certifired_img

Books and Documents

Islamic Ideology (21 Oct 2017 NewAgeIslam.Com)


Deoband’s Fresh Fatwa: Why Do the Islamic Theologians (Muftis) In India Lack the Logical Progression in Their Socio-Religious Thoughts?



By Ghulam Rasool Dehlvi, New Age Islam

21 October 2017

Not long ago, Darul Uloom Deoband issued an edict (fatwa) declaring its ideological offshoot—Tablighi Jama’at—as "misguided", “preacher of perverted views" and “misinterpreter of Quran and Hadith”. It has even banned the Jama’at from conducting its Tablighi activities inside campus of the seminary as reported in the Urdu dailies on August 10. Thus, the Deoband seminary had tried to convey a message that it was now endeavouring to progress on the constructive lines. But to our utter surprise, the seminary’s authorities—Ulema and muftis (those who issue the edict) — seem to have no different opinions. With every new bizarre fatwa they pass, they just show that they harbour the same retrogressive ideas and thoughts that are commonly preached by the Tablighi proselytes. 

The Ulema of Deoband have long been issuing retrogressive Fatwas and irrelevant theological edicts that make a mockery of the daily Muslim life. Yet again, they have come up with an irrelevant fatwa forbidding Muslim men and women from posting their or their families' photographs on social media sites. The fatwa has been issued on Wednesday by the Deoband seminary in Saharanpur after a man approached it recently asking if posting photos on social media sites was allowed in the Islamic Shariah.

In this fatwa issued, one of the chief Islamic clerics at Deoband, Mufti Tariq Qasmi, stated that posting photos of one’s self or family on social media sites such as Facebook, WhatsApp is not allowed in Islam. He argues: “when clicking pictures unnecessarily is not allowed in Islam, how posting photos on social media can be permitted”.

In fact, such Fatwas relying on the medieval and misconstrued texts of the Islamic theology put the present-day Muslims to collective disgrace and cynicism. They actually cause greater defamation to Islam than the Islamophobic conspiracies bred by the outside vested interests. And this is also one of the reasons behind the stereotyped image of the Muslims in the wider world.

Earlier, the Deoband’s Darul Ifta (the fatwa-issuing department) decreed that women should be prohibited from going to the beauty parlours, plucking, trimming, shaping their eyebrows and cutting hair. The Ulema of Deoband termed all these activities as “against the tenets of Islam”. Head of the Darul Ifta, Mufti Arshad Faruqi stated that grooming the eyebrow to look beautiful is “against the tenets of Islam”. He said in his fatwa: "They (women) can trim the eyebrows if they have grown too long but doing it for the purpose of looking beautiful is un-Islamic. The same is expected from men too". Surprisingly, many other Deoband clerics in Saharanpur endorsed the fatwa. Maulana Lutfur Rehman Sadiq Qasmi said: "Women visiting beauty parlours are sinful. This fatwa makes it clear that they shouldn't do anything externally to look beautiful", as reported in The Telegraph.

One wonders if the Ulema of Deoband are still stuck in the medieval age and are completely out of sync with the modern scientific advancements. While other religious communities in the world are grappling with vital social, cultural and geopolitical issues, the medieval-minded Ulema and ‘puritanical’ Islamic clergy continue to woo the Muslims in India through the theological polemics which are patently out of date. Their regressive clerical decrees only reinforce the deeply entrenched perception that Muslims are not open to progressive and fresh thoughts.

Apparently, the Deoband’s Darul Ifta has been on the lookout for the media limelight through the display of its absurd Fatwas.  In the past years, it was particularly in the media limelight as it passed a fatwa against the chanting of the nationalist slogans ‘Jan Gan Man’, ‘Vande Matram’, and 'Bharat Mata Ki Jai', which turned a politically charged issue at that time.

Given the unceasing fatwa trend in the clerical circle, it is important to trace the history of fatwa culture in the Indian subcontinent. An objective debate on the institution of Fatwa and muftis’ position in Islam is highly required.

While the Qur’an always exhorts reasoning and questioning over blind faith in the man-made theology, the ordinary practitioners of Islam do need proper guidance and consultation in matters of the religion. But at the same time, Indian Muslims need to ask the crucial question as to why India’s age-old, traditional spiritual Islam is losing its essence to the trail of Saudi-Wahhabi fatwa culture. It was in Saudi Arabia where a permanent committee for fatwa-issuing was launched, for the first time, by the kingdom’s clerics to issue the Islamic decrees and to advise the Saudi kings on religious matters. Nearly 21 Saudi Shaikhs and paid muftis were appointed, on lucrative salaries, by the theocratic government of the then King Fahd. According to a research work by Sadaqat Qadri, the Saudi muftis exported their views to as many as 80 percent of the non-Arab Muslims across the globe. Qadri writes in his book “Heaven on Earth: A Journey Through Shari'a Law from the Deserts of Ancient Arabia”: “They (Saudi clergy) reintroduced the advice of trained scholars to many Muslims who had turned to do-it-yourself religious interpretation, but also changed the nature of fatwa advice giving, which had traditionally been local and so relatively confidential and conditioned by customs.”

Ironically, there is no dearth of “online fatwa” services and websites today that transmit the Saudi Fatwas to the non-Arab Muslim societies, particularly in the Indian subcontinent, regardless of their local contexts, customs, cultures and national ethos. Such pronouncements can be stumbled upon the online fatwa portals such as IslamQA.info, fatwa-online.com, and AskImam.org and many more. Scores of Indian Maulvis are treading the path of the Saudi-Wahhabi muftis in running the online fatwa factories. This is a daunting challenge that Indian Muslims face in the wake of every fatwa of this nature. Therefore, we need to directly challenge the ideological infringement on our free religious rights that our Constitution confers upon all Indians. The right to profess and practice one’s religion with his/her Indian social and cultural ethos — which is the essence of  Article 25 in the Indian Constitution — is basically the point to be discussed and safeguarded in the Muslim community in India. The misplaced clergy in the Indian Muslim society like the muftis of Deoband are antithetical to this universal right. They are trying to denying it not only to the adherents of other religions living in the Muslim countries, but also to the Indian Muslims practicing Islam well-embedded in the country’s composite culture. The notorious Islamist televangelists and muftis in India often give unsolicited "Fatwas" in the name of “appeal” to the Indian Muslim masses. Remember how the 46 Maulvis of Assam signed a pamphlet, which they claimed was not an Islamic jurisprudential decree (fatwa) but only an appeal, against the young Muslim singer Nahid Afrin. Even if they considered it an ‘ethical appeal’, and not a fatwa, how could the 46 Maulvis be justified in invoking the “wrath of Allah” on Afrin and warning against that “her parents will not enter paradise” because of her "sinful act"?

At this critical juncture, the well-established Islamic jurists (Faqihs) who have nuanced understanding of the Muslim religious affairs require an honest introspection. They cannot overlook the deplorable threat of the fanatic Fatwas that looms large in India scaring a sizable section of the Muslim community. But the fact that most of the Islamic scholars don’t reflect on this deeper ideological crisis in the community is more appalling. Without brainstorming the effective ways to end this theological dilemma, the Muslim community’s socio-cultural development and integrity will remain merely a mirage. This situation calls for the Islamic clergy's serious engagement in broadening a theological worldview incorporating the progressive Islamic traditions in full harmony with the established scientific advancements. Regrettably, while other faith leaders have opened their doors to fresh scientific ideas, Muslim theologians are still lacking the logical progression in their socio-religious thoughts.

Ghulam Rasool Dehlvi is a scholar of classical Islamic studies, cultural analyst, researcher in media and communication studies and regular columnist with www.NewAgeIslam.com

URL: http://www.newageislam.com/islamic-ideology/ghulam-rasool-dehlvi,-new-age-islam/deoband’s-fresh-fatwa--why-do-the-islamic-theologians-(muftis)-in-india-lack-the-logical-progression-in-their-socio-religious-thoughts?/d/112971

New Age IslamIslam OnlineIslamic WebsiteAfrican Muslim NewsArab World NewsSouth Asia NewsIndian Muslim NewsWorld Muslim NewsWomen in IslamIslamic FeminismArab WomenWomen In ArabIslamophobia in AmericaMuslim Women in WestIslam Women and Feminism

 




TOTAL COMMENTS:-   5


  • دارالعلوم ديوبند کا آن لائن دارالافتاء اور جدید تعلیم
     محمد علم اللہ 

    مدارس کے حوالے سے گزشتہ دنوں جو بحث چھڑی، اس کو صحت مند انداز ميں آگے بڑھانے کی ضرورت ہے۔ ميں آج مدارس کے نظام کی خاميوں پر کچھ کہنے کے بجائے اس سوال کا جائزہ لينا چاہتا ہوں، کہ کيا مدارس کے رویے سے مسلمان پيچھے جا رہے ہيں؟ اس سلسلہ ميں دارالعلوم ديوبند کے کچھ فتاوی ديکھیے اور بتائيے کہ مسلمانوں کی رہنمائی کے دعوے داروں کا عمل مسلمانوں کو کس طرف دھکيل رہا ہے؟ دارالعلوم کے حوالہ سے اس وضاحت کی ضرورت نہيں ہے، کہ يہ ادارہ برصغير کے دسيوں لاکھوں مسلمانوں اور ہزاروں مدارس کا منبع ہدايت ہے۔ ميں دارالعلوم ديوبند کے آن لائن دارالافتاء کے کچھ فتاوے يہاں درج کر رہا ہوں۔ حوالے موجود ہيں جو اصحاب چاہيں وہ تصديق کر سکتے ہيں۔

    دارالافتاء سے سوال نمبر 37852 میں ايک خاتون نے سوال کيا کہ ميں میڈیکل کالج میں پڑھتی ہوں اور الحمد للہ شرعی پردہ بھی کرتی ہوں، میڈیکل کالج کے ماحول کے برعکس میں کسی نامحرم سے بلا ضرورت بات نہیں کرتی، لیکن جب کچھ سمجھ نہیں آتا تو ڈاکٹروں سے پوچھ لیتی ہوں اور میری کوشش ہوتی ہے کہ آواز میں نرمی نہ ہو۔ اس کے علاوہ اگر کبھی پوری کلاس کے سامنے پریزنٹینش (پڑھائی سے متعلق کوئی چیز پیش کرنا) ہوتی ہے تو گروپ کی دوسری لڑکیاں دیتی ہیں، مگر جب پریزنٹیشن امتحان کا حصہ ہوتی ہے تو مجھے دینا پڑتی ہے۔ الحمد للہ! میں اسلام پر چلنے کی پوری کوشش کرتی ہوں، لیکن میں اس بارے میں پریشانی کا شکار ہوں کہ ان تمام باتوں کے باوجود میرا یونیورسٹی میں پڑھنا جائز ہے؟

    اس کے جواب ميں دارالعلوم ديوبند نے جو فتویٰ صادر کيا اس کا متن کچھ يوں ہے۔ لیڈیز ڈاکٹر بننے کے لیے میڈیکل کالج میں مسلم لڑکیوں کا پڑھنا لڑکوں کے اختلاط کے ساتھ اور پروفیسروں سے بے پردگی کے ساتھ ہمارے مذہب اسلام میں اس کی اجازت نہیں۔ بے پردگی اور اختلاط سے بہت سارے فتنے کے دروازے کھلتے ہیں، اگر کسی لڑکی نے پڑھ لیا اور لیڈی ڈاکٹر بن گئی تو اپنی بے پردگی اور اختلاط کے باعث گنہ گار ہو گی۔ اگر کسی یونیورسٹی میں لڑکیوں کا بالکل الگ سسٹم ہو، اس میں لڑکے نہ ہوں، پڑھانے والیاں بھی لیڈیز ڈاکٹرنی ہوں تو پھر لیڈی ڈاکٹر بننے کی اجازت ہے۔

    اب ذرا ٹھیر جائيے۔ جنہیں ميڈيکل تعليم کا رتی بھر بھی علم ہے، وہ اپنے دلوں پر ہاتھ رکھ کر بتائيں کہ ميڈيکل کالج ميں داخلہ لينے کے لیے کسی اميدوار کو کتنی سخت محنت کرنا پڑتی ہے؟ يہ کوئی مدرسے کا داخلہ نہيں جہاں کسی بڑے حضرت کی سفارشی چٹھی يعنی توسيع لے کر جاو اور نام لکھوا لو؛ ميڈيکل کے لیے رات رات بھر کتابيں چاٹنا پڑتی ہيں؛ پڑھتے پڑھتے اکثر آنکھوں پر موٹے لينز کی عينک چڑھ جاتی ہے؛ اس کے بعد کہيں جاکر کسی کا داخلہ ايم بی بی ايس ميں ہوتا ہے۔ کسی مسلمان بچی کے لیے يہاں تک پہنچنا مزید مشکل اس لیے ہوتا ہے کہ اس کی راہ ميں بہت سے صاحبان جبہ و دستار پہلے ہی سے جائز نا جائز کا لٹھ لے کر کھڑے ہوئے ہيں؛ ايسے ميں ايسے مشکل کورس ميں داخلہ پالينے کے بعد اور تعليم کے دوران شرعی حدود کا ہر ممکن لحاظ رکھنے والی لڑکی کو مفتی صاحب نے بيک جنبش قلم حکم دے ديا کہ يہ جائز نہيں ہے۔

    دست بستہ کہنا چاہوں گا کہ ہندوستان ميں ايک بھی ايسا ميڈيکل کالج نہيں جہاں صرف خواتين ہوں۔ ايسے ميں کيا کوئی مسلمان لڑکی ميڈيکل کي تعليم حاصل ہی نہ کرے؟ اگر کوئی مسلمان لڑکی ڈاکٹر بنے ہی گی نہيں تو ميڈيکل کالج ميں ليڈی ٹيچر کہاں سے آئيں گی؟

    غور فرمائیں، مفتی صاحب نے محض اس قياس پر کہ ايم بی بی ايس کرنے کے بعد مردوں سے اختلاط ہو گا، فرما دیا کہ يہ تعليم ہی جائز نہيں۔ ميرے منہ ميں خاک! اگر مفتی صاحب کی اہلیہ محترمہ کسی سنگين بيماری ميں مبتلا ہو جائيں اور اس کا ماہر ڈاکٹر مرد ہی ہو، تو کيا مفتی صاحب اپنی بيگم کو مرنے کے لیے چھوڑ ديں گے؟ ہماری بچیوں کا میڈیکل تعلیم حاصل کرنا انھی کے لیے نہيں، مفتی صاحب کی اہليہ کے لیے بھی ضروری ہے۔

    ہماری مسلمان بہنوں کی زچگی کے لیے ہمیں مسلمان خاتون گائناکالوجسٹ تبھی ميسر ہوں گی، جب ہم اپنی بچیوں کو ميڈيکل کی تعليم حاصل کرنے ديں، اور بے وجہ کے فتوؤں کی پھل جھڑياں چھوڑنا بند کريں۔

    دارالعلوم کے فاضل مفتیان کی جدید تعليم سے عداوت کی ايک اور مثال ديکھیے۔ ايک صاحب نے سوال نمبر 18633 ميں پوچھا کہ ان کا داخلہ ايم بی اے ميں ہو گيا ہے، انھوں نے داخلہ امتحان پاس کر لیا ہے اور اب داخلہ کے لیے کورس کی فیس سات لاکھ روپیا چاہیے۔ لکھتے ہیں، کہ ان کے والد صاحب غریب ہیں اور اس فیس کو ادا کرنے سے معذور ہیں۔ ان کا سوال ہے کہ کيا وہ اپنی تعلیم کو مکمل کرنےکے لیے بنک سے ايجوکيشن لون يا تعليمی قرض لے سکتے ہيں؟

    اس کے جواب ميں فتوی ملاحظہ ہو۔ سودی قرض لینا شرعاً حرام ہے، اس لیے اگر تعلیمی قرض میں اصل سے زائد رقم دینا پڑتی ہو، تو اس لون کا لینا شرعاً ناجائز و حرام ہوگا۔

    مفتی صاحب کو يہ حکم لگانے ميں کتنی دير لگی ہوگی؟ ممکن ہے ایک گھنٹا، ایک ایک منٹ یا بمشکل ايک پل؟ اس ايک پل سے کتنے طالب علموں کے روشن مستقبل کا کباڑا ہو سکتا ہے، یہ کسے خبر۔ مقصد کو سمجھنے کی ضرورت ہے؛ يہ طالب علم قرض لے کر شراب کا ٹھيکا نہيں لگائے گا، بلکہ اس کی فيس ادا ہوگی، جس سے اس کے گھر خوش حالی آئے گی، يہ اپنے اہل وعيال کے فرائض ادا کرے گا، بہنوں کی شادی کرے گا، بھائيوں کو تعليم دلائے گا، ماں کا علاج کرائے گا، باپ کی دوا خريدے گا۔ يہ سب کچھ اس کے یہ کورس مکمل کرنے سے مشروط ہے اور کورس کرنے کے لیے ايجوکيشن لون چاہیے۔

    مفتی صاحب اس لون کو حرام قرار دينے سے پہلے لمحہ بھر سوچ ہی نہيں رہے کہ یہ ایسی اسلامی فلاحی مملکت نہیں جہاں طالب علموں کے لیے غیر سودی قرضوں یا امداد کی سہولت دستیاب ہے؛ پہلے سے پسے ہوئے طبقے کے فرد کو علم کے راستوں سے دور کردینے والوں کے خلاف فتویٰ کون دے گا؟ علم تو ہے ہی جستجو کا نام، تو کیوں نہ جستجو کے خلاف جاتے فتووں کے خلاف ایک فتویٰ جاری کیا جائے۔ اس میں شک نہیں کہ سود حرام ہے، پر سود کیا ہے، اس کی تشریح بھی ہو جائے۔ جہاں مملکت کا نظام ہی سود پر چل رہا ہو، وہاں ایک ایک لقمہ لیتے حرام حلال کی بحث کرتے، ایسے مفتیوں کا کیا کام؟ وہاں سے ہجرت کیوں نہیں کر جاتے؟ تعليم کے لیے بينک سے ليا جانے والا قرض اور ساہوکار سے غريب کو ديا جانے والا قرض دونوں الگ نوعيت کے ہيں، دونوں کو ايک ہی ترازو ميں کس بے دردی سے تول ديا گيا، کیا یہی انصاف ہے؟

    مان ليا کہ ہر صورت ميں ايجوکيشن لون حرام ہے، تو ٹھيک ہے مدارس کے بيت المال ميں جو رقومات شرعيہ ٹھونس ٹھونس کر بھری ہوئی ہيں ان ميں سے اس طالب علم کی فيس بطور قرض جمع کرا ديجیے۔ آپ بيت المال کو بھی دانتوں سے پکڑ کر رکھيں گے، طالب علم کو بينک سے لون بھی نہيں لينے ديں گےاور فقہی مسائل کو موجودہ دور کے اعتبار سے بتائيں گے بھی نہيں، تو آپ یوں ‌کیجیے کہ اس طالب علم کو دو چٹکی سنکھيا دے ديجیے، جسے کھا کر وہ ان جھنجھٹوں سے نجات پائے؛ خیال رکھیے گا، کہیں سنکھیا اس رقم سے تو نہیں خریدا گیا جو سودی نظام سے کمائی آمدن سے خیرات میں لی ہو۔
     
    دنیاوی تعليم کو دارالعلوم ديوبند کے عظيم المرتبت مفتی صاحبان کتنی فالتو شے مانتے ہيں، اس کی ايک اور مثال سوال نمبر 14818 کے جواب ميں جاری فتوے ميں بھی ديکھی جا سکتی ہے۔ مفتی صاحب فرماتے ہيں کہ دنیاوی تعلیم جس سے عورت کو نوکری مل جائے، میں بہت سے محظورات شرعیہ کا ارتکاب کرنا پڑتا ہے، نیز نوکری ملنے کے بعد بھی بالعموم دورانِ ملازمت بے حجاب رہنا پڑتا ہے، غیر مردوں سے اختلاط رہتا ہے، اس لیے محض شبہ اور وہم کی بنا پر کہ اگر شوہر کا انتقال ہوجائے تو عورت کیسے گزر بسر کرے گی، اعلیٰ پیمانے پر دنیاوی تعلیم دلانا، کسی طرح بھی مناسب نہیں۔

    ايک صاحب نے سوال نمبر60827 ميں دنياوی تعليم کے سلسلہ ميں مفتيان سے رہنمائی چاہی تو يہ حکم وارد ہوا کہ باپ اور سرپرست کی ذمے داری یہ ہے کہ بچوں کو دینی تعلیم دیں، بنیادی اسلامی عقائد سے واقف کرائیں، قرآن کریم سکھائیں ضروری مسائل شرعیہ سیکھنے کا ان کے لیے انتظام کریں، دنیوی پیشہ ورانہ تعلیم دینا، ان پر ضروری نہیں ہے۔ (رہے نام اللہ کا)

    دارالعلوم ديوبند کے آن لائن دارالافتاء پر ايسے درجنوں فتاوی موجود ہيں جن ميں دنياوی تعلیم کو یکسر غیر ضرور قرار ديا گيا ہے اور علم بس! نماز روزہ کی جان کاری اور دینی تعلیم کو بتايا گيا ہے۔ الميہ يہ ہے کہ اس پر کسی شرمندگی کے بجائے اہل مدارس ايسے فتوؤں کا دفاع کرتے ہيں۔ مفتيان ايک منٹ کو نہيں سوچتے کہ اگر ساری دنیا نے ان کی طرح دنیاوی علوم کو غير ضروری مان کر ٹھکرا ديا ہوتا، تو ان کا آن لائن دارالافتاء کيسے چلتا؟
     
    انجينیئر نہ ہوتے تو دارالعلوم ديوبند کی عمارت کيسے بنتی؟

    نصاب کی کتابيں، بچوں کی اسناد، مولويوں مفتيوں کی مہريں کيسے تيار ہوتيں؟

    ديوبند تک طلبا بسوں اور ٹرينوں سے کيسے پہنچتے؟

    مفتيان ہر برس حج کرنے جہاز سے کيسے جاتے؟

    وہاں مطاف کی توسيع بنا انجينیئر کيسے ہوتی؟

    حج کی بھگدڑ ميں مفتی صاحب زخمی ہو جاتے تو بنا ڈاکٹر ان کا علاج کيسے ہوتا؟

    خدانخواستہ رحلت فرما جاتے تو ان کے جنازے کو وطن پہنچنے تک سڑنے سے بچانے کے مخصوص باکس کيسے بنتے؟

    ايئرپورٹ سے جنازہ گھر تک بنا ٹرک يا ايمبولينس کے کيسے آتا؟

    تدفين کے لیے جاتے وقت مسہری کہاں سے ملتی؟

    کپڑا بننا بھی دینی علم ميں نہيں آتا تو پھر کفن کا لٹھا کہاں سے فراہم ہوتا؟

    يہ سب سوال ہيں۔ ایک بار سوچیے اور بتائيے کہ یا یہ کہا جائے کہ کيا آپ بالکل نہيں سوچتے؟

    By Ghulam Rasool Dehlvi - 10/23/2017 6:44:52 AM



  • Dear Royalj,
    You have rightly quoted Abdul Karim Soroush that the clergy are not defined by their erudition or their virtue but by their dependency on religion for their livelihood. 
    But they can explore the possibility of making their livelihood with other lawful pursuits, getting out of the preaching business. 
    Thus, they can at least give up embarrassing the whole community.


    By Ghulam Rasool Dehlvi - 10/23/2017 3:09:46 AM



  • The clergy are not defined by their erudition or their virtue but by their dependency on religion for their livelihood.-Abdul Karim Soroush
    By Royalj - 10/22/2017 10:17:15 PM



  • Messrs G.R and G.M
    “Why Do the Islamic Theologians (Muftis)…”:
    There is no such thing as Islamic Theologian – "Mufti" 4,177, They are playing God.
     “…they should get out of the preaching business”.
    Quiet right, if they are in it for "business" there is no room for Islamic Preachers and they should be thrown out.2, 79 etc.
    By Skepticle - 10/22/2017 5:22:40 AM




  • Excellent article! Both Darul Ulum Deoband and Tablighi Jamaat should stop embarrassing the Muslim community. If they can't promote modernism, rationalism and progressive thinking they should get out of the preaching business.

    By Ghulam Mohiyuddin - 10/21/2017 11:04:47 AM



Compose Your Comments here:
Name
Email (Not to be published)
Comments
Fill the text
 
Disclaimer: The opinions expressed in the articles and comments are the opinions of the authors and do not necessarily reflect that of NewAgeIslam.com.

Content