certifired_img

Books and Documents

Islamic Ideology (02 Jun 2018 NewAgeIslam.Com)


Islamic Postulates of Ijtihad (Rethinking) And ‘Ismah’ (Infallibility) And Intellectual Disagreements of the Prophet’s Companions In Light Of the Battle of Camel - Part 1



By Ghulam Rasool Dehlvi, New Age Islam

02 June 2018

Dr. Aleem Ashraf Jaisi, eminent Indian scholar of classical Islamic studies rightly opines in one his recent Arabic writings that our problem lies in two things:

First is that we discuss our doctrinal [Aqaidi], philosophical and rhetorical [Kalami] issues relying on the books of jurisprudence, sermons [Khutbas] and books of al-Fadail [virtues].

Secondly, we believe in our Sheikhs and Ulema in such a blind way which makes their statements tantamount to infallibility [Ismah]. We cannot even imagine the possibility of error or sin from them, especially the first generation of this Ummah. And if something is proved but is contradicting our perceptions or even hypothesis, we tend to maintain silence or justify our theological positions resorting to T’awil (allegorical interpretation) and sometimes going to the extent of polemics. Examples abound in this regard. The battle of the Camel or Jamal is one.

Ijtihad (Rethinking) and “Ismah” (Immaculacy)

One of the essential Islamic doctrines is that of “Ismah” (immaculacy or infallibility) i.e being free from sins and human errors through divine help. But it can only be attributed to prophets and messengers. Rest of the people including the Prophet Muhammad’s companions (Sahaba) are liable to commit mistakes both in mundane affairs and religious matters. However, a companion of the Prophet does not lose the nobility of his companionship (Sahabiyat), if he/she happens to commit an intellectual mistake.

There have been certain events in the Islamic history when even the Prophet’s close companions seem to have committed ‘intellectual mistakes’ [Khata-e-Ijtihadi]. Of course, they might not be seen as deliberate or wilful attempts but rather inadvertent. By and large, their intellectual mistakes were based on their different ways of understanding the Quran and myriad interpretations of the religious rulings and edicts. This is what we call “Khata-e-Ijtihadi” in the jurisprudential terminology of Islamic theology (Fiqh).

According to the canonical rule in the Islamic jurisprudence, if a Muslim has the ability to carry out Ijtihad, he needs not to comply with the Ijtihad of any other Mujtahid (one who carries out Ijtihad). Next to the Qur'an and the Sunnah, Ijtihad has the most pivotal role to play in the Islamic rulings and edicts. Unlike the first two primary sources of the Shari'ah, which discontinued at the demise of the Prophet (pbuh), Ijtihad is a continuing process of intellectual thinking, creative re-thinking and brainstorming on contemporary issues and matters of religion. But it is allowed only for those who have a scholastic aptitude for deriving meanings and extracting rulings from the texts of Qur’an and Hadith. Since Prophet’s companions were the closest to the primary source of Islamic theology—the Prophet himself— and well-versed in the essential Islamic sciences, Ijtihad was a lawful prerogative for them. Nearly all companions of the Prophet (pbuh) were Mujtahid and, therefore, sometimes they did not rely on others’ Ijtihad and chose to act upon their own in the cases that did not clearly appear in the Qur’an or authoritative prophetic traditions.

Having known that each of the Sahabas (Prophet’s companions) was in a position of the Mujtahid and, thus, was rightful in adopting an approach of his own to deal with socio-religious and political matters, an authentic prophetic tradition should be kept in our view, which says:  “If a wise person made his Ijtihad or the extraction of the verdict from original sources of legislation and he reached the correct verdict, he will get two rewards. And if he reached the wrong verdict, he will only get one reward” (reported by Bukhari, Muslim and Abu-Dawud).   

Hence, the political disputes, internal conflicts and civil war-like situations that took place in the early Islamic era were actually a direct or indirect outcome of the Sahaba’s intellectual mistakes or disagreements concerning their Ijtihad. However, the Prophet’s companions cannot be supposed to further any petty interests or selfish ends in developing such theological disagreements. For God had purged their souls of baser instincts and evil emotions through the moral and spiritual counselling by the Prophet Muhammad (pbuh), as he says in the Quran:

“Certainly did God confer great favour upon the believers when He sent among them a Messenger from themselves, reciting to them His verses and purifying them and teaching them the Book and wisdom, although they had been before in manifest error.” (3:164).

The Battle of Camel (Jamal)

One of the most deplorable incidents in the Islamic history which stemmed from an intellectual disagreement or difference based on Ijtihad was the battle of Jamal. Mover than 5,000 people died in this battle but sill one cannot make a declarative statement as to which side was wrong or right.

In fact, the nature of this intellectual difference was political, rather than social or religious. But deplorably for the bloody Islamic history, it developed into a grave controversy and ended up in the form of an intense war. If we really adopt a realistic approach to analyze the case of the Camel battle, we need to go through the full story in order to understand the reasons and nuances of this battle.

Story of the Battle

After the assassination of the third Islamic caliph, Hazrat Usman (r.a) by a rebellious faction from Medina, two great companions of the Prophet (pbuh) Hazrat Zubair and Talha (r.a) asked Imam Ali (r.a) to punish the murderers of Hazrat Usman in accordance with the Qur’anic decrees. Imam Ali (r.a) opined that no one should be held accountable for the culpability of others and, hence, disagreed with them. He rather acted upon this clear and unambiguous injunction in the Quran:

 “And no bearer of burdens shall bear another's burden” (35:18).

On hearing Hazrat Ali’s standpoint that was contrary to their Ijtihadi position, the two companions of the Prophet (Zubayr and Talha) went to Makkah and held a meeting with Hazrat Aisha (r.a) to avenge the assassination of the late caliph Usman (r.a). She endorsed their viewpoint. At that time, Abdullah Bin Aamir was the Amil at Mecca. He got ready to support Hazrat Aisha (r.a). They proceeded to the city of Basra with an aim to trace out and crush down the conspirators and murderers.

On the other hand, in Madina, the rioters put pressure on Hazrat Ali (r.a) to fight a war against the coalition army. It was the time when Imam Ali’s elder son Hazrat Imam Hasan advised his father not to proceed against the Muslims. Imam Hasan, the elder brother of Hazrat Imam Husain (r.a), who was in his early age then, suggested his father not to enter into any armed conflict. Pacifist by nature, Hazrat Ali (r.a) tried his best to restore peace by the way of reconciliation. For this noble cause, he deputed one of his followers Qa’qa bin Umar to hold peace talks.

Hazrat Ali (r.a) announced to proceed to Basra the next day, but he affirmed that his mission would be peace rather than conflict. He also issued an official order that those who participated in the capturing of the deceased Caliph (Hazrat Usman r.a) in any way must leave his army. This created apprehensions among the hypocrites and internal enemies of Islam. The hypocrites and rioters felt that so far only Talha and Zubair were on the lookout for the murderers of Usman (r.a), now Ali (r.a) also seems to join them. He realised that if the two groups of Muslims came to a consensus and amicable understanding for the sake of deceased Usman (r.a), they will surely trace out the real culprits i.e. his own followers. Consequently, he called for a group meeting of his followers and instructed them to kill all the three companions of the Prophet (pbuh): Hazrat Talha, Hazrat Zubair and Hazrat Ali (r.a). However, he advised them not to leave the camp of Hazrat Ali (r.a) for the oblivious reasons.

Effort towards Reconciliation

As a matter of fact, the leaders of both the parties wanted to restore peace and avoid the war. They strongly felt that turning to war will lead them to nowhere. Even when both the armies came at odds with each other, peace treaties were undertaken and the cordial negotiations were successfully conducted. But the nefarious elements of Hazrat Ali’s forces (the hypocrites and internal enemies) who had stirred up the revolt against Hazrat Usman (r.a) developed an impression that any amicable understanding or settlement of the issue would jeopardise their petty interests. Therefore, they sabotaged the attempts of reconciliation and created such a situation that the two sides were compelled to take up arms against each other. They chalked out a strategic plan and prepared two small groups. One attacked the army of Hazrat Ali (r.a) and the other assaulted on the coalition army. Each party under the impression that the other made the attack, which they thought was the violation of their peace treaty, turned violent and sought retaliation. This is how the battle of Jamal took place turning into a fierce conflict between the two Muslim groups.

Of course, the battle of Jamal caused great havoc to the entire Muslim Ummah leading to the killing of thousands of Prophet’s companions including Hazrat Talha and Zubair (r.a) and arrest of Hazrat Aisha (may Allah be pleased with her). Nevertheless, it does not behove us today to put the blame of causing strife of Jamal, on either side. On one side is Hazrat Ali (r.a)—husband of the Prophet's dearest daughter Hazrat Fatima (r.a) and son of his  uncle—and on the other side is Hazrat Aisha (r.a)—the holy Prophet's beloved wife and a versatile scholar of Tafseer, Hadith, Fiqh and other Arabic and Islamic subjects.

Serious Ramification of the Sufyaniyat

An unbiased and critical analysis of the incident of the Jamal makes it patently clear that the Fitnah of Sufiyaniat in Islam emanated from this battle.

Of course, it cannot be conceived, by any stretch of imagination, that the battle of Jamal took place due to any political interests envisaged by either of the two warring parties’ leaders—Hazrat Ali or Hazrat Aisha. It was, clearly, because of a theological difference entirely based on Ijtihad, which was later obnoxiously exploited by the mischief-mongers to further nefarious ends.

But this was, in fact, the first time when Muslims—that too highly ranked as the noblest generation of Islam—clashed and fought against one another. As a matter of fact, had it not been the case, another civil war-like situation would not have emerged in the battle of Siffin (A.D. 657) either. Thus, the threat of the Sufyaniyat in Islam would not have loomed large in our history. The Ummayad dynasty, under the reign of Ameer Mu’awiyyah (son of Abu Sufiyan) would hardly have turned the glorious era of Islam into an autocratic, despotic and dictatorial dynasty. Last but not the least, the saviour of Islam from the clutches of Yazidi evils, Imam Hussain, the holy Prophet’s beloved grandson would not have been martyred in the massacre of Karbala—the bloodiest event in the Islamic history.

Regular Columnist with Newageislam.com, Ghulam Rasool Dehlvi is a classical Islamic scholar and English-Arabic-Urdu writer. He has graduated from a leading Islamic seminary of India, acquired Diploma in Qur'anic sciences and Certificate in Uloom ul Hadith from Al-Azhar Institute of Islamic Studies. Presently, he is pursuing his PhD in Jamia Millia Islamia, New Delhi.

URL: http://www.newageislam.com/islamic-ideology/ghulam-rasool-dehlvi,-new-age-islam/islamic-postulates-of-ijtihad-(rethinking)-and-‘ismah’-(infallibility)-and-intellectual-disagreements-of-the-prophet’s-companions-in-light-of-the-battle-of-camel---part-1/d/115429

New Age IslamIslam OnlineIslamic WebsiteAfrican Muslim NewsArab World NewsSouth Asia NewsIndian Muslim NewsWorld Muslim NewsWomen in IslamIslamic FeminismArab WomenWomen In ArabIslamophobia in AmericaMuslim Women in WestIslam Women and Feminism




TOTAL COMMENTS:-   7


  • The model behaviour of a Muslim, when faced with another Muslim with drawn sword, is contained in the story of the two sons of Adam:

    (5:27) Recite to them the truth of the story of the two sons of Adam. Behold! they each presented a sacrifice (to Allah): It was accepted from one, but not from the other. Said the latter: "Be sure I will slay thee." "Surely," said the former, "Allah doth accept of the sacrifice of those who are righteous.

    (28) "If thou dost stretch thy hand against me, to slay me, it is not for me to stretch my hand against thee to slay thee: for I do fear Allah, the cherisher of the worlds.

    (29) "For me, I intend to let thee draw on thyself my sin as well as thine, for thou wilt be among the companions of the fire, and that is the reward of those who do wrong."

    (30) The (selfish) soul of the other led him to the murder of his brother: he murdered him, and became (himself) one of the lost ones.

     If either of the party had acted in the manner of the righteous son, bloodshed would have been avoided and the matter settled amicably. This did not happen and both sides are blameworthy.

    Allah’s pardon is not for everyone. Allah pardons whom He wills and forgives whom He wills.  How can a knowledgeable person who knowingly does wrong expect Allah’s pardon?

    Those involved in the battle of the Camel are however among the vanguard Muslims who were promised Heaven prior to this incident and are therefore certain to be forgiven. The fact however, is that both sides were in the wrong or lead into doing wrong. There cannot be two opinions about a battle in which Muslims killed Muslims being wrong. Both sides acted in less than the ideal manner shown by Adam’s righteous son. The Islamic principle cannot be made subservient to the exigencies of those times and those people. Both sides set a bad example and unless we acknowledge this, we will continue to kill each other and never reform. The battle of the Camel was the first sectarian war and must be condemned as such without condemning the people involved. Our respect and love for the people involved should not prevent us from condemning their blameworthy deed.

    As far as intentions are concerned, you cannot flout Islamic principles with your good intentions. If you do, then you have greater faith in your good intentions than in Allah. So, it is not intentions that excuse those who participated in the battle of the Camel but only their selfless service to Islam before this incident and Allah’s promise to them.

    Inability to call spade a spade and making all kinds of excuses for our wrongs, has made us accept and justify all wrongs, with the result that takfir and sectarian strife thrive, as if this was the highest “Islamic virtue”. We should stop paying obeisance to the deity of “good intentions”. It has only turned us into unprincipled opportunistic liars. The path of Hell is paved with the good intentions of hypocrites as it is only a hypocrite who uses the excuse of “good intention” when he flouts a principle.


    By Naseer Ahmed - 6/6/2018 1:06:56 AM



  • Ghulam Rasool sb,

    آپ نے عجلت سے کام لیا۔  پھر سے عبارت پر نظر کیجیے۔ آپ نے جو نقل کیا در اصل وہ میرا ہی موقف ہے۔ میں نے ہی لکھا ہے کہ عصمت انبیا کے لیے ثابت ہے اور کوئی بھی اس کا قائل نہیں کہ شیوخ و علما کے بیانات امکان خطا سے خالی ہیں۔آپ کو سمجھنے میں خطا ہوئی ، اس لیے دوسرے لفظوں میں سمجھ لیجیے کہ صحابہ کرام معصوم نہیں  ۔اس کے علاوہ یہ عقیدہ بھی اپنایا جائے کہ صحابہ کرام کے متعلق بد گمانی رکھنا قرآن و سنت کی صریح مخالفت ہے ۔

    غلام رسول صاحب!

    آپ نے میری عبارت لیکر مجھ پر ہی اعتراض کیا در اصل یہ آپ کی عجلت کا نتیجہ ہے جو کسی طالب علم  خاص کر آپ جیسے ریسرچ اسکالرکے لیے درست نہیں۔

    صحابہ کرام رضوان اللہ علیہم اجمعین کے متعلق یہ عقیدہ ہے کہ وہ حضرات انبیا  نہ تھے ، فرشتے نہ تھے کہ معصوم ہوں، ان میں سے بعض حضرات سے لغزشیں ہوئیں مگر ان کی کسی بات پر گرفت ، اللہ تعالی اور اس کے رسول صلی اللہ علیہ وسلم کے احکام کے خلاف ہے ۔

    قرآن کریم  میں اللہ تعالی نے اصحاب رسول صلی اللہ علیہ وسلم کی دو قسمیں ذکر فرمائی ۔ ملاحظہ فرمائیے :

    لا یستوی منکم من انفق من قبل الفتح وقاتل ، اولئک اعظم درجۃ من الذین انفقوا من بعد وقاتلو ا وکلا وعد اللہ الحسنی 

    ترجمہ : تم میں برابر نہیں وہ جنہوں نے فتح مکہ سے قبل خرچ اور جہاد کیا ، وہ مرتبہ میں ان سے بڑے ہیں جنہوں نے بعد فتح کے خرچ اور جہاد کیا اور ان سب سے اللہ تعالی بھلائی (جنت) کا وعدہ فرماچکا اور اللہ کو تمہارے کاموں کی خبر ہے  (سورہ حدید  ۵۷:۱۰)

     اس آیت کریمہ کے تحت صحابہ کرام کے دو اقسام بیان ہوئے : پہلے وہ جو فتح مکہ سے قبل ایمان لائے، راہ خدا میں اپنا مال خرچ کیا اور جہاد کیا جب کہ ان کی تعداد بھی بہت کم تھی اور وہ ہر طرح ضعیف و درماندہ بھی تھے، انہوں نے بہت مشقتیں برداشت کیں، اپنی جانوں کو خطروں میں ڈال کر اسلام پر عمل کیا ، یہ حضرات مہاجرین و انصار میں سے سابقین اولین ہیں ، ان کے مراتب بہت اعلی ہیں ۔ 

    دوسرے وہ صحابہ کرام جو فتح  مکہ کے بعد ایمان لائے ، راہ خدا میں اپنا مال خرچ کیا اور جہاد کیا ، ان اہل ایمان نے اس اخلاص کا ثبوت اس وقت دیا جب مکہ فتح ہو چکا تھا اور مسلمان کثرت تعداد اور جاہ و مال ہر لحاظ سے بڑھ چکے تھے۔اجر ان کا بہت عظیم ہے لیکن ان سابقون اولون والوں کے درجہ کا نہیں ۔

    مرتبہ و شرف صحابیت پانے میں سب کے سب برابر ہیں لیکن فضل و کمال میں مختلف درجات رکھتے ہیں ، چنانچہ قرآن مجید نے پہلی قسم والوں کو دوسری قسم والوں پر ترجیح دی اور ان کی فضیلت بیان کی اور صاف اعلان کر دیا کہ وہ مرتبہ میں بعد والوں سے بڑے ہیں ۔

    اس آیت کریمہ میں ان دریدہ دہنوں کو جواب ہے جو صحابہ کرام کے افعال سے ان پر طعن و تشنیع  چاہتے ہیں ۔اللہ تعالی  کے علم ازلی میں تھا کہ کچھ لوگ صحابہ کرام پر طعن و تشنیع کریں گے ۔اسی وجہ سے اللہ تعالی نے تمام صحابہ کرام سے  ‘‘حسنی’’ یعنی بھلائی کا وعدہ فرمایا ، تو اب جو معترض ہے وہ اللہ تعالی پر معترض ہے۔

    اب جس کے لیے اللہ تعالی بھلائی کا وعدہ فرمالے اس کے لیے کیا بشارت ہے ؟ تو قرآن مجید کا ارشاد ہے :

    إِنَّ الَّذِينَ سَبَقَتْ لَهُم مِّنَّا الْحُسْنَىٰ أُولَـٰئِكَ عَنْهَا مُبْعَدُونَ ﴿١٠١﴾ لَا يَسْمَعُونَ حَسِيسَهَا ۖ وَهُمْ فِي مَا اشْتَهَتْ أَنفُسُهُمْ خَالِدُونَ ﴿١٠٢﴾ لَا يَحْزُنُهُمُ الْفَزَعُ الْأَكْبَرُ وَتَتَلَقَّاهُمُ الْمَلَائِكَةُ هَـٰذَا يَوْمُكُمُ الَّذِي كُنتُمْ تُوعَدُونَ ﴿١٠٣﴾   ترجمہ : بیشک وہ جن کے لیے ہمارا وعدہ بھلائی کا ہوچکا وہ جنہم سے دور رکھے گئے ہیں۔ وہ اس کی بھنک (ہلکی سی آواز بھی) نہ سنیں گے اور وہ اپنی من مانتی خواہشوں میں ہمیشہ رہیں گے، انہیں غم میں نہ ڈالے گی وہ سب سے بڑی گھبراہٹ اور فرشتے ان کی پیشوائی کو آئیں گے کہ یہ ہے تمہارا وہ دن جس کا تم سے وعدہ تھا۔ (سورہ الانبیا آیت ۱۰۱ تا ۱۰۳)

    اس کے علاوہ اللہ تعالی صحابہ کرام کے متعلق ارشاد فرماتا ہے:

    وَالسَّابِقُونَ الْأَوَّلُونَ مِنَ الْمُهَاجِرِينَ وَالْأَنصَارِ وَالَّذِينَ اتَّبَعُوهُم بِإِحْسَانٍ رَّضِيَ اللَّـهُ عَنْهُمْ وَرَضُوا عَنْهُ وَأَعَدَّ لَهُمْ جَنَّاتٍ تَجْرِي تَحْتَهَا الْأَنْهَارُ خَالِدِينَ فِيهَا أَبَدًا ۚ ذَٰلِكَ الْفَوْزُ الْعَظِيمُ ﴿١٠٠﴾   ترجمہ : ‘‘اور سب میں اگلے پہلے مہاجر اور انصار اور جو بھلائی کے ساتھ ان کے پیرو ہوئے اللہ ان سے راضی اور وہ اللہ سے راضی اور ان کے لیے تیار کر رکھے ہیں باغ جن کے نیچے نہریں بہیں ہمیشہ ہمیشہ ان میں رہیں، یہی بڑی کامیابی ہے،’’

    جیساکہ میں پہلے وضاحت کر چکا ہوں کہ صحابہ کرام معصوم نہیں۔عصمت انبیا و فرشتے کے لیے ثابت ہے۔لیکن مندرجہ بالا آیت کریمہ کی روشنی میں فیصلہ کیا جائے کہ اب اگر صحابہ کرام کے لیے وجود امکان خطا کے نام پر کوئی لعن و طعن کرے تو اس کا کیا انجام ہوگا۔ کیا وہ قرآن کریم کی آیت کا مخالف ہوگا یا نہیں ؟ تو اس سے پتہ چلا کہ ہم مسلمان پر واجب ہے کہ تمام صحابہ کرام کے متعلق حسن ظن رکھیں اور جب کبھی ان کا ذکر ہو تو خیر کے ساتھ کریں۔

    ان سب صورت حال کو مد نظر رکھتے ہوئے ہی اکابر اہل سنت نے یہ اعتدال کی راہ نکالی کہ حضرت امیر معاویہ صحابی رسول ہیں اور ان کی خطا اجتہادی تھی اور چونکہ قرآن کریم نے تمام صحابہ کرام سے بھلائی کا وعدہ فرمالیا ہے تو کسی بھی طرح یہ مسلمانوں کے لیے جائز نہیں کہ وہ ان کی یا کسی اور صحابی رسول صلی اللہ علیہ وسلم کے متعلق بد گمانی رکھے۔

    میں نے اپنا موقف واضح کیا امید کرتا ہوں آپ اس سے اتفاق رکھیں گے ۔  


    By Ghulam Ghaus Siddiqi غلام غوث الصديقي - 6/5/2018 6:05:54 AM



  • @Ghulam Ghaus sb,

    رہی بات اہل سنت" والجماعت کی تو عصمت انبیائے کرام کے لیے ثابت ہوئی اور کوئی اس کا قائل نہیں کہ شیوخ و علما کے بیانات امکان خطا "سے خالی ہیں
    تو کیا صحابہ ا  مکان ؟؟خطا  سے خالی ہیں 

    By غلام رسول دہلوی - 6/5/2018 3:17:49 AM



  • Zaid Ansari sb,

    حضرت  طلحہ اور زبیر رضی اللہ عنہما دونوں جلیل القدر صحابی ہیں جن کے جنتی ہونے کی بشارت نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم نے دی ہے اور ان دونوں صحابی کا شمار عشرہ مبشرہ میں ہوتا ہے (ترمذی ج ۲ ص ۲۱۵ ، ابن ماجہ ص ۱۲، ۱۳)۔ یہ دونوں حضرت عائشہ صدیقہ رضی اللہ عنہا کے لشکر میں شامل تھے اور ان کی شہادت مولی علی رضی اللہ عنہ کے لشکر کے ہاتھوں ہوئی ۔اب بتایئے ، حضرت عمار بن یاسر کی شہادت حضرت امیر معاویہ کے لشکر کے ہاتھوں ہوئی اور حضرت طلحہ و زبیر کی شہادت مولا علی کے لشکر کے ہاتھوں ہوئی ، جب کہ شہید ہونے والے ان سب صحابہ کے جنتی ہونے کی گواہی احادیث میں موجود ہے۔ اس پیچیدہ صورت حال کا حل آپ کے پاس کیا ہے؟

    جناب زید انصاری !

    مولی علی رضی اللہ عنہ نے جب حضرت طلحہ رضی اللہ عنہ کی لاش کو دیکھا تو ان کے چہرے پر سے مٹی صاف کی اور فرمایا  ‘‘کاش میں اس واقعہ سے بیس سال پہلے فوت ہوگیا ہوتا ’’ (جمع الفوائد ج ۲ ص ۲۱۴، البدایہ والنہایہ ج ۷ ص ۲۳۸)

    مولی علی رضی اللہ عنہ کا یہ فرمان صاف بتا رہا ہے کہ مولا علی اپنی فوج کو حضرت طلحہ کا قاتل سمجھ رہے تھے۔نیز آپ رضی اللہ عنہ نے  آیت کریمہ ‘‘و نزعنا ما فی صدورھم من غل اخوانا علی سرر متقابلین ’’ ترجمہ ہم ان کے دلوں سے ناراضگیاں ختم کر دیں گے وہ بھائی بھائی ہو جائیں گے اور ایک دوسرے کے آمنے سامنے تختوں پر بیٹھے ہوں گے (حجر:۴۷)’’  پڑھ کر فرمایا کہ میں امید رکھتا ہوں کہ طلحہ ، زبیر اور میں انہی لوگوں میں سے ہوں گے جن کا ذکر اس آیت میں ہے ۔ (بیہقی ج ۸ ص ۱۷۳ ، البدایہ والنہایہ ج ۷ ص ۲۳۹ اور بے شمار تفاسیر)۔ آپ کے اس فرمان سے بھی واضح ہو رہا ہے کہ فوت ہونے تک ان ہستیوں کے درمیان  رنجش ہو گئی تھی اور یہی رنجش قیامت کے دن ختم کر دی جائے گی۔

    حضرت امیر معاویہ رضی اللہ عنہ بھی اپنی زندگی کے آخری دنوں میں فرمایا کرتے تھے کہ کاش میں ذی طوی کا قریشی ہوتا اور مجھے حکومت ہی نہ ملی ہوتی  (الاکمال مع المشکوۃ ص ۶۱۷)

    (بحوالہ : صافیہ لما وقع بین علی و معاویہ رضی اللہ عنہما  از علامہ غلام رسول نقشبندی )

    ایک اعتراض حدیث عمار کے آخری الفاظ  ‘‘تدعہھم الی الجنۃ ویدعونک الی النار’’ سے کیا جاتا ہے اور کہاجاتا ہے کہ حضرت عمار کا موقف جنتیوں والا تھا اور حضرت امیر معاویہ کا موقف جہنمیوں والا تھا ۔ اس کا جواب علمائے اہل سنت اس طرح دیتے ہیں کہ بظاہر ان الفاظ سے حضرت عمار رضی اللہ عنہ کے قاتلوں کے لیے جہنم کا استحقاق ثابت ہو رہا ہے لیکن یہ اس شرط پر کہ قاتلوں کی بخشش کا کوئی دوسرا  سبب  موجود نہ ہو ۔رہی بات حضرت امیر معاویہ رضی اللہ عنہ کی تو ان کی  بخشش کے بے شمار اسباب موجود ہیں ۔مثلا جس مسلمان نے نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کو دیکھا وہ ہرگز جہنم میں نہ جائے گا  (ترمذی ، مشکوۃ ص ۵۵۴) ، حدیث قسطنطنیہ  (بخاری ج ۱ ص ۴۱۰) اور سیدنا امام حسن رضی اللہ عنہ سے صلح والی حدیث  (بخاری شریف ج ۱ ص ۵۳۰) اور یہ کہ حضرت امیر معاویہ رضی اللہ عنہ کی خطا اجتہادی تھی وغیرہ ۔

    جیساکہ میں پچھلے کمینٹ میں  لکھ چکا ہوں کہ صحابہ کرام کے آپسی اختلاف کا پتہ ہمیں روایات سے ملتا ہے اور ان روایات میں امکان خطا کا تصور باقی رہتا ہے لہذا بہتر ہے کہ قرآن مجید  کی تعلیمات پر عمل کر لیا جائے جو تمام صحابہ کرام کے متعلق حسن ظن کی تعلیم دیتی ہے۔ 

    مفتی سلیم نوری ایک اکسپرٹ مفتی ہیں وہ اپنے ایک تبصرہ میں لکھتے ہیں:  

    ایک پیارا سا اصول یہ بھی ھے کہ اس جنگ صفین جیسے معاملات و مشاجرات کا علم ہمیں فن تاریخ سے ھوا۔

    صحابہ کی تعظیم و توقیر کرنےاور ان کو نشانہ تنقید نا بنا نے کی تاکید ہمیں قرآن سے اشارتا یا دلالتا اور حدیث سے صراحتا ھوئی۔۔۔

    ‘‘اب ھمیں دیکھنا یہ ہے کہ قرآن و حدیث اور تاریخ میں سے کون اہم و افضل ھے۔۔ الاھم فالاھم کے طور پر جو اھم ھو اس پر عمل کریں اور جس کا درجہ کم ھو اسے اعلی کے مقابلہ میں تصادم کے وقت ترک کردیں۔۔۔

    تو تاریخ یہ کہتی ھے کہ ھم انھیں خاطی سمجھیں کہ ان سے امت میں انتشار ھوا اور نقصان ھوا اور انھیں معاذ اللہ مجرم جانیں مگر قرآن و حدیث ہم سے یہ چاہتے ہیں کہ ہم تمام صحابہ سے محبت کریں۔۔۔ان کی تعظیم و توقیر کریں۔۔ انکی بد گوئی نہ کریں۔۔۔ان میں سے کسی کے تعلق سے اپنے دل میں کوئی میل نہ رکھیں۔۔۔۔

    تو اب یہ تصادم کی صورت ھوئی۔۔۔۔’’

    ‘‘تطبیق چونکہ ممکن نھیں۔ ۔لھذا ایک کو ترک کرینگے۔۔۔اور ترک ادنی کو کیا جاتا ھے لھذا ہم نے دیکھا کہ تاریخ قرآن و حدیث کے مقابلہ بہت ادنی ہے تو ہم نے تاریخ کے تقاضہ و اقتضا کو ترک کیا اور قرآن و حدیث کے تقاضہ اقتضا اور تاکید حکم کو قبول کرتے ہوئے تمام صحابہ کو نجوم ھدایت مانا جانا اور قبول کیا کہ ہم کسی کے تعلق سے زبان طعن نہیں کھولیں گے بلکہ سب کا ذکر خیر کے ساتھ کرینگے’’ انتھی قولہ

    غلام غوث صدیقی دہلوی


    By Ghulam Ghaus Siddiqi غلام غوث الصديقي - 6/5/2018 2:27:51 AM



  • غلام غوث صدیقی صاحب!

    حضرت عمار بن یاسر رضی اللہ عنہ جلیل القدر صحابی ہیں جن کی شہادت حضرت امیر معاویہ کے لشکر کے ہاتھوں ہوئی اور بھی کئی صحابہ کی شہادت ان کے لشکر کے ہاتھوں ہوئی، اس پر آپ کیا کہتے ہیں؟


    By Zaid Ansari - 6/4/2018 10:30:56 PM



  • زید انصاری صاحب ! Zaid Ansari sb

    یہاں تین باتیں قابل غور ہیں ؛

    پہلی بات تو یہ کہ آپ نے اپنے سوال میں جس آیت کریمہ کے حوالے سے اپنی گفتگو پیش کی ہے  اس آیت کریمہ کے متعلق جمہور مفسرین فرماتے ہیں کہ یہ آیت اس شخص کے بارے میں جو توبہ نہ کرے (دیکھئے بیضاوی جلد ۱ صفحہ ۲۳۱)

    اللہ تعالی نے قرآن مجید میں ارشاد فرمایا : (وانی لغفار لمن تاب ) ترجمہ : جو شخص توبہ کرے میں اس کو ضرور بخشنے والا ہوں  (سورہ طہ : ۸۲)۔توبہ کرنے والے کی بخشش ہو جاتی ہے ۔اس سلسلے میں بے شمار آیتیں ہیں۔احادیث مبارکہ سے بھی اس کا ثبوت ملتا ہے ۔ایک حدیث پاک میں ہے سو آدمیوں کے قاتل نے جب سچے دل سے توبہ کی تو اللہ تعالی نے اسے بخش دیا  (بخاری ج ۲ ص ۳۵۹، المستند ص ۲۵۷)

    یہاں یہ بھی ذہن نشین کر لیجیے کہ  یہ آیت اس شخص کے لیے ہے جس نے مسلمان کے قتل کو حلال سمجھا ۔ (دیکھئے ابن جریر ج ۴ پارہ ۵، ص ۲۶۶،  بیضاوی ج ۱ ص ۲۳۱)

    دوسری بات یہ ہے کہ اعمال کا دارو مدار نیت پر ہوتا ہے ۔بخاری شریف ج ۲ ص ۹۵۹ میں دیکھئے کہ اچھی نیت سے اپنی لاش جلانے کی وصیت کرنے والا بخشا گیا  اور مسلم شریف ج ۲ ص ۱۴۰ پر دیکھئے تو معلوم ہوگا کہ بری نیت سے جہاد کرنے والا اور علم پڑھانے والا جہنم میں گیا ۔

    مولی علی اور امیر معاویہ رضی اللہ عنہما دونوں کی نیت درست تھی۔حضرت ابو دردا  اور حضرت ابو امامہ رضی اللہ عنہما نے سیدنا علی اور حضرت امیر معاویہ رضی اللہ عنہما کے درمیان صلح کرانے کی زبردست کوشش فرمائی ۔جب وہ حضرت امیر معاویہ رضی اللہ عنہ کے پاس گئے تو انہوں نے فرمایا کہ میری جنگ صرف عثمان (رضی اللہ عنہ) کے خون کی وجہ سے ہے اور علی (رضی اللہ عنہ) نے قاتلوں کو پناہ دے رکھی ہے ، لہذا ان کے پاس جاو اور ان سے کہو کہ ہمیں عثمان کے قاتلوں سے خون کا بدلہ دلوائیں ،  اہل شام میں سب سے پہلے میں ان کے ہاتھ پر بیعت کروں گا  (دیکھئے : البدایہ والنہایہ ج ۷ ص ۲۴۹)

    مولی علی رضی اللہ عنہ خود فرماتے ہیں کہ ہمارے اور معاویہ (رضی اللہ عنہ) کے درمیان اور کوئی اختلاف نہیں تھا ، صرف خون عثمان (رضی اللہ عنہ) کے بارے میں غلط فہمی ہو گئی تھی ۔(حاصل نہج البلاغۃ : ص ۴۲۴)

    غلط فہمی ہی ایک وجہ ہے کہ رسول اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے اتنی قتل و غارت  کے بعد بھی انہیں مسلمان قرار دیا ہے ۔ صحیح بخاری کی حدیث کے الفاظ ‘‘فئتین من المسلمین ’’ (یعنی مسلمانوں کے دو گروہ)  اسی بات کی طرف کی اشارہ کرتے ہیں  (بخاری ج ۱ ص ۵۳۰)۔ تو جسے نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم مسلمان قرار دیں ، اور جو شخص بحالت اسلام نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کی زیارت کی ہو وہ صحابی ہے ، لہذا ہمارا عقیدہ یہ ہے کہ وہ جنتی ہے اور جو شخص ان کو مغضوب ، ملعون یا جہنمی کہے وہ  خود اکابر اہل سنت کے نزدیک ملعون ہے جو نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کی صریح مخالفت کر رہا ہے ۔

    تیسری بات یہ کہ حدیث پاک میں ہے کہ حضرت بن قیس فرماتے ہیں کہ میں حضرت علی (رضی اللہ عنہ) کی مدد کے لیے گھر سے نکلا ، راستے میں میری ملاقات ابو بکرہ سے ہوئی ، انہوں نے پوچھا کہاں جا رہے ہو؟ میں نے کہا رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے چچا زاد بھائی کی مدد کرنا چاہتا ہوں ۔انہوں نے فرمایا اے احنف! واپس چلا جا ۔میں نے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کو فرماتے ہوئے سنا ہے کہ : اذا تواجہ المسلمان بسیفھما فالقاتل والمقتول فی النار ’’ ترجمہ : جب دو مسلمان تلواریں لے کر آمنے سامنے آجائیں تو قاتل اور مقتول دونوں جہنمی ہیں  (مسلم ج ۲ ص ۳۸۹، بخاری ج ۱ ص ۹)

    تو جناب زید انصاری صاحب !

    اس حدیث کو اگر آپ کی نگاہ  سے پڑھا جائے تو دونوں طرف کے  مسلم لشکر معاذ اللہ جہنم میں جا رہے ہیں ، خواہ حق پر کوئی بھی ہو۔علمائے اہل سنت یہاں تاویل سے کام لیتے ہیں اور اسی طرح  وہ حدیث عمار میں بھی  تاویل کرتے ہیں ، اور ان دونوں جگہوں پر تاویل درست و مقبول۔تو معلوم ہوا کہ اگر مذکورہ بالا حدیث میں تاویل ضروری ہے تو یہی تاویل حدیث عمار میں بھی ضروری ہے ۔ اگر آپ  کے نزدیک اول الذکر میں  تاویل درست تو حدیث عمار میں  ایسی تاویل کیوں درست نہیں؟!

    یہاں اس مضمون سے پیدا ہونے والے ایک مغالطہ کا ازالہ کرنا بھی از حد ضروری ہے ۔ مولانا غلام رسول دہلوی صاحب  مولانا ڈاکٹر علیم اشرف جائسی کے حوالے سے لکھتے ہیں کہ ہماری پریشانی دو چیزوں میں پوشیدہ ہے : پہلی یہ کہ ہم   کتب فقہ ، خطابات و کتب فضائل پر انحصار کرتے ہوئے   اپنے اعتقادی ، کلامی اور فلسفی معاملات کو زیر بحث لاتے ہیں۔  دوسری یہ کہ ہم اپنے شیوخ وعلما پر اس قدر اندھی تقلید کے ساتھ اعتماد کرتے ہیں کہ ہم ان کے بیانات  کوعصمت کے مترادف بنا دیتے ہیں۔یہاں تک کہ ہم ان سے ، خاص طور پر اس امت کے اوائل کے لوگوں سے ،صدور خطا کے امکان کا بھی تصور نہیں کرتے ۔اور اگر کوئی چیز ثابت ہو جائے جو ہمارے زعم و ادراک کے مخالف ہو تو ہم یا تو سکوت اختیار کر لیتے ہیں یا تو  تاویل کی راہ نکالتے ہوئے ہم اپنے موقف کو صحیح ثابت کر دیتے ہیں اور کبھی کبھی ہم مناظرہ کی حد تک چلے جاتے ہیں ۔اس سلسلے میں مثالیں بہت ہیں ؛ جن میں سے ایک جنگ جمل ہے ۔  

    مولانا علیم اشرف جائسی نے اپنے اس موقف کا اظہار فیس بک پر  عربی زبان میں کیا تھا  جس کا انگریزی ترجمہ مولانا غلام رسول صاحب نے اپنی تایید کا اظہار کرتے ہوئے کیا ہے ۔اصل عبارت یوں ہے : ‘‘ان مشكلتنا تكمن في شيئين اثنين: اولهما اننا نعتمد في القضايا العقدية والمسائل الكلامية على كتب الفقه والمحاضرات وكتب الفضايل والخطب’’ (اردو ترجمہ : یعنی  ہماری پریشانی دو چیزوں میں پوشیدہ ہے : پہلی یہ کہ ہم   کتب فقہ ، خطابات و کتب فضائل پر انحصار کرتے ہوئے   اپنے اعتقادی ، کلامی اور فلسفی معاملات کو زیر بحث لاتے ہیں ) ۔غلام رسول صاحب نے جو انگریزی ترجمہ پیش کیا ہے اس میں فن ترجمہ کے اعتبار سے کوئی غلطی نہیں ، لیکن چونکہ مغالطہ تو اصل عبارت سے پیدا ہو رہا ہے جو ترجمہ میں بھی  جوں کا توں ہے۔

    مولانا جائسی   صاحب کی عبارت سے بہت سارے اعتراضات پید اہوتے ہیں ؛ اگر بقول ان کے  اعتقادی ، کلامی اور فلسفی معاملات کو زیر بحث لاتے وقت  کتب فقہ ، خطابات و کتب فضائل پر انحصار کرنا  مسئلہ کی پریشانی کا باعث ہے تو  مذکورہ  کتب کے علاوہ وہ کونسی کتابیں ہیں جن سے انہیں مولی علی رضی اللہ عنہ اور امیر معاویہ رضی اللہ عنہ کے معاملہ کو سمجھنے میں پریشانی نہیں ہوئی ؟  اگر وہ قرآن و سنت ہیں تو ہم سبھی جانتے ہیں علم فقہ قرآن و سنت کو سمجھنے کے لیے سب سے زیادہ اہم ہے اور اس کے لیے کتب فقہ کی طرف رجوع کرنا پڑے گا ۔اگر ان کی پریشانی کتب فقہ ، خطابات اور کتب فضائل میں  مذکور اختلافات کے سبب ہوتی ہے تو اس پریشانی کا علاج بھی تو ان کتب فقہ میں پیش کیا جا چکا ہے، جیسے مرجوح ومتروک روایات کو ترک کرنا، اگر تطبیق و تنقیح کی صورت ہو تو اختیار کر لینا ، قوی کو لینا اور ضعیف کو ترک کر دینا وغیرہ ۔تو اس طرح کے علاج سے ہماری ساری پریشانیوں کا حل ہو جاتا ہے ۔اگر جائسی صاحب یہ بات اپنے موقف کی تایید اور خلاف موقف کی تردید میں کر رہے ہیں تو ان کی عبارت خود ان کے لیے معترض ثابت ہوگی جو نہ انہیں اور نہ ہی مولانا غلام رسول صاحب کو مفید کو ہوگی ۔

    مولانا جائسی صاحب مزید کہتے ہیں:

    وثانيهما اننا نعتقد في مشائخنا واساتيذنا بماهو شبيه بالعصمة فلا نستطيع ان نتصور صدور الخطا والاثم من هم فوقهم ولا سيما الجيل الاول من هذه الامة واذا ثبت شيئا ما یخالف تصوراتنا بل اوهامنا فنلجا عادة اما الى الصمت واما الى التاويل واما الى السباب . و ان الامثلة بهذا الصدد كثيرة نكتفي بواحد۔  ترجمہ :  دوسری یہ کہ ہم اپنے شیوخ وعلما پر اس قدر اندھی تقلید کے ساتھ اعتماد کرتے ہیں کہ ہم ان کے بیانات  کوعصمت کے مترادف بنا دیتے ہیں۔یہاں تک کہ ہم ان سے ، خاص طور پر اس امت کے اوائل کے لوگوں سے ،صدور خطا کے امکان کا بھی تصور نہیں کرتے ۔اور اگر کوئی چیز ثابت ہو جائے جو ہمارے زعم و ادراک کے مخالف ہو تو ہم یا تو سکوت اختیار کر لیتے ہیں یا تو  تاویل کی راہ نکالتے ہوئے ہم اپنے موقف کو صحیح ثابت کر دیتے ہیں اور کبھی کبھی ہم مناظرہ کی حد تک چلے جاتے ہیں ۔اس سلسلے میں مثالیں بہت ہیں۔

    یہاں  جائسی صاحب کے اعتراض کا انطباق خود ان کے اوپر ہو سکتا ہے کیونکہ یہ ان کا اپنا زعم ہے ۔رہی بات اہل سنت والجماعت کی تو عصمت انبیائے کرام کے لیے ثابت ہوئی اور کوئی اس کا قائل نہیں کہ شیوخ و علما کے بیانات امکان خطا سے خالی ہیں ۔یہ مغالطہ ہے جس کا ازالہ بہت ضروری ہے ۔ہاں اہل سنت کے یہاں قوی و ضعیف روایات و بیانات کا اعتبار ہوتا ہے ، اس کا علم بھی ڈاکٹر جائسی صاحب کو ہے ۔اگر کسی قوی روایت کو اپنا لیا جائے تو اس کا مطلب ہرگز نہیں کہ وہ امکان خطا سے خالی  ہے ، چونکہ خطا کا  کا امکان ضعیف، مرجوح و متروک میں زیادہ ہوتا ہے اس لیے اہل سنت  اسے نہیں اپناتے ۔ امکان خطا سے خالی تو نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم ہیں اور ان کی احادیث پر صحیح و ضعیف کا اطلاق ان احادیث کی اسناد تک ہی سمت ہے ۔متن میں تو تطبیق و تنقیح وغیرہ کے علوم استعمال ہوتے ہیں ۔

    اس کے علاوہ کتب تاریخ و روایات میں اختلاف مولی علی رضی اللہ عنہ و حضرت امیر معاویہ رضی اللہ عنہ کے مابین مشاجرت کے متعلق بیان کردہ واقعات میں ہے ۔رہی بات اہل سنت کے موقف کی تو یہ سب پر واضح ہے کہ حق مولی علی  رضی اللہ عنہ کے ساتھ لیکن امت مسلمہ کو یہ حق نہیں پہونچتا کہ وہ  صحابی رسول  معاویہ رضی اللہ عنہ کے متعلق بد گمانی یا لعن و طعن کرے ۔ (لہذا جو لوگ بھی فیس بک پر مولانا جائسی صاحب کے کمینٹ کو پڑھنے کے بعد حضرت امیر معاویہ پر طعن کر رہے ہیں وہ غلط ہیں اور مولانا جائسی صاحب کے اوپر لازم کہ وہ لاعن و طاعن کا رد کریں کیونکہ مغالطہ ان کے کمینٹ سے ان کے چاہنے والوں کے درمیان ہو رہا ہے ) رہی بات تاویل کی تو یہ دونوں طرف ہوتی ہے ایسا نہیں کہ صرف امیر معاویہ رضی اللہ عنہ کے متعلق ہی اس کا دروازہ کھولا جاتا ہے ،جیسا کہ اوپر گذرا ۔اب اگر اہل سنت کے اکابر علما کی تحقیق جو قرآن و سنت کی صحیح ترجمانی کرتی ہے اسے کوئی شخص پسند کر لے تو اسے اندھی تقلید سے تعبیر کرنا درست نہیں ۔اگر  یہ اندھی تقلید ہے تو مولانا غلام رسول دہلوی صاحب خود فیصلہ کریں کہ انہوں نے مولانا جائسی صاحب کی عبارت کی تایید کی تو کس ‘‘اندھی تقلید’’ کی بنا کر کی ؟کیا دہلوی صاحب نے تمام روایات  و واقعات پر نظر کرنے کے بعد کی ؟ اگر وہ نظر کرتے  ان کے مضمون سے ظاہر ہو جاتا ۔انہوں نے صرف مولانا جائسی صاحب کی تقلید کی ۔ تو اگر روایات  و واقعات مکمل طرح سے  نظر  نہیں کی تو اندھی تقلید ہوئی اور اگر نظر کی تو کیوں نظر کی حالانکہ  جائسی صاحب کے نزدیک  کتب فقہ و فضائل پر انحصار کرنے سے پریشانی لاحق ہوتی ہے  ۔

    اگر مولی علی مشکل کشا رضی اللہ عنہ اور امیر معاویہ رضی اللہ عنہ کے مابین  ہونے والے اختلافی واقعہ کو سمجھنے میں پریشانی لاحق ہو رہی ہے تو کیوں نہ قرآن مجید  کی  قطعی الثبوت وقطعی الدلالۃ والی آیت پر انحصار کر لیا جائے  جو تمام صحابہ کرام کے متعلق حسن ظن کی تعلیم دیتی ہے اسے اپنا کر امیر معاویہ سمیت تمام صحابہ کرام رضی اللہ عنہم کے متعلق حسن ظن رکھا جائے ۔رہی بات وہ لوگ جنہیں اللہ رب العزت کی توفیق سے اس مسئلہ میں  قرآن و سنت اور کتب فقہ و فضائل  کے موقف سمجھنے میں پریشانی نہیں ہوتی  تووہ یہاں تک گئے کہ حق مولی علی رضی اللہ عنہ کے ساتھ لیکن امیر معاویہ رضی اللہ عنہ  بھی ہمارے سردار  اوران پر طعن و لعن کرنے والا خود ملعون ۔ اب اگر کوئی تاویل کی بات کرے تو بعض روایات میں اکابر اہل سنت  نے تاویل کی ضرورت کو سمجھا  تو وہ دونوں  جانبین  تاویل کی ضرورت کو سمجھے، جیسا کہ شروع میں گزرا ۔

    غلام غوث صدیقی      


    By Ghulam Ghaus Siddiqi غلام غوث الصدیقی - 6/4/2018 2:31:13 AM



  • قرآن مجید میں اللہ تعالی نے ارشاد فرمایا ہے کہ ایک مومن کو جان بوجھ کر  قتل کرنے والا ہمیشہ جہنم میں رہے گا ۔ایسے قاتل پر اللہ تعالی کا غضب و لعنت ہے اور اس کے لیے بہت دردناک عذاب تیار کیا ہوا ہے ۔لہذا اس آیت کریمہ کی روشنی میں دیکھا جائے تو  جس  نے خلیفہ راشد سے بغاوت کرکے بے شمار صحابہ کا قتل عام کرایا وہ کس قدر اللہ تعالی کے غضب و لعنت کا مستحق ہوگا۔کیا ایسا شخص جنتی ہے یا جہنمی ؟


    By Zaid Ansari - 6/3/2018 11:32:43 PM



Compose Your Comments here:
Name
Email (Not to be published)
Comments
Fill the text
 
Disclaimer: The opinions expressed in the articles and comments are the opinions of the authors and do not necessarily reflect that of NewAgeIslam.com.

Content