن جب وہ مرحلہ طے ہوچکے اور یگا نگت قائم ہوجائےتو ایک دوسرے کی عیب جوئی ۔ یا چھوٹائی بڑائی کا فرق تو بڑی بات ہے۔...

 

نکاح کے متعلق ایک اور اصلاح بھی ضروری اور بہت مفید معلوم ہوتی ہے حال کے دستور کے موافق والدین اپنی بیٹی کو جہیز میں بہت سی پتیلیاں اور لوٹے اور چمچے اور کٹورے اور بہت سی خاک بلادیتے ہیں ۔بعض والدین نہ صرف برتنوں پر اکتفا کرتے ہیں بلکہ بیت الخلا کا سامان بھی مثلا چوکی طشت وغیرہ بھی دیتے ہیں ۔ اسی طرح وہ بے شمار کپڑوں کے جوڑے سلے سلائے جن میں پاجامے ،کرتیاں دوپٹے  وغیرہ سب کچھ ہوتے ہیں کئی سال کا سامان پہلے سے تیار کردیتے ہیں اور جس طرح برتنوں میں چوکی اور طشت تک نوبت پہنچتی ہے ان میں رومال ۔کمر بند ۔موباف بٹوے ۔تلے دانیوں اور کنگھی تک نوبت پہنچتی ہے ۔....

 

حضرت عمر فاروق ۔عمر بن العاص ۔طاؤس ۔اوب الشعشا ۔ امام شافعی ۔ امام احمد ۔ اوزاعی۔ اسحاق وغیرہ ائمہ حدیث ۔امام احمد کا مذہب یہ ہے کہ اگر شوہر زوجہ سے یہ شرط کرلے کہ میں تیرے ہوتے نکاح ثانی نہ کرونگا تو اس شرط کا ایفا ضروری ہے اگر یہ شرط پوری نہ ہوگی تو نکاح ٹوٹ جائے گا۔ ایک اور حدیث میں آیا ہے کہ  لایحل ان تنکح امراۃ بطلاق اخری ۔یعنی اس طرح کا نکاح جائز نہیں کہ ایک عورت یہ شرط کرے کہ اگر تو اپنی پہلی بیوی کو طلاق دے دیں تب میں نکاح کرتی ہوں۔....

 

قبل ازمنظوری رشتہ لڑکی والوں کو چاہئے کہ لڑکے کےذریعہ معاش کی بابت قطعی یقین حاصل کرلیں ۔ آج کل فی زمانہ ذرائع معاش بہت محدود ہوگئے ہیں اور ماں باپ صرف اپنا چاؤ پورا کرنے کےلئے قرض لے کر شادیاں کردیتے ہیں۔ چونکہ لڑکا کوئی مستقل صورت گذارہ نہیں رکھتا اس لئے کئی طرح کی خرابیاں ظہور میں آتی ہیں۔ اور بیاہ کی خوشیاں چند روز میں ختم ہوجاتی ہیں اور دولہن پرانی ہوجاتی ہے ۔ اور کنبہ میں ایک آدمی کا خرچ بڑھ جانے کی وجہ سے یہ بوجھ صاف محسوس ہونے لگتا ہے جو بالطیع ناگوار ہوتا ہے ۔لڑکے کا بیکار رہنا جو پہلے والدین کے دل پر چنداں بارنہ تھا اب  خاص طور پر موثر ہوکر بیٹے اور بہو سے نامعلوم  نفرت پیدا کرنے لگتا ہے ۔.....

 


Get New Age Islam in Your Inbox
E-mail:
Most Popular Articles
Videos

The Reality of Pakistani Propaganda of Ghazwa e Hind and Composite Culture of IndiaPLAY 

Global Terrorism and Islam; M J Akbar provides The Indian PerspectivePLAY 

Shaukat Kashmiri speaks to New Age Islam TV on impact of Sufi IslamPLAY 

Petrodollar Islam, Salafi Islam, Wahhabi Islam in Pakistani SocietyPLAY 

Dr. Muhammad Hanif Khan Shastri Speaks on Unity of God in Islam and HinduismPLAY 

Indian Muslims Oppose Wahhabi Extremism: A NewAgeIslam TV Report- 8PLAY 

NewAgeIslam, Editor Sultan Shahin speaks on the Taliban and radical IslamPLAY 

Reality of Islamic Terrorism or Extremism by Dr. Tahirul QadriPLAY 

Sultan Shahin, Editor, NewAgeIslam speaks at UNHRC: Islam and Religious MinoritiesPLAY 

NEW COMMENTS

  • scientists (IMHO) probably will get it wrong when they stray into humanities. laws of science are...
    ( By hats off! )
  • You discuss the central idea of this article both historically and theologically. Through your discussion, many significant ....
    ( By Meera )
  • ہندستان ایک ایسا ملک ہے جہاں ہر قوم و مذہب کے لوگ بلا تفریق مذہب و ملت آباد ہیں، ہندستان میں ہندوؤں کے بعد مسلمان ...
    ( By ڈاکٹر ساحل بھارتی )
  • none of the articles is fruitful - people do not read nor do they accept = they do what their mind says ....
    ( By rss )
  • New Zealand's Prime Minister is a shining example for regressive societies. No wonder she sticks in Hats ....
    ( By Ghulam Mohiyuddin Faruki )
  • What she writes is a hundred times better than Hats Off's bilious vomitus.
    ( By Ghulam Mohiyuddin Faruki )
  • Hats Off's hatefulness has reached nihilistic proportions. He is need of help.
    ( By Ghulam Mohiyuddin Faruki )
  • What she writes is a hundred times better than Hats Off's bilious vomitus.....
    ( By H S )
  • آل انڈیا مسلم پرسنل لاء بورڈ کی تجاویز کہ مدارس کو رائٹ ٹو انفارمیشن ایکٹ (معلومات حاصل کرنے کا حق)کے تحت لانے کی تجویز خود ...
    ( By عبدالمعید ازہری )
  • the author does not have proper understanding of Naskh therefore his article is full of errors and does...
    ( By Alifa )
  • With people like Apoorvanand, India can't be so bad. Fortunately there are....
    ( By Ghulam Mohiyuddin Faruki )
  • Jacinda Ardern has set a great example for India...
    ( By Ghulam Mohiyuddin Faruki )
  • Religions should bring us together instead of driving us apart.
    ( By Ghulam Mohiyuddin Faruki )
  • a very simple minded woman with very mediocre capacity of analysis. incapable...
    ( By hats off! )
  • not to worry. it is a matter of parity. islam hates the kuffar as much...
    ( By hats off! )
  • ‘Lesson for World Leaders’: Imam Thanks New Zealand PM after Prayers" another islamist...
    ( By hats off! )
  • Only a hateful ex-Muslim would call Erdogan a "moderate Muslim". A much...
    ( By Ghulam Mohiyuddin )
  • This is a bogus article because it uses arbitrary, self-serving or false arguments to support its contentions...
    ( By Ghulam Mohiyuddin )
  • I agree with Mr Sultan Shahin that Islam needs to change itself from within...
    ( By A S MD KHAIRUZZAMAN )
  • Good article! It has given good suggestions. We should do self-introspection and reform ourselves. For ...
    ( By Kaniz Fatma )
  • the west should embrace all the muslims or else... but all Islamic....
    ( By hats off! )
  • Naseer sb., There is no compulsion in any of Jesus's sermons. He never said anything like, "“Kill....
    ( By Ghulam Mohiyuddin )
  • Naseer sb., It is not a question of believing or not believing in the Quran. It is a question of believing.....
    ( By Ghulam Mohiyuddin )
  • Happy Holi, everyone.
    ( By Ghulam Mohiyuddin )
  • GM sb says "In Christianity, there is no compulsion in religion. 2Ti 2:24 As the ....
    ( By Naseer Ahmed )
  • "It appears" is not the primary evidence. It is the supporting evidence to what the Quran...
    ( By Naseer Ahmed )
  • Hats Off's frenzied animus seems to be eating him from within. I hope he does not explode.
    ( By Ghulam Mohiyuddin )
  • Hats off's literalism is a mirror image of Naseer sb.'s literalism. One...
    ( By Ghulam Mohiyuddin )
  • More rubbish from Hats Off! Violent extremism, by whatever name, is the same....
    ( By Ghulam Mohiyuddin )
  • Yes, good call. BUT the President's comments connecting ANZAC with the deranged....
    ( By Rashid Samnakay )
  • there is a huge difference. the isis were quoting the Quran...
    ( By hats off! )
  • it is really a gladdening thought that there is nothing even remotely...
    ( By hats off! )
  • islam is about copting religions, grabbing mal e ghanimat, lying to mislead....
    ( By hats off! )
  • What is Hats Off talking about? Where does Wajahat Ali say anything...
    ( By Ghulam Mohiyuddin )
  • Naseer sb. says, "It appears that the people before Moses called themselves....
    ( By Ghulam Mohiyuddin )
  • Bandage treatment of marriage and inheritance laws will not help. What....
    ( By Ghulam Mohiyuddin )
  • The rise of Wahhabism, white nationalism and Hindu nationalism has shrunk...
    ( By Ghulam Mohiyuddin )
  • Very good article! The call to reject hate, intolerance, exclusion and violence must be vigorous and oft-repeated...
    ( By Ghulam Mohiyuddin )
  • what do you call a person who believes in a text that gratuitously denigrates...
    ( By hats off! )
  • Religion is from God and God alone can tell us about the history of His religion....
    ( By Naseer Ahmed )