certifired_img

Books and Documents

Urdu Section (04 Mar 2019 NewAgeIslam.Com)


Human Values and Good Manners Mentioned in the Quran – Part 2 قرآن کریم میں انسانی اقدار اور اچھے اخلاق و کردار کا ذکر


کنیز فاطمہ ، نیو ایج اسلام

6 فروری 2019

یہ اس  تحریری سلسلے کی دوسری کڑی ہے جس میں قرآن میں مذکور انسانی اقدار اور اچھے اخلاق و کردار کا ذکر کیا گیا ہے۔ ہم ایمان والوں  کو چاہئے کہ ان قیمتی اقدار اور اچھے اخلاق و کردار  کو اپنے پلے باندھ لیں تاکہ اپنی زندگی کے روحانی سفر میں ہم ان سے رہنمائی حاصل کر سکیں اور ایک اچھا انسان بنیں ۔

پہلے حصہ میں ہم نے پندرہ انسانی اقدار اور اچھے اخلاقی کردار  کا مطالعہ کیا۔ اب ہم قرآن کریم میں مذکور ایسے ہی مزید پندرہ اقدار کا مطالعہ کرتے ہیں۔

16۔ رشوت خوری میں ملوث نہ ہوں

" اور آپس میں ایک دوسرے کا مال ناحق نہ کھاؤ اور نہ حاکموں کے پاس ان کا مقدمہ اس لئے پہنچاؤ کہ لوگوں کا کچھ مال ناجائز طور پر کھاؤ جان بوجھ کر،"(2:188)

17۔ وعدہ خلافی نہ کریں

" کچھ اصل نیکی یہ نہیں کہ منہ مشرق یا مغرب کی طرف کرو ہاں اصلی نیکی یہ کہ ایمان لائے اللہ اور قیامت اور فرشتوں اور کتاب اور پیغمبروں پر اور اللہ کی محبت میں اپنا عزیز مال دے رشتہ داروں اور یتیموں اور مسکینوں اور راہ گیر اور سائلوں کو اور گردنیں چھوڑانے میں اور نماز قائم رکھے اور زکوٰة دے اور اپنا قول پورا کرنے والے جب عہد کریں اور صبر والے مصیبت اور سختی میں اور جہاد کے وقت یہی ہیں جنہوں نے اپنی بات سچی کی اور یہی پرہیزگار ہیں۔ "(2:177)

18۔ امانت میں خیانت نہ کریں

"اور اگر تم سفر میں ہو اور لکھنے والا نہ پاؤ تو گِرو (رہن) ہو قبضہ میں دیا ہوا اور اگر تم ایک کو دوسرے پر اطمینان ہو تو وہ جسے اس نے امین سمجھا تھا اپنی امانت ادا کردے اور اللہ سے ڈرے جو اس کا رب ہے اور گواہی نہ چھپاؤ اور جو گواہی چھپائے گا تو اندر سے اسکا دل گنہگار ہے اور اللہ تمہارے کاموں کو جانتا ہے۔ "(2:283)

19۔ باطل کے ساتھ حق کو نہ ملائیں

"اور حق سے باطل کو نہ ملاؤ اور دیدہ و دانستہ حق نہ چھپاؤ ۔" (2:42)

20۔ لوگوں کے درمیان انصاف کے ساتھ فیصلہ کریں

"بیشک اللہ تمہیں حکم دیتا ہے کہ امانتیں جن کی ہیں انہیں سپرد کرو اور یہ کہ جب تم لوگوں میں فیصلہ کرو تو انصاف کے ساتھ فیصلہ کرو بیشک اللہ تمہیں کیا ہی خوب نصیحت فرماتا ہے، بیشک اللہ سنتا دیکھتا ہے"(4:58)

21۔ انصاف کے لئے کمر کس لیں

"اے ایمان والو! انصاف پر خوب قائم ہوجاؤ اللہ کے لئے گواہی دیتے چاہے اس میں تمہارا اپنا نقصان ہو یا ماں باپ کا یا رشتہ داروں کا جس پر گواہی دو وہ غنی ہو یا فقیر ہو بہرحال اللہ کو اس کا سب سے زیادہ اختیار ہے تو خواہش کے پیچھے نہ جاؤ کہ حق سے الگ پڑو اگر تم ہیر پھیر کرو یا منہ پھیرو تو اللہ کو تمہارے کاموں کی خبر ہے۔ (4:135)

22۔ فوت ہونے والے کی دولت اس کے خاندان کے افراد میں تقسیم کی جائے

"مردوں کے لئے حصہ ہے اس میں سے جو چھوڑ گئے ماں باپ اور قرابت والے اور عورتوں کے لئے حصہ ہے اس میں سے جو چھوڑ گئے ماں باپ اور قرابت والے ترکہ تھوڑا ہو یا بہت، حصہ ہے اندازہ باندھا ہوا۔" (4:7)

23۔ عورتوں کا بھی وراثت میں حق ہے

"......اور عورتوں کے لئے حصہ ہے اس میں سے جو چھوڑ گئے ماں باپ اور قرابت والے ترکہ تھوڑا ہو یا بہت، حصہ ہے اندازہ باندھا ہوا ۔" (4:7)

24۔ یتیموں کی دولت غصب نہ کریں

"وہ جو یتیموں کا مال ناحق کھاتے ہیں وہ تو اپنے پیٹ میں نری آ گ بھرتے ہیں اور کوئی دم جاتا ہے کہ بھڑتے دھڑے (آتش کدے) میں جائیں گے۔ "(4:10)

25۔ یتیموں کی حفاظت کریں

"اور ا ٓ خرت کے کام سوچ کر کرو اور تم سے یتیموں کا مسئلہ پوچھتے ہیں تم فرماؤ ان کا بھلا کرنا بہتر ہے اور اگر اپنا ان کا خرچ ملالو تو وہ تمہارے بھائی ہیں اور خدا خوب جانتا ہے بگاڑنے والے کو سنوارنے والے سے، اور اللہ چاہتا ہے تو تمہیں مشقت میں ڈالتا، بیشک اللہ زبردست حکمت والا ہے۔ "(2:220)

26۔ ایک دوسرے کی دولت ناحق نہ کھائیں

"اے ایمان والو! آپس میں ایک دوسرے کے مال ناحق نہ کھاؤ مگر یہ کہ کوئی سودا تمہاری باہمی رضامندی کا ہو اور اپنی جانیں قتل نہ کرو بیشک اللہ تم پر مہربان ہے۔"(4:29)

27۔ لوگوں کے درمیان صلح کی کوشش کریں

" اور اگر مسلمانوں کے دو گروہ آپس میں لڑیں تو ان میں صلح کراؤ پھر اگر ایک دوسرے پر زیادتی کرے تو اس زیادتی والے سے لڑو یہاں تک کہ وہ اللہ کے حکم کی طرف پلٹ آئے، پھر اگر پلٹ آئے تو انصاف کے ساتھ ان میں اصلاح کردو اور عدل کرو، بیشک عدل والے اللہ کو پیارے ہیں۔ "(49:9)

28۔ گمان سے بچیں

"اے ایمان والو بہت گمانوں سے بچو بیشک کوئی گمان گناہ ہوجاتا ہے اور عیب نہ ڈھونڈھو اور ایک دوسرے کی غیبت نہ کرو کیا تم میں کوئی پسند رکھے گا کہ اپنے مرے بھائی کا گوشت کھائے تو یہ تمہیں گوارا نہ ہوگا اور اللہ سے ڈرو بیشک اللہ بہت توبہ قبول کرنے والا مہربان ہے’’ (49:12)

29۔ عیب جوئی یا چغل خوری نہ کریں

"اے ایمان والو بہت گمانوں سے بچو بیشک کوئی گمان گناہ ہوجاتا ہے اور عیب نہ ڈھونڈھو اور ایک دوسرے کی غیبت نہ کرو کیا تم میں کوئی پسند رکھے گا کہ اپنے مرے بھائی کا گوشت کھائے تو یہ تمہیں گوارا نہ ہوگا اور اللہ سے ڈرو بیشک اللہ بہت توبہ قبول کرنے والا مہربان ہے۔ "(49:12)

30۔ صدقات و خیرات میں اپنی دولت خرچ کریں

"اللہ اور اس کے رسول پر ایمان لاؤ اور اس کی راہ میں کچھ وہ خرچ کرو جس میں تمہیں اَوروں کا جانشین کیا تو جو تم میں ایمان لائے اور اس کی راہ میں خرچ کیا ان کے لیے بڑا ثواب ہے۔ "(57:7) ترجمہ؛ کنزالایمان

(جاری)

URL for English article: http://www.newageislam.com/islamic-ideology/kaniz-fatma,-new-age-islam/human-values-and-good-manners-mentioned-in-the-quran-–-part-2/d/117666

URL: http://www.newageislam.com/urdu-section/kaniz-fatma,-new-age-islam/human-values-and-good-manners-mentioned-in-the-quran-–-part-2--قرآن-کریم-میں-انسانی-اقدار-اور-اچھے-اخلاق-و-کردار-کا-ذکر/d/117907

New Age Islam, Islam Online, Islamic Website, African Muslim News, Arab World News, South Asia News, Indian Muslim News, World Muslim News, Women in Islam, Islamic Feminism, Arab Women, Women In Arab, Islamphobia in America, Muslim Women in West, Islam Women and Feminism





TOTAL COMMENTS:-    


Compose Your Comments here:
Name
Email (Not to be published)
Comments
Fill the text
 
Disclaimer: The opinions expressed in the articles and comments are the opinions of the authors and do not necessarily reflect that of NewAgeIslam.com.

Content