certifired_img

Books and Documents

Urdu Section (05 Aug 2010 NewAgeIslam.Com)



ظہور مہدی کا انکار ایک کھلی گمراہی

By Maulana Nadeemul Wajidi

The traditions quoted in the previous article were derived from Bukhari and Muslim apart from other books of hadiths. Now some other hadiths are reproduced that are present in Bukhari and Muslim. Though the name of Mehdi is not mentioned in the hadiths, the scholars of hadiths have meant Hadhrat Mehdi by the personality mentioned therein because many other traditions corroborate the content of those hadiths word by word. For example, Abu Hurairas says: “Hardhat Muhammad (PBUH) said, What will be your position when Jesus Christ will descend amidst you at a time when your imam will be present amidst you?”( Sahih Al Bukhari:3/1272, Raqm-al-Hadith: 3265, Sahih Muslim 1/135, Raqm al Hadith 155). A similar hadith is quoted by Jabir bin Abdullah in the following words: “When Jesus Christ descends, the Emir of the Muslims will say to him, “Please come and lead our prayer (namaz).”  Jesus will say, “No, (One among you should lead the prayer). The Emir of the Muslims will be from among them. This is an honour for the Muhammadi ummah from God.” ( Al mannar al munif la bin al qayyim:147). This hadith is also present in Muslim Sharif without the mention of Mehdi. (Please refer to Sahih Muslim: 1/137, Raqm al Hadith 156).

Although the name of Mehdi is not mentioned in the hadith of Muslim, all the exponents of Muslim Sharif have written in their books that the person who will lead the prayers ( conduct the imamat) is Hadhrat Mehdi.( Please refer to Akmalul Muallam, author Abu Abdulllah Muhammad bin Khalfa Al Maliki: 1/268; Marqatul Mafateeh  Mulla Ali Qari:1/232; Faizul Bari Lil Imam Anwar Shah Al Kashmiri:4/45; Fathal Malham Sharah Sahih Muslim compiled by Shaikhul Islam Maulana Shabbir Ahmad Usmani : 1/303). The scholars of hadiths have adopted the same approach  while explaining the hadith of Abu Hurairah quoted earlier meaning Hadhrat Mehdi by ‘imamakum minkum’.( Refer to Fath al Bari sharah Sahih Bukhari compiled by Hafiz Ibn Hajar al Asqalani:6/611; Amdat ul Qari sharah Sahih al Bukhari compiled by Hafiz Badruddin Al Aini: 16/40). Some more traditions in this series are presented below. All these traditions are present in authentic books like Bukhari and Muslim. Although in these hadiths, the name of Mehdi is not specified but the scholars of hadith have implied Mehdi by the person mentioned in these hadiths because they have all the hadiths in consideration. In many traditions the name has been specified. The only way to establish link between the traditions specifying the name and the ones not specifying it is to juxtapose them and imply Hadhrat Mehdi:

“Hadhrat Jabir bin Abdullah is quoted as saying, “very soon money and foodgrain will be barred from reaching Iraq.” The audience enquired, “Who will put obstacles? He replied, “Ajami”( the non-Arabs). After saying this, Hadhrat Jabir paused for a while then said, “Very soon, the arrival of dinar and foodgrain will be blocked from reaching Syria.” We (the audience) asked, “Who will do this?” He said, “The Romans”. After this he said, “The Prophet (PBUH) said that there will be a caliph in his ummah who will distribute wealth without measure among the ummah and will not keep account”( Sahih Muslim: 4/2234; Raqmul Hadith:2913). A tradition of the same content is quoted by Hadhrat Abu Huraira (Sahih Muslim:4/2220; Raqmul Hadith:2896). The scholars of hadiths are of the opinion that the caliph mentioned in these traditions is no other than Hadhrat Mehdi because in other traditions, it is said that during his caliphate, Hadhrat Mehdi will distribute topfull of wealth among his ummah and will not deem it necessary to count and measure as production, booty and victories will come in such great measure that the treasury will be full.( Please refer to the tradition of Abu Khidhri with reference to Mustadrak al Hakim:4/557, Majma uz zawayed:7/313). This tradition of Abu Khidhri is also present in Muslim Sharif though the name of the caliph is not mentioned therein. He says, “There will be a caliph among you who will give out topfull of wealth and booty without counting.”(Sahih Muslim:4/2235, Raqmul Hadith:2914). Discussing these traditions Hadhrat Maulana Badr-e-Alam Mahajir Madani writes,” It is evident from the hadiths of Sahih Muslim that there will be a caliph among the Muslims whose reign will see extraordinary prosperity. When Jesus Christ will come down from the heavens, the caliph will already have stood up to lead the namaz. Upon seeing Jesus Christ he will move backwards making room for him to lead the prayer. Jesus will say, “Since you have already taken the lead, you have the right to conduct the prayer. This is an honour for this ummah”. All these attributes have been mentioned in the sahih hadiths in which the scholars of hadith have no doubt. Now the only question remains is: Is the caliph Hadhrat Mehdi or someone else? In the hadiths of the second category, it is specifically said that Hardhat Mehdi will be the caliph. In my view, when the hadiths of Sahih Muslim have mentioned the caliph, then the hadiths of the second category with the specification of the name and the same details should be considered akin to the hadiths of Sahih Muslim. So now if it is said that the Proof of Hadhrat Mehdi is present in Sahih Muslim, there is room for justification (Tarjuman al sunnah).

Hadhrat Aiysha says,” One day during his sleep, there was a commotion in the Holy Prophet’s body(PBUH). I said, “O Prophet of Allah! Today you did what I never saw before”. He(PBUH) said that it is surprising that some people from my ummah will set out towards the Kaaba to  fight a man from Quraish until they will be sunk into the ground at Beda’a. I asked, “O Prophet of Allah, there are all kinds of people on the way.” He(PBUH) said, “Yes, some of them will indeed be fighters, while some of them will be compelled to join and some of them will be travellers. All of them will die but their fate will be decided according to their intent (Sahih Muslim:4/2210, Raqmul Hadith:2884).

A similar tradition is quoted by Umm-e-Salma. The narrator of this tradition Abdullah Ibn Qibtiya says that during the battle of Abdullah Bin Zubair (R.A.), Haris Ibn Rabeeah and Abdullah bin Safwan, visited the mother of the ummah, Umm-e-Salma. I was also with them. The two asked Umm-e-Salma about the army that would be sunk into the ground. Hadhrat Umm-e-Salma replied that the Holy Prophet(PBUH) said that a man seeking refuge will  take refuge in the Kaaba and an army will set out to fight him. When the army will reach Beda’a, it will cave into the ground.” I asked,” O Prophet of Allah, even those who will join the army on compulsion?”. He (PBUH) said, “They will also be sunk in but they will be raised on the Day of Judgement according to their intent.”(Sahih Muslim:4/2208, Raqmul Hadith:2882).

Yet another hadith says, “Thus spake that a man will take refuge in Baitullah and an army will set out to attack him and when the army will reach the place called Beda’a, the people in the middle will be sunk in. The people in front of the army will call out to those in the end but no one will survive except the one who gave news about them.”(Sahih Muslim:4/2209, Raqmul Hadith:2883).

While discussing these traditions, Hadhrat Maulana Hussain Ahmad Madani writes,” Although, the caliph Mehdi has not been mentioned specifically, other Sahih hadiths clearly state that the person taking refuge in the Kaaba will be Hadhrat Mehdi. The army of Sufiani will set out from Syria to attack him but will be sunk in the ground at Beda’a. Similarly, it is also stated clearly in Sahih Hadiths that the person who will give out topfull of wealth and booty is indeed Caliph Mehdi. Therefore, those hadiths clearly hint at Hadhrat Mehdi. (Al khalifatul Mehdi fil ahadith al sahihah: page 113).

Another misconception which has been spread is that Jesus Christ and Hadhrat Mehdi are two names of the same person. Maulana Wahiduddin Khan’s point of view is the same. He says that a particular hadith implies that Jesus Christ and Hadhrat Mehdi are two symbolic names of a single personality. The person to appear in the last phase of the world is called Rajal Momin in some traditions, Mehdi in some others and Jesus in quite a few. Therefore, all these three words connote three aspects of a single personality rather than three different personalities. This theory is concocted which was produced by people earlier as well. The scholars of hadiths spent their whole life in proving this theory wrong. They compiled separate hadiths about these two different personalities and wrote articles and books on them proving that they are two different personalities, though they belong to the same time period and at a particular point of time they will even come together. It is surprising that Maulana Wahiduddin Khan ignored all the hadiths and stuck to the tradition of Ibn Maja. Before we present the traditions that declare the two as independent personalities, let’s analyse the tradition Maulana Wahiduddin Khan has taken recourse to.

The tradition Maulana Wahiduddin Khan has hinted at is narrated by Hadhrat Anas bin Malik who quotes it thus: “The Holy Prophet(PBUH) said that things will become tougher, the world will return to anarchy, people will indulge in miserliness, the Doomsday will visit the worst of the people and Mehdi is Issa bin Maryam.”(Sunan Ibn Maja: 2/1340, Raqmul Hadith 4039). This tradition gives the hint that Hadhrat Mehdi and Jesus Christ are not different personalities but the same. One rebuttal to this tradition is that it is a weak hadith because its authenticity depends on Mohammad bin Khalid al Jundi about whom Hafiz Zahbi  has quoted Azdi as saying that Mohammad bin Khalid is munkirul hadith (denier of hadiths); Abu Abdullah al Hakim has declared it anonymous. Hafiz Zahbi is himself of the view that la Mehdi wa la Issa bin Maryam is a statement of denial (Mizanul Aitdaal:3/535); Hafiz ibn Taimiyya has termed this tradition as weak (Minhajul Sunnah: 4/211); Hafiz ibn Hajar has termed it as anonymous( Taqreeb al Tehzib:2/157). Hafiz San’ai has termed this hadith as mauzoo’(fabricated)(Al ahadith al mauzooah lil saukani:195). Allama Sayuti has termed its narration as weak in his book and has also cited a statement of Allama Qurtubi( Al arfal wardi fi akhbar al Mehdi:2/274). The renowned researcher of the modern times, Sheikh Nasiruddin al Albani has written that this hadith is rejected. The members of the Qadiani sect have used this hadith in support of the claim to prophethood by Mirza Ghulam Ahmad Qadiani who had claimed that he was Jesus, the son of Mary. He later claimed that he was Jesus Christ as well as Mehdi the promised (Silsilatul Ahadith al zayeefa: Raqmul hadith 77).

This tradition is not attributable also for the reason that Ibn Maja himself has quoted hadiths which prove that Mehdi is different from Jesus. For example, the hadith: al Mehdi min walad e Fatima (Mahdi is one of the sons of Fatima) (Sunan ibn Maja: 2/1368, Raqmul Hadith 4086). Secondly, there are a series of hadiths in which his parentage, appearance, manners and behaviour, age, the duration of his caliphate have been stated in great detail. On the other hand, the traditions about Jesus Christ also are in abundance in which many facts have been given in detail. On studying the traditions about the two personalities it becomes quite evident that the two are different. From some traditions, their being two different persons is evident prima facie. For example, a hadith runs thus: “The Holy Prophet (PBUH) says: “The ummah whose beginning is marked by me, the end is marked by Jesus and the middle by Mehdi can never perish”.(Kanzul Amal:14/266, Raqmul Hadith 3827).

Similarly, a tradition narrated by Hadhrat Abu Amamah runs thus: “One day the Holy Prophet spoked about Dajjal (anti-Christ) in his khutbah (sermon). On the occasion he also said that Madina will be cleansed of bad people in the same way as iron furnace cleans iron of rust. The day will be called the Day of Salvation.” Umme Sharik (from the audience) asked, “Where will be the Arabs that day?” He (PBUH) replied, “The Arabs will be less in number and most of them will populate Jerusalem. Their imam, Mehdi will be a noble person. One morning when their imam will move forward to conduct the prayer, all of a sudden Jesus, the son of Mary will descend from the heavens. The imam will retreat so that Jesus can lead (the prayer). Jesus will put his hand on the middle of his shoulders and say, go ahead, the iqamat has been called for you. So, the imam of the Muslims will lead him in the prayer. (Ibn Maja:2/1359: Raqmul Hadith 4077).

The summary of what has been stated in the paragraphs above is that in the final period, God will help and defend the Deen (Islam) through a noble caliph and reformer who will be from ahl-e-Bayt . His reign will span over seven years. Before his advent, lawlessness and anarchy will rule supreme. His mode of governance will turn the world into a cradle of peace and justice. There will be an augmentation in prosperity. The ummah will be bestowed with a lot of material wealth. Agricultural production will increase. The treasuries will be opened to the public. People will take whatever wealth they would like to. His nickname will be Mehdi. He will be a descendant of Hadhrat Hassan(A.S.), son of Hadhrat Ali(R.A.) and Hadhrat Fatima(R.A.). Like the Holy Prophet(PBUH), his name will also be Muhammad. Like the name of the prophet’s father, his father’s name will also be Abdullah. Like the name, he will also have close resemblance to the face, appearance and behaviour of the Holy Prophet(PBUH). He will spend the bigger part of his life in Medina, though there is no unanimity on his place of death. Traditions have it that he will die at the age of 49 and Muslims will offer his namaz-e-janazah (funeral prayer). He will migrate from Medina to Syria to defend and uphold the faith. During that period, Damascus and the surrounding areas will be under the rule of a tyrant ruler called Sufiani. From there he (Mehdi) will go to Makkah. People will recognise him and  pay allegiance to him between Hajr-e-Aswad and maqaam-e-Ibrahim. On the other hand, the ruler of Syria will send a troop to fight him but will be sunk into the earth at Beda’a. When Sufiani will come to know of the fate of his troops, he will himself set out with a huge army for Makkah but with the help of God, Hadhrat Mehdi and his followers will defeat Sufiani’s army. Subsequently, Hadhrat Mehdi will establish the holy caliphate and govern according to the Sharia. He will rule the entire Arab, Damascus being his capital. During his rule, he will fight a prolonged battle with the Roman Christians. It will continue for six years and end with the victory of the Muslims and defeat of the Christians. Countless people will die in the battle. In the sixth year, Dajjal will appear. He will go round the world including Makkah and Medina and cause schism and bloodshed. When Dajjal will reach Damascus, Jesus Christ will descend from the heavens on the earth to decide his fate. He will descend on the white minaret located in the eastern part of Damascus. At that particular moment, Hadhrat Mehdi will have already stood on the prayer mat to lead the prayer. Jesus Christ will offer namaz in his leadership, will chase Dajjal till Palestine and kill him. Muslims will also kill the Jews till the last person. After this, Jesus will break the Cross which is the symbol of Christianity, slaughter the pig and invite people towards Islam. There will be no one on earth who will not come into the fold of Islam. Then Hadhrat Mehdi will pass away and Jesus Christ will rule over the Muslims. All these events are corroborated by Sahih Hadiths. The deniers of Mehdi should tell where they find the aspect of symbolism in the traditions. Is there any event whose incidence can be considered impossible or is it necessary that if our understanding does not accept something we should deny it. The theory of the appearance of Hadhrat Mehdi has been a part of our belief for the last 1400 years and we cannot turn our face from it on the suggestions of some Wahiduddin Khan or Ghulam Ahmad Qadiani.

Source: Sahafat, New Delhi

URL: http://www.newageislam.com/urdu-section/ظہور-مہدی-کا-انکار-ایک-کھلی-گمراہی/d/3242

مولانا ندیم الواجدی

پچھلے مضمون میں جوروایات نقل کی گئی ہیں وہ بخاری ومسلم کے علاوہ دوسری کتب حدیث سے ماخوذ تھیں،اب کچھ احادیث ایسی بیان کی جاتی ہیں جو بخاری ومسلم میں مذکور ہیں، اگر چہ ان میں مہدی کے نام کی صراحت نہیں ہے ،لیکن شارحین حدیث نے اس شخص سے جس کاذکر ان روایات میں ہے مہدی ہی کی شخصیت مرادلی ہے، کیونکہ بہت سی دوسری روایات سے ان احادیث کے مضمون کی حرف بہ حرف تائید ہورہی ہے،مثال کے طور پر حضرت ابوہریرہؓ کی روایت ہے کہ سرکار دوعالم ﷺ نے ارشاد فرمایا :’’ اس وقت تمہارا کیا حال ہوگا جب عیسیؑ ٰ ابن مریمؑ تمہارے درمیان نازل ہوں اس حال میں کہ تمہارا امام تم ہی میں سے ہوگا‘‘۔(صحیح البخاری :1272/3،رقم الحدیث:3265، صحیح مسلم :135/1رقم الحدیث :155)اسی طرح کی ایک حدیث حضرت جابر بن عبداللہ سے بھی مروی ہے اس کے الفاظ یہ ہیں:’’عیسیٰ ابن مریم علیہم السلام نازل ہوں گے تو مسلمانوں کے امیر مہدی ان سے کہیں گے تشریف لائیں اور ہمیں نماز پڑھائیں ،حضرت عیسیؑ ٰ فرمائیں گے نہیں ، (تم خود امامت کرو) مسلمانوں کے امیر مسلمانوں ہی میں سے ہوں گے۔ یہ اس امت محمدیہ کے لیے اللہ تعالیٰ کی طرف سے ایک اعزاز ہے۔‘‘(المنار المنیف لابن القیم :147)۔مہدی کی صراحت کے بغیر یہی حدیث مسلم شریف میں بھی مذکور ہے(ملاحظہ فرمائیں صیحح مسلم :137/1،رقم الحدیث:156(

اگرچہ مسلم کی حدیث میں مہدی کے نام کی صراحت نہیں ہے، تا ہم مسلم شریف کے تمام شارحین نے اپنی کتابوں میں لکھا ہے کہ حضرت عیسیٰ علیہ السلام کی تشریف آوری کے وقت جو صاحب امامت کریں گے وہ حضرت مہدی ہوں گے (ملاحظہ کیجئے : اکمال المعلم مصنفہ ابو عبداللہ محمد بن خلفہ المالکیؒ :268/1،مرقاۃ الفاتیح لملا علی قادری :232/1۔فیض الباری للامام انور شال الکشمیری ؒ 45/4،فتح الملہم شرح صحیح مسلم مؤ شیخ الاسلام شبیر احمد عثمانی :301/1) اس سے قبل حضرت ابو ہریرہؓ کی جو روایت ذکر کی گئی ہے اس کی شرح کے ضمن میں بھی محدثین نے یہی موقف اختیار کیا ہے کہ اس میں بھی اما مکم منکم سے مراد حضرت مہدی ہیں، (ملاحظہ کیجئے : فتح الباری شرح صحیح البخاری ،مؤلفہ حافظ ابن حجر العسقلاتی:611/6، عمدۃ القاری شرح صحیح البخاری ،مؤلفہ حافظ بدرالدین العینی :40/16)

اس سلسلے کی کچھ اور روایات حسب ذیل ہیں ،یہ تمام روایات بخاری ومسلم جیسی مستند کتابوں میں ہیں اگر چہ ان میں مہدی کے نام کی صراحت نہیں ہے، لیکن شراح حدیث نے ان روایات میں مذکورشخص کا اطلاق حضرت مہدی پر ہی کیا ہے، کیونکہ ان کی نظرتمام ذخیرۂ حدیث پر ہے، بہت سی روایات میں نام کی صراحت موجود ہے ۔ تمام روایات کے درمیان تطبیق کی صرف یہی ایک صورت ہے کہ جہاں نام کی صراحت نہیں ہے وہاں ان روایات کو سامنے رکھ کر جن میں نام صاف طور پر مذکور ہے حضرت مہدی ہی کی شخصیت مرادلی جائے ۔

’’حضرت جابر بن عبداللہ سے روایت ہے، فرماتے ہیں کہ عنقریب اہل عراق سے روپیہ اور غلہ روک لیا جائے گا، ہم نے (حاضرین نے ) عرض کیا ، کون لوگ رکاوٹ ڈالیں گے ، فرمایا عجمی ،یہ کہہ کر حضرت جابرؓ کچھ دیر خاموش رہے، پھر فرمایا، عنقریب شام کے لوگوں کے پاس دینار اور غلے کی آمد روک دی جائے گی، ہم نے (حاضرین) نے عرض کیا یہ کام کون کریں گے؟ فرمایا: رومی، پھر فرمایا کہ سرکار دوعالم ﷺ ارشاد فرماتے ہیں کہ میری امت میں ایک خلیفہ ہوگا جو لوگوں کو لبالب بھر کر مال ودولت سے نواز ے گا اور شمار نہیں کرے گا‘‘(صحیح مسلم :2234/4،رقم الحدیث:2913)۔اسی مضمون کی ایک روایت حضرت ابوہریرہؓ سے بھی نقل کی گئی ہے :(صحیح مسلم 2220/4،رقم الحدیث :2896) محدثین کی رائے یہی ہے کہ ان روایات میں جس خلیفہ کی پیشین گوئی کی گئی ہے اس سے مراد مہدی ہی ہیں، کیونکہ دوسری روایات میں نام کی صراحت کے ساتھ مذکورہے کہ وہ اپنے دور خلافت میں مسلمانوں کو لبالب بھر کردیں گے اور اس دادودہش کے موقع پر گننے اور شمار کرنے کی ضرورت محسوس نہیں کریں گے ،کیونکہ فتوحات اور غنائم اور پیداوار کی اس قدر کثرت ہوگی کہ خزانے پوری طرح بھرے ہوئے ہوں گے۔(ملاحظہ کیجئے حضرت ابوسعید خدریؓ کی روایت بحوالہ مستدرک الحاکم: 557/4،مجمع الزوائد :313/7)حضرت ابوسعید خدریؓ کی یہ روایت مسلم شریف میں بھی مذکورہے اگر چہ اس میں بطور خلیفہ مہدی کے نام کی صراحت نہیں ہے، فرماتے ہیں:’’تمہارے خلفاء میں سے ایک خلیفہ ایسا ہوگا بغیر گنے لبا لب بھر کر مال ودولت تقسیم کرے گا۔ ‘‘(صحیح مسلم :2235/4، رقم الحدیث :2914)۔اس طرح کی روایات پر گفتگو کرتے ہوئے حضرت مولانا بدرعا مہاجرمدنی نے لکھا ہے ’’صحیح مسلم کی احادیث سے یہ امر ثابت ہے کہ آخری زمانے میں مسلمانوں کا ایک خلیفہ ہوگا جس کے زمانے میں غیر معمولی برکات ظاہر ہوں گی، حضرت عیسیٰ علیہ السلام جب آسمان سے تشریف لائیں گے تو وہ خلیفہ نماز کے لئے مصلیٰ پر آمد ہوگا ،حضرت عیسیٰ علیہ السلام کو دیکھ کر وہ مصلیٰ چھوڑ کر پیچھے ہٹے گا مگر عیسیٰ علیہ السلام ان سے فرمائیں گے کیونکہ آپ مصلیٰ پر جائیں اس لیے اب امامت بھی آپ ہی کا حق ہے اور یہ اس امت کی ایک بزرگی ہے۔ یہ تمام صفات اور صحیح حدیثوں سے ثابت ہیں جن میں محدثین کو کوئی کلام نہیں، اب گفتگو ہے تو صرف اتنی بات میں ہے کہ یہ خلیفہ ،دوسرے نمبر کی حدیثوں میں جب اس خلیفہ کا تذکرہ آچکا ہے تو پھر دوسرے نمبر کی حدیثوں میں جب وہی تفصیلات اس نام کے ساتھ مذکور ہیں تو ان کو بھی صحیح مسلم ہی کی حدیثوں کے حکم میں سمجھنا چاہئے اس لیے اب اگر یہ کہا جائے کہ حضرت مہدی کا ثبوت خود صحیح مسلم میں موجود ہے تو اس کی گنجائش ہے۔ ترجما النسۃ :378/4(

’’ام المؤمین حضرت عائشہ صدیقہؓ روایت فرماتی ہیں کہ ایک مرتبہ سرکار دوعالم ﷺ کے جسم اطہر میں(یہ حالات خلاف معمول) کچھ حرکت ہوئی، ہم نے عرض کیا یارسول اللہ ﷺ آج آپ نے ایسا کام کیا۔ جو پہلے کبھی نہیں کیا، آپﷺ ارشاد فرمایا کہ تعجب خیز بات یہ ہے کہ میری امت کے کچھ لوگ قریش کے ایک شخص سے جنگ کرنے کے لیے خانہ کعبہ کی طرف چلیں گے، یہاں تک کہ بیداء کے مقام زمین میں دھنسا دیئے جائیں گے، ہم نے عرض کیا یا رسول اللہﷺ راستے میں تو سب طرح کے لوگ ہوتے ہیں ، آپ ؐ نے ارشاد فرمایاہاں ان میں کچھ کھلے طور پر جنگ ہوں گے، کچھ مجبور ومقہور کئے گئے ہوں گے اور کچھ مسافرہوں گے ، سب ہلاک کردیئے جائیں گے مگر ان کا حشر ان کی نیتوں کے مطابق الگ الگ ہوگا‘‘(صحیح مسلم 2210/4،رقم الحدیث:2884)۔

اسی نوعیت کی ایک روایت ام المؤمنین حضرت ام سلمہؓ سے بھی مروی ہے ،اس روایت کے راوی عبداللہ ابن قبطیہ کہتے ہیں ’’حضرت عبداللہ ابن زبیرؓ کی جنگ کے زمانے میں حارث ابن ابی ربیعہ اور عبداللہ بن صفوا ام المؤمنین حضرت ام سلمہؓ کی خدمت میں حاضر ہوئے ،میں بھی ان دونوں کے ہمراہ تھا، دونوں حضرات نے ام المؤمنین حضرت ام سلمہؓ سے اس لشکر کے متعلق سوال کیا جسے زمین میں دھنسادیا جائے گا،حضرت ام سلمہؓ نے فرمایا سرکار دوعالم ﷺ نے ارشاد فرمایاایک پناہ لینے والا خانہ کعبہ میں پناہ لے گا اور اسے لڑنے کے لیے ایک لشکر چلے گا ،جب مقام بیداء میں پہنچے گا تو اس لشکر کو زمین کے اندر دھنسا دیا جائے گا، میں نے عرض کیا یا رسول للہ !جن لوگوں کو زبردستی اس لشکر میں شامل کیا گیا ہوگا ان کو بھی دھنسا دیاجائے گا؟ آپ ؐ نے ارشاد فرمایا ہاں! ان کو بھی دھنسادیا جائے گا لیکن وہ لوگ قیامت کے دن اپنی نیت پر اٹھائے جائیں گے‘‘۔(صحیح مسلم 2208/4،رقم الحدیث :2882(

ایک اور حدیث میں ہے :’’فرمایا کہ ایک شخص اس بیت اللہ کی پناہ لے گا یہاں تک کہ ایک لشکر اس پر حملے کی غرض سے چلے گا اور جب اس لشکر کے لوگ مقام بیدا ء تک پہنچیں گے تو ان کا درمیان کے لوگوں کو دھنسا دیا جائے گا۔ اس لشکر کے وال حصے کے لوگ آخری حصے کے لوگوں کو آواز دیں گے مگر کوئی بھی باقی نہیں بچے گا سوائے اس شخص کے ان کی خبر دیا کرتا تھا‘‘۔(صحیح مسلم 2209/4،رقم الحدیث :2883)۔

اس طرح کی روایات ذکر کرنے کے بعد شیخ الاسلام حضرت مولانا حسین احمد مدنی نے لکھا ہے کہ ’’اگر چہ ان احادیث میں صراط خلیفہ مہدی کا ذکر نہیں ہے لیکن دیگر حدیثوں میں صاف طور پر مذکور ہے کہ کعبۃاللہ میں پناہ لینے والے خلیفہ مہدی ہی ہوں گے جن سے جنگ کے لیے سفیانی کا لشکر پہنچے گا تو زمین میں دھنسا دیا جائے گا،اسی طرح صحیح احادیث میں یہ تصریح موجود ہے کہ بغیر شمار کئے لپ بھر مال عطا کرنے والے خلیفہ مہدی ہی ہیں اس لیے عطا کرنے والے خلیفہ مہدی ہی ہیں اس لیے بلاریب ان مذکورہ حدیثوں میں خلیفہ مہدی کی طرف واضح اشارہ ہے اور یہ حدیثیں انہی سے متعلق ہیں ۔(الخلیفۃ المہدی الاحادیث الصحیحہ ،ص :113(

ایک غلط فہمی یہ ہے بھی پھیلائی گئی ہے کہ حضرت عیسیٰ علیہ السلام اور حضرت مہدی دونوں ایک ہی شخصیت کے دونام ہیں۔مولانا وحیدالدین خان کا نظریہ بھی یہی ہے ،وہ کہتے ہیں کہ ایک حدیث کے مطالعے سے معلوم ہوتا ہے کہ مہدی اورمسیح دونوں ایک شخصیت کے علامتی طورپر دو الگ الگ نام ہیں، آخری دور میں ظاہر ہونے والی ایک ہی شخصیت ہے، جس کو کسی روایت میں رجل مومن کہا گیا ہے اور کسی روایت میں مہدی اور کسی روایت میں مسیح ،گویا یہ تینوں الفاظ ایک ہی شخصیت کے تین پہلوؤں کو بتلاتے ہیں نہ کہ الگ الگ تین مختلف شخصیتوں کو ، یہ ایک خود ساختہ نظریہ ہے، پہلے بھی کچھ لوگوں نے یہی خیال ظاہر کیا تھا،محدثین نے اس نظریئے کے ابطال کی خاطر عمریں کھپادیں اور دونوں شخصیتوں کے متعلق الگ الگ حدیثیں جمع کر کے اور دونوں شخصیتوں پر مستقل رسالے اور کتابیں لکھ کر واضح کردیا کہ دونوں شخصیتیں الگ الگ ہیں، اگرچہ دونوں کا زمانہ ایک ہے اور دونوں کسی مرحلے میں ایک جگہ جمع بھی ہوں گے ۔حیرت ہے مولانا وحید الدین خان نے احادیث کے تمام ذخیرے کو نظر انداز کردیا اور وہ ابن ماجہ کی ایک روایت پکڑ کر بیٹھ گئے، اس سے پہلے کہ ہم وہ روایات پیش کریں جن میں دو شخصیتوں کو الگ الگ قرار دیا گیا ہے بہتر ہوگا کہ اس روایت کا جائزہ لے لیا جائے جس کا حوالہ مولانا وحید الدین خان نے دیا ہے۔

مولانا وحیدالدین خان نے جس حدیث کی طرف اشارہ کیا ہے وہ حضرت انس بن مالکؓ سے مروی ہے ، فرماتے ہیں کہ سرکار دوعالم ﷺ نے ارشاد فرمایا: ’’معاملہ سخت تر ہوجائے گا ، دنیا پسپائی کی طرف لوٹے گی ، لوگ بخل میں مبتلا ہوجائیں گے ،قیامت بدترین لوگوں پر قائم ہوگی او رمہدی عیسیؑ ٰ ابن مریمؑ ہی ہیں‘‘(سن ابن ماجہ :1340/2،رقم الحدیث:4039)۔اس روایت سے واضح ہوتا ہے کہ حضرت مہدی اور حضرت عیسیٰ علیہ السلام دو الگ الگ شخصیتیں نہیں ہیں، بلکہ دونوں ایک ہی ہیں ، اس حدیث کا ایک جواب تو یہ دیا گیا ہے کہ یہ حدیث ضعیف ہے، کیونکہ اس کی سند کا مدار محمد بن خالد الجند ی پر ہے، جس کے متعلق حافظ ذہبیؒ نے ازدی کا یہ قول نقل کیا ہے کہ محمد بن خالد منگر الحدیث ہے، ابو عبداللہ الحاکم نے اسے مجہول قرار دیا ہے ،خود حافظ دہبی ؒ کی رائے یہ ہے کہ لامہدی ولاعیسیٰ بن مریم خبر منگر ہے، (میز ان الاعتدال:535/3)حافظ ابن تیمیہؒ نے اس راوی کو ضعیف قرار دیا ہے، (منہاج السنۃ :211/4)حافظ ابن حجرؒ نے مجہول لکھا ہے، (تقریب التہذیب :157/2)حافظ صنعافی نے اس حدیث کو موضوع قرار دیا ہے، (الاحادیث الموضوعۃ للثوکافی :195)علامہ سیوطیؒ نے اپنی کتاب میں اس کی سند کو ضعیف لکھا ہے اور علامہ قرطبیؒ کے ایک قول کا بھی حوالہ دیا ہے(العرف الورثی فی اخبار المہدی :274/2)دور حاضرکے مشہور محقق شیخ ناصر الدین الالبانی نے لکھا ہے کہ یہ حدیث منکر ہے، اس حدیث کو قادیانی فرقے کے لوگوں نے مدعی نبوت مرزا غلام احمد قادیانی کے دعوے کے لیے بطور دلیل استعمال کیا ہے جس نے یہ دعویٰ کیا کہ وہی عیسیٰ ہے وہی مہدی موعود بھی ہے۔ (سلسلۃ الاحادیث الضعیفۃ ،رقم الحدیث :77(

یوں بھی یہ روایت قابل استناد نہیں ہے،کیونکہ اول تو ابن ماجہ نے خود بھی ایسی احادیث نقل کی ہیں کہ جن سے ثابت ہوتا ہے کہ مہدی الگ ہیں اور عیسیؑ ٰ دوسرے ہیں، مثال کے طور پر یہ حدیث : المہدی من ولد فاطمۃ ( سنن ابن ماجہ 1368/2،رقم الحدیث :4086)دوسری بات یہ ہے کہ حضرت مہدی کے سلسلے میں متواتر روایتیں موجود ہیں ، جن میں ان کا نام ونسب ،ان کا حلیہ ،ان کے اخلاق وعادات ،ان کی عمر ،ان کی خلافت کی مدت وغیرہ امور نہایت تفصیل سے بیان کئے گئے ہیں، دوسری طرف حضرت عیسیٰ علیہ السلام کے بارے میں بھی روایات حد تواتر تک پہنچی ہوئی ہیں اور ان میں بھی بہت سے امور مفصل انداز میں ذکر کئے گئے ہیں ۔دونوں حضرات کے متعلق روایات دیکھنے سے صاف ظاہر ہوتا ہے کہ دونوں شخصیتیں الگ الگ ہیں، بعض روایات سے ان دونوں کا الگ الگ ہونا بدیہی طور پر بھی معلوم ہوتا ہے، مثال کے طور پر ایک روایت میں ہے کہ سرکار دوعالم ﷺ نے ارشاد فرمایا:’’وہ امت ہر گز ہلاک نہیں ہوسکتی جس کے شروع میں ہوں ،آخر حضرت عیسیؑ ٰ ابن مریمؑ ہوں اور دمیان میں مہدی ہوں‘‘۔ (کنزالعمال :266/14،رقم الحدیث:38273)اسی طرح حضرت ابو امامہ بابلیؓ کی روایت میں ہے کہ ایک دن سرکار دوعالم ﷺ نے خطبہ ارشاد فرمایا اور وجال کا ذکر فرمایا ۔ اس موقع پر یہ بھی فرمایا کہ مدینہ منورہ سے خراب لوگ اس طرح باہر ہوجائیں گے جس طرح آگ کی بھٹی لوہے کا زنگ دور کردیتی ہے ،اس دن کو یوم نجات کہا جائے گا (شریک حبس) ام شریک نے عرض کیا کہ عرب اس روز کہاہوں گے، فرمایا عرب اس وقت کم ہوں گے اور ان کی بڑی تعداد بیت المقدس میں قیام پذیر ہوگی، ان کا امام مہدی ایک نیک آدمی ہوگا، ایک روز جب ان کا امام صبح کی نماز پڑھانے کے لیے آگے بڑھے گا اچانک عیسیؑ ٰ ابن مریمؑ نازل ہوجائیں گے ،یہ امام الٹے پاؤں واپس آئے گا تاکہ عیسیؑ ٰ ابن مریمؑ آگے بڑھ کر (نماز پڑھائیں )تب حضرت عیسیٰ علیہ السلام اس کے دوکاندھوں کے درمیان ہاتھ رکھ کر اس سے کہیں گے آگے بڑھو ،اقامت تمہارے ہی لیے کہی گئی ہے، اس طرح مسلمانوں کا امام ان کو نماز پڑھائے گا ( ابن ماجہ :1359/2،رقم الحدیث:4077)۔

حضرت مہدی کے ظہور کے متعلق اب تک جو کچھ بیان کیا گیا اس کا خلاصہ یہ ہے کہ آخری زمانے میں ایک خلیفہ راشد اور مجدوعصر کا ظہور ہوگا جن کا تعلق اہل بیت سے ہوگا ، ان کے ذریعہ اللہ تعالیٰ دین اسلام کی مدد اور نصرت فرمائیں گے، ان کا دور حکومت تقریباً سات سالوں کومحیط ہوگا، ان کی آمد سے پہلے دنیا میں ظلم اور ناانصافی کا دور دورہ ہوگا، ان کے طرز حکومت سے دنیا امن وسلامتی اور عدل وانصاف کا گہوارہ بن جائے گی ،خوش حالی میں اضافہ ہوگا ، امت کو بے شمار مادّی نعمتوں سے نواز جائے گا، زمین کی پیدا وار بڑھ جائے گی، خزانوں کے منہ کھول دیئے جائیں گے ،ہر شخص جس قدر چاہے گا مال ودولت حاصل کرے گا ،ان کا لقب مہدی ہوگا، حضرت فاطمۃ الزہراؓ کے جگر گوشے اور حضرت علیؓ کے بیٹے حضرت حسنؓ کی اولاد میں سے ہوں گے، ان کا نام سرکار دوعالمؓ کے اسم گرامی کے مطابق محمد ہوگا، ان کے والد کا نام عبداللہ ہوگا، نام کی طرح شکل وصورت اور اخلاق وشمائل میں بھی آپ ﷺ سے مشابہ ہوں گے ، آپ کی زندگی کا بیشتر وقت مدینہ منورہ میں گزرے گا، البتہ جائے وفات کے سلسلے میں کوئی حتمی قول موجود نہیں ہے، روایات میں صرف اتنا ملتا ہے کہ آپ 49سال کی عمر میں وفات پاجائیں گے اور مسلمان ان کی نماز جنازہ پڑھیں گے ،آپ اپنے وطن مدینہ منورہ سے اعلائے کلمۃاللہ کے لیے ملک شام کی طرف ہجرت فرمائیں گے،اس وقت دمشق اور اطراف پر ایک ظالم شخص سفیاتی حکمراں ہوگا، آپ وہاں سے مکہ مکرمہ تشریف لے آئیں گے ،لوگ ان کو پہچان کر ان کے دست حق پر حجر اسود اور مقام ابراہیم ؑ کے درمیان بیعت کریں گے، دوسری طرف شام کا حکمراں ان سے جنگ کرنے کے لئے اپنی فوج کا ایک دستہ روانہ کرے گا، مگر اسے بیداء کے مقام پر زمین کے اندر دھنسا دیا جائے گا۔ جب سفیانی کو اپنے لشکر لے کر چلے گا، لیکن اللہ کی مدد سے حضرت مہدی اور ان کی جماعت کے لوگ سفیانی کے لشکر پر غالت آجائیں گے،پھر حضرت مہدی شریعت کے مطابق احکام نافذ کریں گے اور خلافت راشدہ کا قیام عمل میں آئے گا،ان کی حکومت پورے عرب پرہوگی اور ان کا پایۂ تخت دمشق ہوگا، ان کے دور میں روی عیسائیوں سے ایک زبردست جنگ ہوگی اور مسلمانوں کی فتح اور رومیوں کی شکست پر اپنے انجام کو پہنچے گی،اس جنگ میں بے شمار لوگ لقمۂ اجل بنیں گے، ساتویں سال وجال کا خروج ہوگا، وہ مکہ اور مدینہ کے علاوہ پوری دنیا میں گشت لگائے گا اور فتنہ وفساد برپا کرے گا ،جب وجال دمشق پہنچے گا تو اس کو کیفر کردار تک پہنچانے کے لیے حضرت عیسیٰ علیہ السلام آسمان سے اتر کردنیا میں تشریف لائیں گے،آپ دمشق کے مشرقی حصہ میں واقع سفید مینارے پر اتریں گے ، اس وقت حضرت مہدی نماز پڑھانے کے لئے مصلیٰ پر پہنچ چکے ہوں گے، حضرت عیسیٰ علیہ السلام ان کی اقتدار ء میں نماز اداکریں گے ،وجال کا پیچھا کرتے ہوئے فلسطین تک پہنچیں گے اور اسے قتل کردیں گے، مسلمان بھی یہودیوں کو چن چن کر قتل کر ڈالیں گے، اس کام سے فارغ ہوکر حضرت عیسیٰ علیہ السلام صلیب تو ڑ ڈالیں گے ،جو نصرانیت کی علامت ہے، خیز یر کو قتل کردیں گے اور لوگوں کو اسلام کی دعوت دیں گے، روئے زمین پر کوئی ایسا شخص باقی نہیں رہے گا جو حلقہ بہ گوش اسلام نہ ہوگیا ہو، پھر حضرت مہدی وفات پاجائیں گے اورحضرت عیسیٰ علیہ السلام مسلمانوں پر حکومت کریں گے۔ یہ تمام واقعات صحیح روایات سے ثابت ہیں۔ منکرین مہدی بتلائیں کہ ان روایات میں ثمثیل کا پہلو کہاں سے آگیا ،کیا ان میں سے کوئی واقعہ ایسا ہے جس کا وقوع ناممکن ہو اور کیا یہ ضروری ہے کہ جو بات ہماری ناقض عقل میں نہ سماسکے ہم اس کا انکارکردیں ۔چودہ سوسال سے حضرت مہدی کے ظہور کا نظریہ بطور عقیدہ پڑھا جاتا ہے، کسی وحیدالدین خان یاکسی غلام احمد قادیانی کے کہنے سے اس عقیدے سے روگردانی نہیں کی جاسکتی۔

URL for this article:

http://www.newageislam.com/urdu-section/ظہور-مہدی-کا-انکار-ایک-کھلی-گمراہی/d/3242

 




TOTAL COMMENTS:-   5


  • Mr.Ramzy, what light can Maulana Nadeemul Wajidi throw on the subject of the second coming of Christ and Mehdi? He can just quote and parse from one Hadith as against another, when we know that many of the Hadiths are inauthentic.  And what difference does it make to me whether Christ and Mehdi are two different persons or just two names of the same person?

    We respect Maulana Wahiduddin Khan because he has taught us to be more tolerant, more peaceful, and more sensible. What has Maulana Nadeemul Wajidi's flaunted scholarship taught us that is useful to us? His sole purpose seems to be to discredit Maulana Wahiduddin Khan, and he goes to the ridiculous length of bracketing Maulana Wahiduddin Khan's name with that of Ghulam Ahmad Qadiani. I neither believe in nor disrespect Ghualm Ahmad, but many Muslims do loathe him, and therefore to put those two names together is a despicable low blow.


    By Ghulam Mohiyuddin -



  • Very Informative and Timely article. Thanks New Age Islam for providing English translation.

    It is high time we discuss this topic more often because if I'm not wrong then very soon most of us should face the dilemma of accepting or rejecting Mahdi


    By ~Traveller~ -



  •  I am getting some explosive news but have yet to verify. I am told that one more Issa-cum-Mehdi Alaihissalam is already born.


    By Manzurul Haque -



  • Mr Mohiyuddin questions the timing and the purpose of publishing this article. He seems to be averse to hadiths and says that many people want us to discard the hadith. I think the timing is right. There is a lot of discussion on Ahmiadiyyas in Pakistan as well as India. The issue of Mehdi and the second coming of Jesus Christ is also a point of debate in the Urdu media of India. And since the Ahmadiyyas believe that Ghulam Ahamd Qadiani is the promised Mehdi and Christ, I think it was opportune to carry this article to make the readers aware of the different opinions on the issue. I personally am grateful to New Age Islam for publishing the article.


    By Ramzy -



  • I do not know who is interested in Maulana Nadeemul Wajidi's disagreements with Maulana Wahidudin Khan on the subject of the advent of Jesus and Mehdi in the final period. If the intent of publishing these articles is to bring the Hadiths to ridicule, it is succeeding. Many people want us to discard the Hadiths and to have the Quran as our only scripture. They may have a point.


    By Ghulam Mohiyuddin -



Compose Your Comments here:
Name
Email (Not to be published)
Comments
Fill the text
 
Disclaimer: The opinions expressed in the articles and comments are the opinions of the authors and do not necessarily reflect that of NewAgeIslam.com.

Content