FOLLOW US:

Books and Documents
Urdu Section (19 Mar 2010 NewAgeIslam.Com)
خواتین اور حق میراث

By Khalid Saifullah Rahmani

The attitude of the sharias to wealth and fortune is that it should not be frozen in one hand and keep circulating, that is, should be distributed among maximum number of people. Concentration of financial resources into one or a few hands is not only harmful in financial but social and ethical terms as well.

The basic purpose of the economic system is that the needs of all the individuals of the society are fulfilled; no one remains hungry or undressed; there is no one who does not get treatment in sickness, neither is there a family who is deprived of shelter. If there are financial resources enough for all the individuals belonging to a country or society and still the basic needs of some people are not met, then it means that either the economic system prevalent in that society is flawed or incomplete or the system is not implemented judiciously.

Similarly if wealth is concentrated in one or few hands, it leads to moral degradation in the rich encouraging, lavish lifestyle, corruption, ridicule for others and oppression. This was the very cause of the corruption of the Pharaohs, Qaroon, Haaman, Nimrood and others; on the other hand the people who do not get the share in it, suffer from a sense of deprivation and as a reaction, out of their hatred of the wealth, take to violence destroying peace and harmony of the society.

The emergence of the communist movement is the result of this reaction. That's why, Islam discourages the concentration of wealth and encourages to keep it circulating, making it available to the maximum number of people. One of the ways to ensure the distribution of wealth by Shariah is the system of inheritance.

Before the advent of Islam, according to the Jewish laws, the eldest son would inherit the whole property. Neither the other sons nor the daughters would get anything. In Hinduism as well, the men had the right to inheritance, not the woman and also there was the concept of a joint family. Until all the members agreed on the division, the inheritance would not be distributed. Women themselves were considered property. That concept was prevalent among the Arabs as well. They believed that only those capable of fighting or defending himself/herself had the right to inherit, thereby depriving women and children from their share. They too sometimes considered women their property and the stepmother would also be distributed as inheritance.

Islam envisaged a complete system of inheritance. It put focus on three main points: The whole inheritance should not be confined to one or two particular heirs, nor the ambit of distribution should be so wide that it becomes almost impossible for all the heirs to get a respectable share. That is, there should be moderation. There should be neither a lot of concentration nor a lot of maximization. Secondly, if the close relatives are made the inheritors, the distribution will become impractical and the circle will become so wide that out of a property worth millions, everyone would get only a measly amount, not enough to meet the needs of the people the deceased was supposed to support.

The third point which was kept in consideration was that the right to inherit should depend on the extent of responsibilities of the heirs. In other words, the law of inheritance is very much related to the law of maintenance. On the whole, the share of the heirs should be proportionate to the right or authority the deceased had on the heirs and the Sharia has considered the responsibilities of the heirs towards the deceased as well as to the society on the whole, that is, the persons having greater responsibilities towards the family of the society will get the higher share and those having less responsibilities will get the lower share. On the subject of financial rights and responsibilities, the Holy Prophet (PBUH) said thus, "One will enjoy rights as much as the responsibilities he has."(Abu Dawood, un-Aisha, RU, Hadeeth No. 3044. (Translation by the translator)

Basically this wisdom is applied to the law of inheritance as well and the lack of understanding of this leads to confusion. Recently, making the Kerala government and the government of India a party, a writ was filed in the Kerala High Court, Ernakulum by the so-called Quran-o-Sunnat Society appealing that the law relating to inheritance should be made in accordance with correct explanation of the Quran, thereby not discriminating between the rights of sons and daughters. Some examples were also produced in this connection.

This kind of pleadings is often repeated with some variations of words or reasoning and Islam is blamed for this 'injustice and excess'. Unfortunately, along with the non-Muslim critics, the Muslim intellectuals and lawyers too started to speak on these lines which is, in fact, a result of their ignorance about Islam and being influenced by the propaganda of the Islam-bashers.

In this context, three points should be kept in mind which has been envisaged by the Shariah: First, that some close relatives should have the right on the inheritance. Those relatives are called ' Zawil Faruz", among them are men as well as women of the same rank such as father and mother, son and daughter, husband and wife.

This is very important that among the "Ashab-e-Farooz", women are superior than men: as 'Ashab-e-Farooz' women become heirs in seventeen situations while men only in six. Second, the share of the person whose responsibilities have ceased to exist or have become less is entitled to lower share as compared to the one who is ushering in an arena of responsibilities and will have more responsibilities towards his associates in future.

For instance, the son has been entitled to a higher share than the father because when father succeeds son, he has almost retired or about to retire from his responsibilities towards his life. In contrast, when the son succeeds his father, he is on the peak of his responsibilities and has to carry out important financial responsibilities. The same goes with the mother and daughter. Thirdly, the person with fewer responsibilities gets smaller share and one with more responsibilities will get the greater share.

The father has the responsibility of supporting his wife and children but the mother is not responsible for even her own needs. The son has the responsibility towards his wife, children and parents, but the daughter has none as such. That is why father's share as compared to the mother's and the son's share as compared to the daughter's is double. This is neither discrimination on the basis of gender nor injustice, rather it is a fixation of rights proportionate to the responsibilities.

These are the basic principles on which the Shariah has formed the law of inheritance. Since the responsibilities in all the relations between men and women are not equal, in many situations, 1:2 ratio is not applied in the distribution of inheritance among the men and women of the same ranking. This is commonly believed that Shariah always entitles women half of the man's share. This is sheer ignorance.

A close scrutiny of the issue will enable us to counter the voices raised and the propaganda unleashed against the share of women in the distribution of inheritance. The truth is that there are four categories of male and female relatives in terms of inheritance: 1) the scenario where the share of the woman is half that of the man's.2) scenario where the man and woman have equal inheritance rights,3) the scenario where the man's share is less and the share of the woman of the same rank is more 4) the scenarios where only the woman is the heir and the male relative of the same rank is not the heir, the woman has half the man's share: the mother as compared to the father, provided the deceased has not left any son/daughter, or spouse; blood-related brother or sister as compared to real brother or sister. If one of the spouse is dead, the husband will inherit while the wife will inherit half the husband's property. For example, on the death of childless wife, the husband will get the half whereas on the death of childless husband, the wife will inherit one fourth.

In the same way, out of the property of husband with offsprings, the wife will get one-eight, and husband will get one-fourth from the property of the wife leaving children. In particular situations, the shares of men and women of equal rank are equal. If the deceased has one son and parents, then both mother and father will get one-sixth. If the deceased has only two daughters, in that case too, the daughters will get two-third, the parents will get one-sixth.

If the deceased woman has left father, son and grandmother, then the father and grandmother will get one-sixth, though the relationship of the grandmother is more distant than the father's. In specific situations, if the survivor is lone, irrespective of his gender, he/she will get the whole property. For example, if the father is the survivor, he will be entitled to the whole property by virtue of his being 'Asba', or if mother is the lone survivor, she will get one-third of her own real share and the two-third will go to her as 'Radd'.

If the son is the lone survivor, he will be entitled to the whole property by virtue of his being 'Asba' and if the daughter is the lone survivor, her own share will be half of the property and another half will go to her as 'Radd'.

There are many similar situations where real brothers and sisters and distant brothers and sisters get equal shares. In certain cases, women's share is higher than men's because by virtue of her being among 'Zawil Faruz', the daughter sometimes is entitled to even half or one third, whereas the son does not get half or one-third despite being among 'Zawil Faruz', although, in the jargon of inheritance, because of his being among 'Asba' he gets what is left after the distribution of the shares. This portion is sometimes deducted from the share of the woman which she gets for being among the 'Ashab-e-Faruz'.

Suppose, a woman leaves behind sixty acres of land and the survivors are her husband, father, mother and two daughters, then each of the daughters will get sixteen acre of land and if instead of two daughters, she leaves two sons, then each son will get 12.5 acre. Similarly, if the woman leaves behind 1156 acres of land and the survivors are her husband, mother and daughter, then the daughter will get 72 acres, and if in place of the daughter there is a son, he will get 65 acre.

Therefore, these are the situations where the woman gets more than the man. There are some other situations where the man does not get anything but the female relative of the same rank gets a share. For example, if a woman has left behind husband, father, mother, daughter and granddaughter, then the granddaughter has the right over the one-sixth of the property, and if instead of granddaughter, there is a grandson, then the grandson will get nothing.

Similarly, if the deceased woman has left behind her husband, her real sister and distant sister, then the distant sister gets one-sixth, whereas if there is a distant brother instead, he gets nothing. In the same way, the grandmother becomes the heir and the grandfather does not. In short, according to Sharia Laws, there are many instances when the woman is entitled to a higher portion than or equal to the man's or the woman gets a share and the man gets nothing.

A scholar has proved that there are more than thirty situation where a woman gets as much as or more than a man, or gets a share and the man does not have any right whereas there are four particular situations where the woman is entitled to the half as compared to the man. In this context, if we consider the issue of inheritance of the women, it becomes obvious that the concept that the women get less than men is based on misunderstandings. Even if women get less than men in some situations, the difference is only on the basis of the rights and responsibilities they have and that too is a privilege to women because the man has the entire responsibility of supporting and sustaining the family whereas women do not even have the responsibility towards their own sustenance.

From this point of view, women should ideally get less than the half of the property. But considering her natural weakness, she has been given that privilege. (Translated by Sohail Arshad)

URL: http://newageislam.com/NewAgeIslamUrduSection_1.aspx?ArticleID=2594

 

مولانا خالد سیف اللہ رحمانی

دولت و ثروت کے سلسلے میں شریعت کا بنیادی مزاج یہ ہے کہ وہ ایک ہاتھ میں مرتکز ہوکر نہ رہ جائے ،بلکہ گردش میں رہے اور زیادہ سے زیادہ لوگوں میں تقسیم ہو، مالی وسائل کا ایک یا چند ہاتھوں میں سمٹ کر رہ جانا معاشی اعتبار سے بھی نقصان دہ ہے اور سماجی واخلاقی اعتبار سے بھی ، نظام معیشت کا بنیادی مقصد یہ ہے کہ سماج کے تمام لوگوں کی ضرورت پوری ہوں، کوئی بھوکا اور بے لباس نہ رہ جائے ،کوئی ایسا شخص نہ رہے جو اپنے علاج سے معذور ہو اور کوئی ایسا کنبہ نہ رہے جس کے سرمایہ سایہ تک میسر نہ ہو، اگر کسی ملک یا سماج میں اس سے وابستہ تمام لوگوں کی ضرورت کے بقدر مالی وسائل موجود ہوں ، لیکن کچھ لوگ اپنی بنیادی ضروریات سے محروم ہوں تو یہ اس بات کی علامت ہے کہ یا تو وہ معاشی نظام ناقص و ناتمام ہے جو وہاں جاری وساری ہے، یا اس نظام کو عدل وانصاف کے ساتھ نافد نہیں کیا جارہا ہے، اسی طرح اگر دولت ایک یا چند ہاتھوں میں سمٹ کر رہ جائے تو اس سے ایک طرف ان دولت مندوں میں اخلاقی بگاڑ پیدا ہوجاتا ہے عیش پرستی، فضول خرچی ، تکبر ،دوسروں کی تحقیر اور ظلم وجور جیسی برائیاں گھر کر جاتی ہیں، فرعون، قارون، ہامان اور نمرود وغیرہ کے بگاڑ کا اصل سبب یہی تھا ، دوسری طرف جو لوگ اس میں حصہ پانے سے محروم رہتے ہیں ، ان میں رد عمل پیدا ہوتا ہے  اور وہ لوگ احساس محرومی کی وجہ سے دولت مندی کے خلاف نفرت میں مبتلا ہوکر جنگ وجدال پر اتر آتے ہیں ، جس سے معاشرہ کا امن وامان درہم برہم ہوجاتا ہے، کمیونسٹ تحریک اسی رد عمل کا نتیجہ ہے ، اسی لئے اسلام نے دولت کے ارتکا ز کو ناپسند کیا ہے اور اس بات کی ترغیب دی ہے کہ مالی وسائل کوگردش میں رکھا جائے اور زیادہ سے زیادہ ہاتھوں کی اللہ تعالیٰ کی اس نعمت تک رسائی ہو۔ تقسیم دولت کے لیے شریعت میں جو تدبیریں کی گئی ہیں ، ان میں ایک تقسیم میراث کا نظام بھی ہے، اسلام سے پہلے یہودی قانون میں پورا ترکہ پہلے لڑکے کو ملتا تھا، نہ اس میں دوسرے بٹیوں کا حق ہوتا تھا اور نہ بیٹیوں کا ، ہندو مذہب میں بھی صرف مرد ترکہ کے مستحق ہوتے تھے، عورتیں نہیں ہوتی تھیں، اور اس میں  بھی مشترک خاندان کا تصور تھا، جب تک تمام ورثہ ترکہ کی تقسیم پر راضی نہ ہوجائیں ، اس وقت تک میراث کی تقسیم نہ ہوتی ،عورتوں کو تو خود جائداد اور پراپرٹی سمجھی جاتی تھیں ، کم وبیش یہی تصور زمانہ جاہلیت میں عربوں کا تھا ، وہ سمجھتے تھے کہ جو لڑنے اور دفاع کرنے کی صلاحیت رکھتا ہو، وہی ترکہ کے حق دار ہیں،اس لیے عورتوں اور بچوں کو اس میں کوئی حصہ نہیں ، وہ بھی بعض اوقات عورتوں کو جائداد کا درجہ دیتے تھے اور سوتیلی ماں بھی ترکہ میں تقسیم ہوجاتی تھی۔ اسلام نے تقسیم میراث کا ایک مکمل نظام مقرر کیا، اس نظام میں تین باتیں خاص طور پر ملحوظ رکھیں گئیں ،اول یہ نہ مرنے والے کا پورا گرکہ ایک دو فرد تک محدود ہوجائے اور نہ تقسیم کا دائرہ اتنا وسیع ہوجائے کہ ان تک حصہ پہونچا نا دشوار ہوجائے اور جوتیوں میں دال بٹنے کی نوبت آجائے ،یعنی اعتدال ہو ، نہ بہت زیادہ ارتکاز ہو اور نہ بہت پھیلاؤ،۔۔۔دوسرے : ترکہ کا حق دار قریبی رشتہ داروں کو قرار دیا جائے تو یہ ناقابل عمل بات ہوگی اور دائرہ اتنا وسیع ہوجائے گا کہ کروڑوں کے ترکہ میں پانچ دس روپئے کا شیر متعین کرنا ہوگا، جس سے ان لوگوں کی ضرورت کسی بھی درجہ میں پوری نہیں ہوسکے گی، جن کی کفالت مرنے والے شخص سے مربوط تھی ۔

تیسری بات یہ ملحوظ رکھی کئی  کہ ذمہ داریوں کے اعتبار سے حصہ داروں کے حقوق ہو، اسے ہم یوں بھی کہہ سکتے ہیں کہ قانون میراث بڑی حد تک نفقہ و کفالت کے قانون سے مربوط ہے، بحیثیت مجموعی مرنے والے شخص کانفقہ جن لوگوں سے متعلق ہوسکتا ہے، وہ اسی نسبت سے میراث کے حق دار ہیں اور مرنے والے سے متعلق ذمہ داریوں کے علاوہ عمومی ذمہ داریوں کو بھی شریعت نے ملحوظ رکھا ہے کہ جن لوگوں پر خاندان یا سماج سے متعلق ذمہ داریاں زیادہ عائد کی گئی ہیں، ان کا حق زیادہ ہوگا اور جن پر کم عائد کی گئی ہیں ان کا حق بھی کم ہوگا، مالی حقوق اور ذمہ داریوں کے سلسلہ میں آپ ؐ نے  ایک اصول کے طور پر اس کا ذکر فرمایا، چنانچہ ارشاد ہے: ‘‘ الخراج بالضمان’’( ابوداؤد ،عن عائشہؓ ،باب فی من اشتری عبد ا فا ستعملہ ثم وجہ یہ عیباً ،حدیث نمبر :3044)یعنی جس شخص پرجتنی زیادہ ذمہ داریاں ہو  ں گی، اسی نسبت سے اس کے حق میں بھی ہوں گے، بنیادی طور پر یہی مصلحت قانون میراث میں بھی ملحوظ ہے جس کے نہ سمجھنے کی وجہ سے بعض لوگ غلط فہمی میں مبتلا ہوجاتے ہیں۔

ابھی کچھ عرصہ پہلے کیرالہ ہائی کورٹ ارنا کولم میں نا م نہاد قرآن سنت وسوسائٹی کی طرف سے حکومت کیرالہ اور حکومت ہند کی مدعی علیہ بناتے ہوئے درخواست پیش کی گئی ہے کہ میراث کے قانون کو قرآن کی صحیح تشریح کے مطابق بنایا جائے اور بیٹے اور بیٹی کے استحادق میں کوئی فرق نہیں کیا جائے،پھر اس کی متعدد مثالیں دی گئی ہیں، اسی طرح کی بات کسی قدر الفاظ اور استدلال کے فرق کے ساتھ بار بار دہرائی جاتی ہے اور اس کو اسلام کی ناانصافی اور زیادتی قرار دیا جاتا ہے، افسوس کہ غیر مسلم معتر ضین کے ساتھ ساتھ باتیں پیش نظر رہنی چاہئیں جن کو شریعت میں ملحوظ رکھا گیا ہے: پہلی بات یہ کہ کچھ قریبی رشتہ دار لازمی طور پر میراث کے حقدار ہوں گے، ان رشتہ داروں کو ‘‘ذوق الفروض ’’ کہا جاتا ہے ، ان میں مرد بھی ہیں اور اسی درجہ کی رشتہ دار عورتیں بھی ، جیسے باپ اور ماں ،بیٹا اور بیٹی ،شوہر اور بیوی ،یہ بات بھی اہم ہے کہ اصحاب فروض میں عورتیں بہ مقابلہ مردوں کے زیادہ ہیں،عورتیں سترہ حالتوں میں اصحاب فروض کی حیثیت سے وارث بنتی ہیں اور مرد صرف چھ حالتوں میں ۔

دوسرے: جس شخص سے ذمہ داریاں کم یا ختم ہوگئی ہوں، اس کا حصہ یہ مقابلہ اس رشتہ داروں کے کم رکھا گیا ہے، جو ابھی ذمہ داریوں کے میدان میں قدم رکھا رہا ہے،اور اس پر مستقبل میں اپنے متعلقین کے تئیں ذمہ داریاں آنے والی ہوں، ان کا حصہ زیادہ رکھا گیا ہے، جیسے باپ کے مقابلے بیٹے کا حق زیادہ رکھا گیا، کیوں کہ جب باپ بیٹے سے وارث ہوتا ہے تو عام طور پر وہ زندگی سے متعلق ذمہ داریوں سے سبکدوش ہوچکا ہوتا ہے، یا سبکدوش ہونے کے قریب ہوتا ہے اور بیٹا جب اپنے باپ سے وارث ہوتا ہے تو عام طور پر وہ اس کی ذمہ داریوں کے شباب کا وقت ہوتا ہے اور اسے بہت سے مالی حقوق ادا کرنے ہوتے ہیں ،یہی حال ماں اور بیٹی کا ہے۔ تیسری بات یہ ہے کہ جس سے ذمہ داریاں کم رکھا گیا متعلق ہوتی ہیں، ان کا حصہ کم ہے اور جن سے زیادہ ذمہ داریاں متعلق ہوں، ان کا حصہ بھی زیادہ ہوتا ہے،باپ کے ذمہ بال بچوں کی کفالت ہے، ماں کے ذمہ خود اپنی کفالت بھی نہیں ہے، بیٹےپر اپنی بیوی ،اولاد اور والدین کی ذمہ داری ہے،بیٹی پر یہ ذمہ داریاں نہیں ہیں، اس لیے باپ کا حصہ بمقابلہ ماں کے اور بیٹے کا حصہ بمقابلہ بیٹی کے دوہرا رکھا گیا ہے، یہ نہ جنس کی بنا پر تفریق ہے اور نہ ناانصافی ہے، بلکہ یہ ذمہ داریوں کے لحاظ سے حقوق کی تعین ہے، یہ وہ اصول ہیں جن کی اساس پر شریعت نے قانون میراث مقرر کی ہے۔چونکہ مردوں اور عورتوں کے تمام رشتوں میں ذمہ داریوں کا تناسب یکساں نہیں ہوتا ، اس لیے بہت سی صورتوں میں ایک ہی درجہ کے رشتہ دار مردو ں اور عورتوں کے درمیان حصہ میراث میں ایک اور دو کا تناسب ملحوظ نہیں ہے،عام طور پر لوگ سمجھتے ہیں کہ شریعت میں ہمیشہ بمقابلہ مرد کے عورت کا حصہ نصف رکھا گیا ہے،یہ محض غلط فہمی اور ناآگہی ہے، اگر گہرائی سے اس مسئلہ پر غور کیا جائے تو بہ آسانی تقسیم میراث کے سلسلے میں عورت کے حصہ کو لے کر جو آواز اٹھائی جاتی ہے او رپروپیگنڈہ کیا جاتا ہے، اس کی تردید اور نفی ہوسکتی ہے ۔حقیقت یہ ہے کہ میراث کے اعتبار سے ہم درجہ مرد وعورت اور رشتہ داروں کے سلسلہ میں چار صورتیں پائی جاتی ہیں:(1)وہ صورت جس میں عورت کا حق میراث بمقابلہ مرد کے نصف ہے۔(2) وہ صورت جس میں مرد اور عورت کا حصہ برابر ہے۔(3) وہ صورت جس میں مرد کا حصہ کم اور اسی درجہ کی رشتہ دار عورت کا حصہ زیادہ ہے۔(4) وہ صورتیں جس میں صرف عورت وارث ہوتی ہے، اسی درجہ کا مرد رشتہ دار وارث نہیں ہوتا ۔ اس صورتوں میں عورت کا حصہ مرد کے مقابلہ آدھا ہوتا ہے:باپ کے مقابلہ ماں کا، بشرطیکہ متوفی نے کوئی اولاد یا شوہروبیوی کو نہ چھوڑا ہو۔ حقیقی بھائی کے ساتھ حقیقی بہن یا علاقی بھائی کے ساتھ علاقی بہن۔ زوجین میں سے ایک مرجائے اور دوسرے کو چھوڑ جائے، اس صورت میں بھی بیوی کے ترکہ میں شوہر کو ملے گا، اس کے مقابلہ میں شوہر کے ترکہ میں بیوی کا حصہ نصف ہوگا، جیسے لاولد بیوی کے مرنے پر شوہر کو نصف ملے گا اور لاولد شوہر کے مرنے پر شوہر کے ترکہ سے بیوی کو چوتھائی ، اسی طرح صاحب اولاد شوہر کے مال میں سے بیوی کو آٹھواں حصہ ملے گا ،اور صاحب اولاد بیوی کے مال میں شوہر کو چوتھائی ملے گا۔ کچھ صورتوں میں ا یک درجہ کے مرد و عورت رشتہ دار کے حصہ برابر ہوتے ہیں:میت کا ایک لڑکا ہو اور ماں باپ ہوں تو باپ کو بھی چھٹا حصہ ملے گا او رماں کو بھی۔

میت کی صرف وبیٹیاں ہوں، اس صورت میں بھی بیٹیوں کو دوتہائی حصہ ملے گا، ماں اور باپ کو چھٹا ملے گا۔ مرنے والی نے باپ ،بیٹا اور نانی کو چھوڑ ا ہو تو باپ او رنانی دونوں کو چھٹا حصہ ملے گا،حالانکہ نانی کا رشتہ بمقابلہ باپ کے دور کا ہے۔ بعض صورتوں میں تنہا مرد رشتہ دار ہو یا عورت ،پورےترکہ کی حقدار ہوگی، جیسے کسی نے صرف باپ کو چھوڑ ا ہوتو عصبہ ہونے کی بنا پر باپ پورے ترکہ کا حقدار ہوگا، یا صرف ماں کو چھوڑ ا ہو تو ایک تہائی اس کا اصلی حصہ ہوگا اور دوتہائی بطور ‘‘رد’’ اسے ملے گا ،یا صرف ایک بیٹا چھوڑا ہوتو وہ عصبہ ہونے کی بنا پر پورے ترکہ کا حقدار ہوگا ،اور اگر صرف ایک بیٹی چھوڑی ہوتو نصف اس کا اصل ہوگا اور باقی بطور ‘‘رد’’ سے مل جائے گا۔ اس طرح کی متعدد صورتیں ہیں جن میں حقیقی بہن کا حقیقی بھائی کے ساتھ یا اخیافی بہن کا حقیقی بھائی کے ساتھ برابر کا حصہ پاتا ہے۔بعض صورتوں میں عورت کا حصہ مرد سے بڑھ جاتا ہے، کیوں کہ بیٹی کا حصہ ڈوی الفروض میں ہونے کی حیثیت سے بعض دفعہ نصف یا تہائی نہیں ہے، البتہ اصطلاح میراث کے اعتبار سے ‘‘عصبہ’’ میں ہونے کی حیثیت  سے تقسیم حصص کے بعد بچا ہوا حصہ مل جاتا ہے، یہ حصہ بعض اوقات عورت کے اس حصے سے کم ہوجاتا ہے ،جو اسے اصحاب فروض میں ہونے کی حیثیت سے ملتا ہے ،جیسے فرض کیجئے کہ ایک عورت نے اپنی وفات کے وقت ساٹھ اکڑز مین چھوڑی اور شوہر ،والد، ماں اور دوبیٹوں کی چھوڑا  ، تو ہر بیٹی کو سولہ ایکڑ زمین ملے گی، اور اگر اسی صورت میں دوبیٹونں کے بجائے دوبیٹوں کو چھوڑا تو ہر بیٹے کا حصہ ساڑھے بارہ ایکڑ ہوگا، اسی طرح ایک عورت نے ترکہ میں 1156ایکڑ راضی چھوڑی اور اس کے رویہ میں شوہر، والد، ماں اور بیٹی ہیں تو بیٹی کا حصہ 72ایکڑ ہوگا اور اسی صورت میں اگر بیٹی کے بجائے بیٹا ہے تو اس کا حصہ 65ایکڑ ،چنانچہ اس طرح کی متعدد صورتیں ہیں جن میں مرد کے مقابلہ عورت کا حصہ زیادہ ہوتا ہے۔ بعض ایسی صورتیں بھی ہیں جس میں مرد کو حصہ نہیں ملتا ہے۔

لیکن اگر اسی کی ہم درجہ عورت رشتہ دار ہو تو وہ میراث میں حصہ پاتی ہے، جیسے کسی عورت نے پس ماندگان میں شوہر ،باپ ،ماں ، بیٹی اور پوتی کو چھوڑا ہو، تو پوتی چھٹے حصے کی مستحق ہوتی ہے اور پوتی کےبجائے پوتا  ہوتو اسے کوئی حصہ نہیں ملتا ، اسی طرح مرنے والی عورت نے شوہر ،حقیقی، بہن اور علاقائی بہن اور علاقائی بہن کو چھوڑا ہے تو علاقائی بہن چھٹے حصے کی حقدار ہوتی ہے، علاقی بہن کے بجائے علاقی بھائی ہوتو اسے کوئی حصہ نہیں ملتاہے، اسی طرح بعض اوقات داری وارث ہوتی ہے، اور اجداد میں سے جو اس کے مقابل ہو، وہ وارث نہیں ہوتا ہے۔ غرض کہ شریعت میں بہت سی صورتیں ایسی ہیں جن میں بمقابلہ مرد کے عورت کا حصہ برابر یا زیادہ ہوتا ہے یا عورت حصہ دار ہوتی ہے اور مرد محروم ہوتا ہے، ایک صاحب علم نے ثابت کیا کہ تیس سے زیادہ حالتیں ایسی ہیں جن میں عورت مرد کے برابر یا اس سے زیادہ حصہ پاتی ہے یا وہ تنہا حصہ دار ہوتی ہے اور مرد محروم ہوتا ہے ،جب کہ چار متعینہ حالتیں ہیں جن میں عورت کا حصہ بہ مقابلہ مرد کے آدھا ہوتا ہے، اگر اس پس منظر میں عورت کی میراث کے مسئلہ پر غور کیا جائے تو صاف معلوم ہوتا ہے کہ یہ سمجھنا کہ عورت کو مرد کے مقابلہ کم حصہ دیا جاتا ہے ،محض غلط فہمی ہے ، اور جن صورتوں میں عورت کا حصہ کم ہے ، ان میں فرق محض فرائض اور ذمہ داریوں کے لحاظ سے رکھا گیا ہے، بلکہ اس میں بھی عورتوں ہی کی رعایت ملحوظ ہے، کیوں  کہ مرد پرسارے خاندان کی کفالت کی ذمہ داری ہے، عورت پر خود اپنی کفالت کی ذمہ داری بھی نہیں ، اس لحاظ سے بظاہر عورت کا حصہ نصف سے بھی کم ہونا چاہئے ،لیکن عورت کی فطری کمزوری کی رعایت کرتے ہوئے اس نصف کا مستحق قرار دیا گیا ہے۔

URL for this article:

http://www.newageislam.com/urdu-section/women-and-the-right-to-inherit/d/2594



TOTAL COMMENTS:-    

Compose Your Comments here:

Name
Email (Not to be published)
Comments
Fill the below text
 
Disclaimer: The opinions expressed in the articles and comments are the opinions of the authors and do not necessarily reflect that of NewAgeIslam.com.