certifired_img

Books and Documents

Books and Documents (13 Jun 2015 NewAgeIslam.Com)



The Irony of History المیہ تاریخ

 

 

المیہ تاریخ

ڈاکٹر مبارک علی

تاریخ پبلیکیشنز

بُک سٹریٹ 39 مزنگ روڈ لاہور ، پاکستان

 

جملہ حقوق محفوظ ہیں

نام کتاب : المیہ تاریخ

مصنف : ڈاکٹر مبارک علی

اہتمام : ظہور احمد خاں

پبلشرز : تاریخ پبلی کیشنز لاہور

کمپوزنگ : فکشن کمپوزنگ اینڈ گرافکس ،لاہور

پرنٹرز : سید محمد شاہ پرنٹرز ، لاہور

سرورق : ریاض ظہور

اشاعت : 2012ء

قیمت : 450 روپے

تقسیم کار:

فکشن ہاؤس : بُک سٹریٹ 39 مزنگ رو ڈ لاہور ، فون : 042-37249218-37237430

فکشن ہاؤس : 52،53 رابعہ سکوائر حیدر چوک حیدر آباد ، فون :022-2780608

فکشن ہاؤس : نوشین سنٹر، فرسٹ فلور دوکان نمبر 5 اردو بازار کراچی

فِکشن ہاؤس

لاہور، حیدر آباد، کراچی

انتساب

عطیہ شہلا لورنین تارا کے نام

ترتیب مضامین

حصہ اوّل

 پیش لفظ                                                                                     صفحہ

1۔ مذہبی تعصب اور رواداری کا تجزیہ                                            7

2۔ ہندوستان کی تاریخ میں صوفیاء کا کردار                                       9

3۔ صوفی روایات کی تشکیل                                                           33

4۔ تصوف اور معاشرہ                                                                  41

5۔ صوفیاء کی روحانی سلطنت                                                          47

6۔ ہندوستان میں اسلام کیسے پھیلا ؟                                               59

7۔معاشرہ عورت اور بہشتی زیور                                                   67

8۔ علما ء اور سائنس                                                                      77

9۔ علماء معاشرہ او رجہاد تحریک                                                     82

10 علماء او رمسائل                                                                      93

11۔ جہاد تحریک                                                                        107

12۔ معاشرہ ذات پات اور مرزا نامہ                                             122

13 چند تاریخی غلط فہمیاں                                                              129

14 ۔ ہندوستانی معاشرہ اور انگریزی اقتدار                                     137

15۔ سر سید اور اقبال                                                                  145

16 ۔ سرسید اور مفاہمت کی پالیسی                                                  149

17۔ فکر اقبال کی بنیادیں                                                              165

حصہ دوم

1۔ اخلاقی و ثقافتی اقتدار                                                               175

2۔نسل خاندان و ذات پات                                                         181

3۔ فیاضی و سخاوت                                                                       189

4۔ نمک حلالی                                                                             193

5۔ مجلسی آداب                                                                          196

6۔ فن تعمیر                                                                                199

7۔ الناس علی دین ملو کھم                                                              202

8۔ ہندوستان میں فارسی                                                                206

9۔ غیر ملکی اقتدار                                                                        209

10۔ کیا نظریئے کا احیاء ممکن ہے                                                  212

11۔ تاریخ نویسی                                                                        216

12 تاریخ کیسے پڑھانا چاہئے                                                           232

13۔ اسلامی تاریخ یا مسلمانوں کی تاریخ                                          235

14۔ مسلمان حکمران خاندان اور ان کا زوال                                   237

15۔ پاکستان میں تاریخ المیہ                                                         241

16۔ پاکستان میں تاریخ نویسی کے مسائل                                       247

17 ۔ پاکستان میں تاریخ کی تعلیم                                                     251

18 ۔ تاریخ اور سچائی                                                                    256

19۔ المیہ تعلیم                                                                           260

20۔ تاریخ اور مطالعہ پاکستان                                                       267

21 ۔ مسلم شناخت                                                                      271

22۔ بنیاد پرستی                                                                           283

23۔ جاگیردارانہ جمہوریت                                                           308

پیش لفظ

اس کتاب میں میرے وہ مضامین شامل ہیں جو میں نے ‘‘تاریخ اور آگہی’’ اور ‘‘تاریخ اور روشنی’’ میں شامل کئے تھے ۔ ان کی ترتیب بدل دی ہے ۔ اور نئے مضامین اس میں شامل کردیئے ہیں ۔ اب یہ نئی کتاب بر صغیر ہندوستان کی تاریخ میں مسلمانوں کے کردار اور اس دور میں جو اخلاقی و سماجی اقدار بنی تھیں ان پر روشنی ڈالتی ہے۔ اس کتاب کے ایک حصے میں ان مسائل پربحث کی گئی ہے کہ جو پاکستان میں تاریخ کے تعلیم کے سلسلے میں ہیں ۔ مقصد یہ ہے کہ قاری نہ صرف تاریخ کے بنیادی مفہوم سے آگاہ ہو ۔ بلکہ وہ مسلمان خاندانوں کی حکومت کے کردار کوبھی سمجھے اور ان سے جو نتائج نکلے ہیں ان سے بھی آگہی ہو۔

تصوف کے موضوع پر اس نئے ایڈیشن میں دو نئے مضامین اور شامل کردیئے ہیں ۔ جو اس موضوع کو سمجھنے میں مدد دیں گے۔

ان مضامین میں کوشش کی گئی ہے کہ تاریخ کو ایک نئے نقطہ نظر سے بیان کیا جائے تاکہ لوگوں کو تاریخی واقعات و حقائق کا نئے انداز میں تجزیہ کرنے کا موقع مل سکے ۔ میں اپنے طالب علموں اور دوستوں کا شکر گزار ہوں کہ جنہوں نے ان مضامین کو پڑھ کر اپنی رائے دی۔

ڈاکٹر مبارک علی

 لاہور 1994ء

 

مذہبی تعصب و رواداری کا تاریخی تجزیہ

ہندوستان میں مسلمانوں کی آمد کو تین ادوار میں تقسیم کیا جاسکتا ہے ۔ جنوبی ہندوستان کے ساحلی علاقوں میں بحیثیت تاجر، سندھ اور شمالی ہندوستان میں بحیثیت فاتح اور حکمران۔ جب مسلمان جنوبی ہندوستان کے ساحلی علاقوں میں تاجر کی حثییت سے آئے تو ان کا رویہ پر امن تھا وہ اس بات کے خواہش مند تھے کہ پر امن سر گرمیوں کے ذریعے زیادہ سے زیادہ تجارتی فوائد حاصل کریں ۔ ہندوستان کے ہندو حکمرانوں نے ان نووارد مسلمانوں کے ساتھ نہ صرف یہ کہ رواداری اور حسن سلوک کا رویہ اختیار کیا بلکہ انہیں ہر قسم کی سہولتیں دیں۔

سندھ میں عرب محمد بن قاسم کی سرکردگی میں آئے ۔ سندھ کی فتح کے بعد جب یہ سوال آیا ہے کہ یہاں غیر مسلموں کے ساتھ کیا سلوک کیا جائے تو حجاج بن یوسف نے علماء و فقہاء سےمشورے کے بعد عملی سیاست کے تقاضوں کو مد نظر رکھتے ہوئے یہ فیصلہ کیا کہ ہندوؤں کے ساتھ اہل کتاب جیسا سلوک کیا جائے یہ وہ اہم فیصلہ تھا جس پر آگے چل کر ہندوستان کے مسلمان حکمرانوں نے اپنی مذہبی پالیسی کی بنیاد رکھی ۔

شمالی ہندوستان میں مسلمانوں کی آمد خونریز جنگوں کا نتیجہ تھی انہوں نے تلوار کے زور سے یہاں کے حکمرانوں کو شکست دے کر اس علاقے پر قبضہ کیا تھا یہ ابتدائی مسلمان فاتحین ترک نسل سے تھے اور ان کی تربیت جنگ و جدل میں ہوئی تھی یہ جس علاقے سے آئے تھے وہاں قبائلی آپس میں لڑتے جھگڑتے رہتے تھے ۔ فن سپہ گری میں مہارت ان کی زندگی کی بقاء کے لیے ضروری تھی انہیں ہم دم پابہ رکلب اور جنگ کے لیے تیار رہنا پڑتا تھا ۔ اس لیے جنگ ان کے لیے ایک مشغلہ اور پیشہ تھا ۔ انہیں اپنی بہادری اور تہوری پر ناز تھا ۔ سپاہ گری کے علاوہ انہیں دوسرے پیشوں سے کم ہی لگاؤ تھا۔ ہندوستان میں نہیں راجپوت بہادری اور شجاعت میں ہم پلہ نظر آئے لیکن دوسری قومیں اورذاتیں جو صلح پسندی اور امن پسندی کی قائل تھی انہیں بزدل اور حقیر نظر آئیں ۔

یہ ترک فاتحین وسط ایشیاء ایران اور افغانستان میں باہم بر سرپیکار رہتے تھے ۔ حکمران خاندانوں کی تبدیلی، جانشینی کے مسائل اور حکمرانوں کے توسیع پسند عزائم ہمیشہ جنگ کی صورت میں ظاہر ہوتے تھے ۔ ان جنگوں میں مذہب کو کم استعمال کیا جاتا تھا ۔ لیکن جب ہندوستان پر حملے شروع ہوئے تو ان توسیع پسند عزائم کی بنیاد مذہب پر رکھی گئی، ہندوؤں اور کافروں سے یہ جنگیں جہاد کہلائیں ان میں مرنے والے شہید اور فاتح غازی کہلائے ۔ محمود غزنوی جب وسط ایشیا میں جنگیں لڑتا تو ان کی حیثیت سیاسی ہوتی ۔ جب وہ ہندوستان پر حملہ آور ہوتا تو ان کی جنگیں مذہبی ہوجاتی تھیں ۔ بابر پانی پت میں ابراہیم لودھی سے لڑتا ہوا خاموش رہتا ہے۔ لیکن جب کنواھ کے میدان میں رانا سانگا سےمقابلہ ہوتا ہے تو سپاہیوں میں مذہبی جذبات ابھارنے کے لیے نہ صرف شراب کے پیالے توڑ دیتا ہے بلکہ ایک پر زور تقریر میں سپاہیوں کو جوش دلاتےہوئے مرنے والے کو شہید اور زندہ بچنے والوں کو غازی ہونے کی خوشخبری دیتا ہے ۔ اور اس فتح کے بعد ‘‘غازی’’ کا خطاب اپنے نام کےساتھ شامل کرلیتا ہے۔

 

ترکوں او رمغلوں کی حکومت کا دار و مدار فوج پر تھا اور فوج کی اکثریت مسلمانو پر مشتمل تھی او ریہ وہ مسلمان تھے جو وسط ایشیاء ایران اور افغانستان سے مسلسل آتے رہتے تھے ۔ ہندوستان اور غیر ملکی فوجیوں کے لیے ایک خوشحال زندگی کی ضمانت دیتا تھا ہندوستان کے مسلمان حکمرانوں نے ان کی ہمیشہ ہمت افزائی کی ۔ کیونکہ یہ نہ صرف بہترین سپاہی تھے بلکہ مذہبی اعتبار سے بھی ایک تھے ۔ یہ حکومت کے تمام عہدوں پر فائز تھے اور رعیت سے جو بھی ٹیکس وصول ہوتا تھا اس میں برابر کے شریک تھے ۔ ان میں یہ احساس بڑا شدید تھا کہ وہ اس ملک میں فاتح کی حیثیت سے آئے ہیں، وہ بہادر اور شجاع ہیں اور مذہبی و نسلی اعتبار سے افضل و برتر ہیں ۔ ہندوایک مفتوح قوم ہے لہٰذا اس کا فرض ہے کہ وہ ان کی اطاعت و فرماں برداری کرے ۔ اس لیے ابتدائی دور میں مسلمان حکمران طبقے کا رویہ ہندوؤں کے ساتھ بڑا معاندانہ اور وہ ان پر اعتمار کرنے کو تیار نہیں تھے ۔

لیکن آہستہ آہستہ سیاسی مصلحتوں نے ان کی رویئے کو تبدیل کیا، کیونکہ ان کی اکثریت فوجی تھی اور ملک کے انتظام کو چلانے کے لیے فوج ہی نہیں منظم بھی چاہئیں تھے ۔ دفتروں کے لیے کلرک، ٹیکس جمع کرنے کے لیے عامل اور سکہ ڈھالنے کے لیے سنار وغیرہ    وغیرہ ۔ اس لیے انتظامی دھانچے میں ہندوؤں کو شریک کیا گیا لیکن وہ اس حیثیت میں نہیں تھے کہ حکومت کی پالیسی پر اثر انداز ہوسکتے ۔

ہندوؤں کے ساتھ پالیسی مرتب کرتے ہوئے دو نقطہ ہائے نظر سے سوچا گیا ایک سیاسی اور دوسرا مذہبی ۔ حکمران طبقے نے بہت جلد اس بات کو محسوس کرلیا کہ وہ اس ملک میں اقلیت میں ہیں اور ان کے لیے یہ ناممکن ہے کہ وہ اکثریت کو قوت و طاقت سے دبائے رکھیں اس لیے حکومت کو چلانے اور ٹیکس کی وصولیابی   کےلیے ضروری ہے کہ ان کے ساتھ بہتر سلوک کیا جائے ۔ اس لیے اس موقع پر حکومت اور شریعت کا تضاد پوری طرح ابھر کر سامنے آیا اور اس حقیقت کو خاموشی سے تسلیم کر لیا گیا کہ آئین جہانداری و جہاں بانی اور شریعت کے راستے جدا جدا ہیں اس لیے ہندوستان کے مسلمان حکمرانوں نے سیاست کو مذہب سے جدا رکھا اور عملی تقاضوں کے تحت حکومت کی ۔

یہ حکمران طبقہ جو عملی طور پر حکومت چلارہاتھا ا س نے حکومت کی بنیاد طاقتور فورج پر رکھی ۔ جس کا کام یہ تھا کہ نئے علاقوں کو فتح کرے ۔ بغاوتوں کو کچلے او ررعیت سے ٹیکس وصول کرے یہ طبقہ عملی طور پر مذہبی نہیں تھا ۔ فتوحات کے بعد مال غنیمت اور دولت نے ان میں زندگی کی آسائشوں سےلطف اندوز ہونے کا جذبہ پیدا کردیا تھا اس لیے وہ مذہب کو کبھی کبھی اپنے آسائشوں کے لیے ایک رکاوٹ سمجھتے تھے ، لیکن عام مسلمانوں کے مذہبی جذبے کی تسکین کی خاطر یہ ظاہری  طور پر شرعی قانون و احکام کی پیروی ضرور کرتے تھے ۔

حکمران طبقے کےنقطہ نظر سے بالکل مخالف نظریہ علماء و فقہاء کاتھا ان کی خواہش تھی کہ ہندوستان میں اسلامی حکومت شریعت کے اصولوں پر قائم ہو اور تمام غیر شرعی قوانین ختم کردیئے جائیں اس ضمن میں ہندوؤں کےساتھ ان کا رویہ شدید تعصب پر مبنی تھا یہ انہیں کافر و مشرک سمجھتے تھے اور ان کے ساتھ کسی قسم کا میل جول اور رابطہ پسند نہیں کرتےتھے ان کی خواہش تھی کہ وہ حکومت کے اقتدار میں شریک ہوں اور طاقت کےذریعے مسلم عوام میں صحیح اسلامی روح اور جذبہ پیدا کریں ۔ ان سے بھی مختلف نظریہ صوفیاء کا تھا جو مذہب کی ظاہری روایات سے بالاتر ہوکر انسانیت کی بنیاد پر سوچتے تھے ۔ ہندوستان میں بھگتی تحریک انہیں نظریات کی عملی شکل تھی جس نے ہندوستان کے عوام کو محبت و الفت میں باندھنے کی کوشش کی ۔

عوامی سطح پر ہندو اور مسلمان ثقافتی طور پر ایک دوسرے کے قریب آتے چلے گئے باہر سےآنےوالے شعوری اور غیر شعوری طور پر مجبور ہوئے کہ یہاں کی رسومات اور طور طریق اختیار کریں، اس ثقافتی ہم آہنگی کو ترقی دینے والے وہ ہندو بھی تھے جو مسلمان ہوئے تھے ۔ اسلام نے ان کے عقائد تو بدل دیئے لیکن ان کے ثقافتی اور سماجی ڈھانچے کو تبدیل نہیں کیا تھا ۔ ہمارے علماء اکثر ان مشرکانہ رسومات کی شکایت کرتے نظر آتے ہیں لیکن ان کی کوششوں کے باوجود یہ رسومات جو ہندوستان کے عوام میں سرایت کر چکی تھیں ختم نہیں ہوسکیں ۔ اس ثقافتی ہم آہنگی نےبہر حال مذہبی تفریق کو بہت کم کردیا تھا ۔

مغلوں کی آمد پر ہم ہندوستان کے ہندو اور مسلمان عوام میں حکمران طبقے میں رواداری کی فضا دیکھتے ہیں ۔ اس لیے مغل حملہ آور وں کو ہندو اور مسلمان دونوں نے غیر ملکی حملہ آور تصور کیا ۔ پانی پت اور کنوابھہ کی جنگ میں ہندو اور مسلمان دونوں برابر شریک تھے اس لیے مغلوں کی فتح نے اس بار ہندو اور مسلمان دونوں کو مفتوح قومیں بنا دیا اور مغلوں نے اپنی سلطنت کے استحکام  کے فوراً بعد اقتدار کیلتاً اپنے پاس رکھا اور انہوں نے نہ تو ہندوؤں پر اعتماد کیا او رنہ ہی ہندوستانی مسلمانوں پر ۔

بد قسمتی سے بابر نے ہندوستان کو بڑی سطحی نظر سے دیکھا اور اسے ایک غیر متمدن وغیر مہذب ملک سمجھا ۔ اسے ہندوستان میں نہ تو وسط ایشیاء کی مانند باغات نظر آئے نہ ہی نہریں اور پھل پھول ۔ مرنے کے بعد اس کی خواہش کے مطابق اسے کابل میں دفنایا گیا ۔ باہر کے جانشینوں میں اکبر پہلا ہندوستانی تھا جس کا نقطہ نظر ملکی و قومی تھا ۔

ہندوستان میں مغلیہ سلطنت کے زوال تک دو رجحان باہم متصادم رہے ایک رجحان یہ تھا کہ ہندو اور مسلمان باہم اعتماد اور اشتراک سے رہیں اور دوسرا رجحان یہ تھا کہ ہندوستان میں مسلمانوں کی انفرادی حیثیت کو برقرار رکھا جائے اور اس لیے ہندوؤں سے کسی قسم کا اشتراک نہ کیا جائے ۔

مذہبی بنیاد پر دونوں قوموں میں بعد برقرار رکھنے کی ہر دور میں کوشش کی گئی جس کا نتیجہ پیچیدہ صورت میں ظاہر ہوا۔ مسلمان جو ہندوستان میں اقلیت تھے خود کو فوجی طاقت اور حکومت کے باوجود غیر محفوظ سمجھتے تھے ۔ خود اعتمادی کی کمی نے ان میں ہندو اکثریت کا خوف غیر شعوری طور پر پیداکیا اس کا نتیجہ یہ ہوا کہ انہو ں نے خود کو ذہنی طور پر مکمل ہندوستانی نہیں سمجھا اور خود کو وسط ایشیاء کی تہذیب و ثقافت سے منسلک رکھا ۔ فارسی زبان پورے اسلامی دورمیں حکمران طبقے کی زبان رہی ۔ ہماری شاعری اور ادب غیر ملکی اثرات کا حامل رہا ۔ہم اپنی تخلیقات کی داد و تحسین ایران سے حاصل کرنے کے خواہش مند رہے۔ مذہبی حیثیت سے بھی ہم خود کو اسلامی دنیا سے منسلک کئے رہے اور اپنی اقلیتی اساس یا اپنے اقلیتی احساس کو عالم اسلام کی اکثریت میں ضم کرکے خود کو ہندوستان میں محفوظ سمجھتے رہے ۔ ہر مصیبت کے وقت ہماری نگاہیں وسط ایشیاء ایران اور افغانستان کی طرف اٹھتی تھیں اس کا نتیجہ یہ ہوا کہ ہم نے خود کو کبھی مکمل ہندوستانی نہیں بنایا ہم نے اپنی جڑیں ہندوستان سے باہر رکھیں اپنے پڑوسی پر اعتماد نہیں کیا اور دور کے لوگوں پر بھروسہ کیا جو قریب تھے ان سے نفرت کی اور جو دور تھے ان سے تعلقات استوار کرنے کی ناکام کوشش کی : ۔(1)

عربوں نے سندھ فتح کرنے کے بعد یہاں غیر مسلموں کے ساتھ وہی پالیسی اختیار کی جو اسلام میں اہل کتاب کے لیے ہے یعنی ان سے جزیہ لیا جائے اور انہیں مکمل مذہبی آزادی دی جائے ۔ اہل عرب یہی پالیسی ایران فتح کرنے کے بعد اختیار کرچکے تھے اور علماء و فقہاء نےاس مسئلے پر کوئی زیادہ اختلاف نہیں کیا تھا ۔ کیونکہ حقیقت یہ تھی کہ نہ تو ایران کے تمام مجوسیوں او رنہ سندھ کے تمام ہندوؤں کومسلمان بنایا جاسکتا تھا اورنہ انکار کی صورت میں کل آبادی کو قتل کیا جاسکتا تھا او رنہ قتل عام کی صورت میں خالی مقبوضات سے فائدہ اٹھایا جاسکتا تھا ۔ اس لیے سیاست کے عملی تقاضوں اور اقتصادی ضروریات کے تحت حجاج بن یوسف نے محمد بن قاسم کو ایک خط کےذریعے سندھ میں غیر مسلموں کے ساتھ حکومت کی پالیسی کی وضاحت کی:

چونکہ یہ لوگ پورے طور پر مطیع اور فرماں بردار ہوچکے ہیں اور انہوں نے پایہ تخت کاجزیہ وغیرہ لینا اپنے اوپر واجب ٹھہرالیا ہے اور چو نکہ جزیہ اور مالیہ کےعلاوہ ان پر کوئی پابندی عائد نہیں ہوسکتی اس لیے انہیں اس امر کی اجازت دی جاتی ہے کہ وہ اپنی مورتیوں کی پوجا کریں ۔ علاوہ ازیں کسی کو بھی اپنی مذہبی رسومات ادا کرنے سے روکا نہ جائے تاکہ یہ لوگ اپنے گھر وں میں امن کی زندگی بسر کریں ۔ (1)

شمالی ہندوستان میں اسلامی حکومت کے قیام کے بعد یہ سوالات پیدا ہوئے کہ ہندوؤں او رمسلمانوں کے تعلقات کی نوعیت کیا ہو؟ او ریہ کہ حکومت اپنی ہندو رعیت کے ساتھ کیا سلوک کرے؟ ان سوالات کا جواب دو مختلف طبقوں نے دیا ایک علماء کے طبقے نے اور دوسرے حکمران طبقے نے ۔ دونو ں طبقوں کاانداز فکر مختلف تھا علماء ان مسائل کا حل خالص شریعت کی روشنی میں دیکھتے تھے ۔ جب کہ حکمران عملی سیاست کو مد نظر رکھتے ہوئے ان سوالوں کاحل ڈھونڈ ناچاہتے تھے ۔

الشمش کے زمانے میں یہ مسئلہ اس وقت شدت سے ابھر ا جبکہ وسط ایشیاء سے منگولوں کی تباہ کاریوں کےنیتجے میں وہاں سے علماء و فقہاء کی کثیر تعداد ہندوستان میں پناہ گزیں ہوکر آئی ۔ انہوں نے اپنی آمد کےبعد حکومت پر زور دیا کہ وہ اس پالیسی کو تبدیل کرے جس کی ابتداء سندھ میں محمد بن قاسم نے کی تھی ۔ انہوں نے یہ موقف اختیار کیا کہ ہندوؤں کے پاس چونکہ کوئی ایسی کتاب نہیں ہے اس لیے یہ ذمیوں کے زمرے میں نہیں آتے ضیاءالدین برنی جو اس عہد کامورخ ہے نے اپنی کتاب ‘‘ صحیفہ نعت محمدی صلی اللہ علیہ وسلم’’ میں اس بحث کی پوری تفصیل دی ہے۔

چنانچہ بڑےبڑے علماء نےآپس میں اس مسئلہ پر بہت زیادہ بحث کی کہ آیا ہندوؤں کے ساتھ ام القنل و ام الاسلام ( ‘‘ یا’’ کے معنوں میں عربی میں ام مستعمل ہے یا لفظ ‘‘او’’) ( یا قتل ، اسلام) کاطریقہ اختیار کیا جائے یا اس بات پر راضی ہوا جائے کہ وہ خراج اسی طرح دیتے رہیں اور پہلے کی طرح امیرانہ اور ٹھاٹھ کی زندگی گزارتے بت پرستی کرتے اور کفر و شرک کے تمام احکام کو بغیر کسی خوف و ہراس کے باقاعدگی کے ساتھ بجالاتے رہیں ۔ اور ان کی عزت و حرمت کو برقرار رہنےدیا جائے؟ ان علماء نے بڑی بحث کی اور ایک دوسرے سے کہا ‘سرکار دو عالم صلی اللہ علیہ وسلم کےسب سے بڑے دشمن ہندو ہیں۔ اس لیے ان کےبارے میں سرور کونین صلعم کاکیا حکم ہے ؟ آیا انہیں قتل کیا جائے، غلام بنایا جائے اور ذلیل و خوار و رسوا کرکے ان سے مال چھیناجائے؟ .......ہندو خواہ مطیع ہو یا باغی ہر حالت میں سردار دو جہاں صلعم کے بڑے دشمن ہیں صلاح یہ ٹھہری کہ پہلے بادشاہ سے ان دشمنوں کےبارے میں بحث کی جائے ۔ چنانچہ اس سلسلے میں اپنے وقت کے چند معتبر ترین علماء سلطان شمس الدین کی خدمت میں حاضر ہوئے ۔ اور اس کےسامنے انہوں نے اس مسئلہ مذکور بڑی شرط و بسط کے ساتھ بیان کیا اور اس سے درخواست کی کہ وہ ہندوؤں کے ساتھ ‘‘امام القنل و امالا سلام’’ کا طریقہ اختیار کیا جائے ۔ کیونکہ دین کی مصلحت اسی میں ہے کہ ان لوگوں سے نہ تو خراج لیا جائے اورنہ جزیئے پر راضی ہوا جائے بادشاہ نے ان کی بات آرام سے سنی اور وزیر سےکہا کہ وہ علماء کو جواب دے اور جو کچھ بھی عقل کے مطابق بات بنتی ہو انہیں بتائے ۔ نظام الملک جنیدی نے علماء کی تجویز کو بخوبی سمجھ کر بادشاہ سے کہا کہ ‘‘اس میں شک نہیں کہ ہندو کے ساتھ اما القنل و اما الاسلام’ والا طریقہ استعمال کرناچاہئے کیونکہ یہ لوگ آنحضرت صلعم کے سب سےبڑے دشمن ہیں نہ تو ان کا کوئی ذمہ ہے نہ کوئی عہد او رنہ آسمان سے اتری ہوئی کتاب او رنہ کوئی پیغمبر ہی ہندوستان میں معبوث ہوا ہے ۔ لیکن اس وقت جب کہ ہندوستان پر ہمارا تازہ قبضہ ہوا ہے اور پھر ہندوؤں کی تعداد بھی اتنی ہے کہ ان کے مقابلے میں مسلمان آٹے میں نمک کے برابر ہیں ۔ یہ بات مناسب نہیں ۔ اس لیے اگر ہم نے اپنے بارے میں مذکورہ رویہ اختیار کیا تو کہیں ایسا نہ نہ کہ وہ متحد ہوکر سرکشی پر اتر آئیں او رہم تھوڑی طاقت کےساتھ ان کامقابلہ نہ کرسکیں اور یہ بات ہر طرف فتنہ فساد پھیلنے کا سبب بنے ۔ ہاں چند برس بیت جائیں دارالخلافے اور تمام خطوں میں مسلمان آباد ہوجائیں اور بہت زیادہ لشکر بھی مہیا ہوجائے تو پھر البتہ ہم ہندوؤں کے ساتھ ‘‘ اماالقنل و اما الاسلام ’’ والا طریقہ اختیار کرسکتے ہیں ۔ علماء نے جب وزیر کا یہ مصلحت آمیز جواب سنا تو بادشاہ سےکہا کہ ‘‘ اگر آ پ ہندوؤں کے قتل کا حکم صادر نہیں کرتے تو آپ کسی بھی صورت میں انہیں اپنے دربار میں عزت نہ بخشیں او رنہ انہیں اس امر کی اجازت ہی دیں کہ وہ مسلمان محلوں میں سکونت پذیر ہوں اور اس بات کو ہر گز روا نہ رکھیں کہ دارالخلافہ او رمسلمانوں کے علاقوں اور قصبوں میں کفر و بت پرستی کے احکام جاری ہوں۔’’ بادشاہ او روزیر نے اس وقت علماء کی تین باتیں مان لیں۔ چونکہ اس نے شروع شروع میں قتل ہنود کا حکم نہ دیا تھا ۔ اس لیے نیتجے کے طو رپر مسلمانوں اور دین داروں میں کفر و شرک اور بت پرستی جڑ پکڑ گئی۔(2)

علماء اور فقہاء کے اس رجحان کو ضیاء الدین برنی نے اپنی کتاب ‘‘فتاوائے جہانداری میں مزید واضح کیا ہے۔

اگر بادشاہان اسلام اتنی قوت و طاقت او رشوکت ہوتے ہوئے جو دنیا میں مسلمانوں کو حاصل ہے اس بات کو روا رکھیں کہ ان کے دارالسلطنت میں اور مسلمانوں کے شہر میں کفر کی رسمیں پھیلیں او رکھلم کھلا بت پرستی کی جائے ........ او رچند تتکہ جزیہ دے کر کفر کی تمام رسومات رائج رکھیں اور دین باطل کی کتابوں کا سبق دیں اور ان کے احکام کو پھیلائیں تو پھر دین حق دوسرے مذہیوں پر غالب کس طرح آئے گا۔ (3)

الشمش کے زمانے میں سیدنورالدین مبارک غزنوی ایک بزرگ تھے انہوں نے ہندوستان میں اسلامی حکومت پر کڑی تنقید کی او رمسلمان بادشاہوں کے فرائض بیان کرتے ہوئے کہا کہ :

اگر کفر و شرک کی مضبوطی او رکفار و مشرکین کی کثرت کی وجہ سے ان کا کلیۃ استیصال نہ کرسکیں تو کم از کم ( اتنا ضرور کریں کہ)اسلام او رحفاظت دین کی خاطر ہندوؤں ، مشرکوں او ربت پرستوں کی جو خدا او ررسول کے شدید ترین دشمن ہیں ۔ و تذلیل اور فضیحت و رسوائی میں کوشش کریں ۔ بادشاہوں کی حمایت دین کی ایک علامت یہ ہے کہ جب ان کی نظر ہندو پر پڑے تو ان کا چہرہ غصہ سے سرخ ہوجائے اور ان کی خواہش یہ ہو کہ ان لوگوں کو زندہ رکھا جائے او ربرہمنوں کو جو کفر کے امام ہیں اور جن کی وجہ سے کفر و شرک کی اشاعت ہوتی ہے اور کفر کے احکام نافذ ہوتےہیں ختم کردیں اسلام سے سچے دین کی خاطر ایک کافر او رمشرک کے لیے یہ بھی روا نہ رکھیں کہ وہ عزت کی زندگی بسر کرے ....... یا کوئی مشرک اوربت پرست کسی فرقے (قوم) یا گرہ یا کسی ولایت واقطاع پر حکومت کرے یا خدا اور رسول کے دشمنوں میں سے ایک بھی مسلمان بادشاہوں کے قہر و جلال کے اثر سے عیش و آرام میں رہے ۔ یا بے فکری کے بستر پر پاؤں پھیلا کر سوسکے ۔ (4)

نورالدین مبارک غزنوی نےاس کے علاوہ بادشاہ کو یہ بھی نصیحت کی کہ وہ ملک سے فلسفیوں کااخراج کردے بددین و بد عقیدہ اشخاص کو حکومت میں داخل نہ ہونے دے اور ملک کے عہد سے صرف دیندار اور خدا ترس لوگوں کو دے۔ (5)

یہ رجحان نہ صرف مذہبی تعصب کی غمازی کرتا ہے بلکہ اس کے پس منظر میں سیاسی و اقتصادی مفادات بھی نظر آتے ہیں یعنی اقتدار میں ایک جماعت کے علاوہ کسی اور کو قطعی شریک نہ کیا جائے دنیاوی لوازمات و آسائشوں کو صرف ایک طبقے کے لیے مخصوص کیا جائے اور دوسروں کو اس سے قطعی محروم رکھا جائے خصوصیت سے علماء و فقہا ء کے طبقے کی خواہش تھی کہ انہیں نہ صرف یہ کہ حکومت میں شامل کیا جائے بلکہ عملاً حکومت چلانے کی ذمہ داری بھی انہیں دی جائے ۔

اقتدار کی اس کشمکش میں بادشاہ او رامراء نے خاموشی سے علماء کے اثر کو مصلحت آمیز پالیسی کے دریعہ کم کرنے کی کوشش کی مثلاً دربار اور دوسرے موقعوں پر ان کے ساتھ احترام سے پیش آنا ان کے وظائف مقرر کرنامذہبی معاملات میں ان کی رائے پر عمل کرنا ان کے ساتھ کھانا کھانا درباری رسومات سے انہیں بری کرنا وغیرہ وغیرہ لیکن عملاً انہیں سیاست و اقتدار میں شریک نہیں کیا گیا ۔

URL: http://newageislam.com/books-and-documents/dr-mubarak-ali/the-irony-of-history--part-1---(المیہ-تاریخ--(-قسط-۔1/d/103476

 




TOTAL COMMENTS:-    


Compose Your Comments here:
Name
Email (Not to be published)
Comments
Fill the text
 
Disclaimer: The opinions expressed in the articles and comments are the opinions of the authors and do not necessarily reflect that of NewAgeIslam.com.

Content