certifired_img

Books and Documents

Urdu Section (16 Oct 2009 NewAgeIslam.Com)



مدرسہ ایجوکیشن بورڈپاکستان میں بھی مخالفت

By Tahir Khaleel

(Translated from Urdu by Raihan Nezami)

 

It may be simply a co-incidence that, at a time when the formation of Madrasa Education Board and the affiliation of other madrasas to it is being debated in India, the same conflict has erupted between government and madrasa authorities over the issue of registration of madrasas to Madrasa Education Board in Pakistan too. This is basically due to corruption and sectarian differences in Pakistan. Right now, the formation of Madrasa Education Board itself is a great controversial issue in our own country.

 

To everyone’s surprise, when the government in Delhi called a meeting recently to discuss various points related to the issue of the formation of central madrasa board, another problem raised its head:

 

Who will be the chairman and from which sect will he be selected?

 

It is a misfortune that corruption and sectarian divisions have been two major factors responsible for the poor condition of the Muslims of subcontinent. Government intervention is looked at in both countries with suspicion. Though our neighbour is an Islamic democracy, a section of their ulema, too, nurse suspicions about the intention of Pakistan government agencies.  It seems as if the journey of our countries’ development halted at a point in the past. Perhaps we are still living in 1857. This feeling is quite painful when I consider it and try to fix its responsibility. The so-called Islamic leaders look self-centred and inclined towards their personal gains and lust for money and avarice.

 

Read the following analysis by Tahir Khaleel and consider sincerely the truth behind this explosive issue. -- Editor, Daily Hindustan Express

 

The Prime Minister Syed Yusuf Raza Geelani had stated in the national assembly in connection with the recent accusation of corruption that the ministers will have to explain their viewpoint in the parliament. The orders were issued in the previous convention of the cabinet to speed up the work on the Accountability Bill. The importance of transparency in democracy and the effectiveness of accountability were stressed in a workshop held recently in Islamabad organized by the American organization (National Democratic Institute) to develop a democratic culture in different parties.

 

Various government personnel were caught under charges of corruption when Transparency International issued mind-boggling facts and figures with reference to Pakistan in a survey conducted till the date 17th of June 2009. This report discloses the fact that the percentage of bribery has increased upto 400%. In the year 2006, a sum of one billion dollars was spent due to corruption which has now increased to four billion dollars. The police and power departments have maintained their status quo of first and second positions respectively.

 

According to the survey report, National Accountability Bureau should be an autonomous body under supreme judicial control. The judiciary was at third position at corruption list in 2006, but it has rectified its position and after the judicial reformation, it presently holds the seventh position in 2009.  It is told in the survey report that the departments of police, power, health and land are the most corrupt respectively. The government and army should not interfere in the economic and business activities, but take strict accountability of the government officials owning greater responsibilities.

 

The international organization for elimination of corruption says, the country cannot be freed from the clutches of corruption in the presence of NRO which has encouraged corruption in all departments.  The functioning of the government is being criticised in the media from all corners. The government should take effective steps to eradicate corruption and try to find out the responsible persons for the rise of corruption in order to punish them.    

 

Recently the US Secretary of State Hillary Clinton expressed her views in an interview to New York Times that the war against terrorism would have yielded better results, had the U.S spent more money on schools and education for girls in Pakistan than on their army. The U.S has already spent seven billion dollars on Pakistan army after 9/11 incident. She further said she had once advised the then president of Pakistan Parwez Musharraf to pay more attention on investment in the educational field; this would have diminished the possibility of extremism in our Youth. She held the Islamic madrasas responsible for the growth of suicide attacks. She thinks if children are provided better opportunities at school, they will not want to go to madrasas.

 

Recently, the home ministry has investigated ways and means to implement modern and scientific syllabi in madrasas to bring them into mainstream. Some analysts assume that the ancient Islamic institutions which are purveyors of knowledge and learning are encouraging enmity and extremism. According to a recent survey, extremism is not as big a phenomenon as was thought earlier.

 

It is a fact that majority of extremists who participated in jihad of Kashmir and Afghanistan in 1980’s, were moderately educated. A few suicide bombers were madrasa-educated and belonged to illiterate and deprived families. Some of them were trained in the madrasas situated in the remote areas of Waziristan.

 

The government intends to implement better employment-producing syllabus that is financially acceptable. For this, they are paying attention over mainly two points to achieve it. First, all the madrasas should be registered. Secondly, they should be upgraded to the national standard. They had introduced Pakistan Madrasa Education Ordinance in 2001, but it could not be passed due to sectarian differences. The organization formed for Madrasa reforms in 2006, too, met the same fate.

 

The American Secretary of State is absolutely correct in her opinion. The educational enhancement will not only eradicate illiteracy, but it will also improve living standards of people with a chance of minimizing extremism. The educational backwardness is one of the many reasons for population explosion. According to a report, the population of Pakistan has crossed 188 million, which was only 40 million at the time of the formation of Bangladesh. The imbalance between resources and population has given rise to many problems like poverty, unemployment and extremism. At present, Pakistan is the 6th largest country in population. If the present trend of population explosion continues at the same speed, it will attain the 4th position in the world.

 

 Presently, the question is not about whether madrasas are encouraging terrorism or not?  The question of great concern is why madrasa officials are afraid and not interested in affiliation with a central Board. Some of them are talking about the danger of increasing corruption; in fact, they are afraid of losing their hold of proprietorship, status and authority as they will have to follow a code of conduct and certain terms and conditions. The corruption prevalent in the payment of teachers’ salary and the manner of imparting education will be exposed. The proposal of madrasa board may also expose the dishonesty of our Islamic scholars. This makes the prospect of reform very bleak as the ruling political parties are helpless before them and cannot afford their displeasure and annoyance.

URL: http://www.newageislam.com/urdu-section/مدرسہ-ایجوکیشن-بورڈپاکستان-میں-بھی-مخالفت-/d/1928

طاہر خلیل

یہ محض اتفاق ہے کہ جس وقت وطن عزیز میں مرکزی مدرسہ بورڈ کے قیام کا مسئلہ زیر بحث ہے، پڑوسی ملک پاکستان میں بھی مدرسہ کارجسٹریشن کی شدید مخالت ہورہی ، جس کی ایک بڑی وجہ مسلکی اختلافات ہیں ۔خود ہمارے یہاں بھی ابھی مرکزی بورڈ کے قیام کی تجویز ہی متنازعہ بنی ہوئی ہے لیکن گذشتہ روز اس سلسلے میں حکومت نے میٹنگ بلائی تو یہ مسئلہ بھی زیر بحث آگیا کہ اس بورڈ کا چیئرمین کون بنے گا اور کس مسلک کا ہوگا۔برصغیر کے مسلمانوں کی یہ بدنصیبی اس کاکہیں بھی ساتھ نہیں چھوڑتی ۔جو دوسری بڑی وجہیں مخالفت کی ہیں، ہندوستان کی طرح پاکستان میں بھی کرپشن اور سرکاری مداخلت کا مسئلہ ہے جب کہ ہمارا پڑوسی ملک خدا کے فضل سےاسلامی جمہوریہ کہلاتا ہے ،مملکت خداداد کے مخصوص علمائے کرام بھی ہمارے علما کی طرح ہی حکومت کو شک کی نگاہوں سے دیکھ رہے ہیں ۔ایسا لگتا ہے کہ برصغیر کے مسلمانوں کی قسمت ماضی کے کسی موڑ پر ٹھہر گئی ہے اور شاید ہم آج بھی 1857کےعہد میں جی رہے ہیں ۔ اس صورت حال پ غور کرتے ہیں تو بڑا صدمہ ہوتا ہے ۔سوچتے ہیں کہ اس کےلئے کون ذمہ دارہے، ملت اسلامیہ کے ناخداؤں کے چیختے چنگھاڑ تے چہرے آپس میں گڈ مڈ ہوجاتے ہیں ۔طاہر خلیل کا تبصرہ ملاحظہ فرمائیں اور آپ بھی سنجیدگی سے غور کریں کہ یا الہی یہ ماجرا کیا ہے؟ (ادارہ)

وزیر اعظم سید یوسف رضا گیلانی نے کرپشن کےحالیہ الزامات کےحوالے سے قومی اسمبلی کےاجلاس میں کہا تھا کہ جن وزارتوں میں کرپشن کے بارے میں اخبارات میں آرہا ہے ،ان کے وزرا پارلیمنٹ میں آکر وضاحت کریں گے۔ کابینہ کےگذشتہ اجلاس کے دوران احتساب بل پر کام تیز کرنے کی ہدایت جاری کی گئی تھیں۔ اسلام آباد میں گذشتہ ہفتے امریکی ادارے ‘’نیشنل ڈیموکریٹک انسٹی ٹیوٹ ’’(این ڈی آئی) کی جانب سے سیاسی جماعتوں میں جمہوری اقدار کے فروغ کیلئے جس ورکشاب کا اہتمام کیا گیا، اس میں بھی جمہوریت کیلئے شفافیت اور احتساب کے طریقہ کار کوموثر ہونے پر زور دیا گیا تھا۔بعض حکومتی شخصیات پر کرپشن کے حالیہ الزامات اس وقت سامنے آئے، جب ٹرانسپیر نسی انٹرنیشنل نے پاکستان کےحوالے سے 17جو 2009تک کی سروے رپورٹ جاری کرتے ہوئے ہوش ربا اعداد وشمار جاری کئے ۔اس رپورٹ میں انکشاف کیا گیا ہے کہ پاکستان میں گذشتہ تین برسوں میں رشوت کی سطح 400فیصد تک بڑھ گئی ہے۔ سروے روپورٹ کے مطابق 2006میں 45ارب روپے کرپشن کی نذر ہوئے تھے۔ جواب 2009میں بڑھ کر ایک کھرب 95ارب روپے ہوگئے ہیں۔ پولس اور پاور سے متعلق اداروں نے سب سے زیادہ کرپٹ ہونے کےمعاملہ میں پہلی اور دوسری پوزیشن برقرار رکھی ہے۔ رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ قومی احتساب بیورو اسی  طرح کا ایک آزاد وخود مختار ادارہ ہوناچاہئے ،جس کو سپریم جوڈیشیل کونسل کنٹرول کرے۔ 2006میں عدلیہ کرپشن میں تیسرے نمبر پر تھی لیکن اب 2009میں عدالتی اصلاحات کے باعث بدعنوانی کے حوالے سے ساتویں نمبر پر چلی گئی ہے۔ اس رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ پاکستان میں پولس ،پاور، صحت اور لینڈ کے محکمہ سب سے زیادہ کرپٹ ہیں۔ٹرنسپر نسی انٹر نیشنل نے اپنی سروے رپورٹ میں کہا ہے کہ حکومت اور فوج کو کار وباری اور تجارتی سرگرمیوں میں ملوث نہیں ہونا چاہئے اور سرکاری اختیارات کے حامل افراد کا کڑا احتساب ہوناچاہئے ۔انسداد بدعنوانی کے عالمی ادارے نے قراردیا کہ این آر او کی موجودگی میں ملک سے کرپشن کا خاتمہ ممکن نہیں ۔ این آر او نے ےہر شعبے میں کرپشن کو فروغ دیا ہے۔ کرپشن بہت بڑھ گئی ہے، میڈیا میں حکومت کے طرز حکمرانی پر شدید نکتہ چینی ہورہی ہے ۔ اس رپورٹ کی روشنی میں حکومت وقت کو انسداد بدعنوانی کے لئے ٹھوس اقدامات کرنے چاہئیں ،یہ معلوم کرنا چاہئے کہ ملک میں اس بڑے پیمانے پر کرپشن کی ذمہ داری کس پر عائد ہوتی ہے اور پھر اس کے ذمہ داروں کو قرار واقعی سزا بھی دینی چاہئے۔

امریکی وزیر خارجہ ہیلری کلنٹن نے گذشتہ دنوں نیویارک ٹائمز کو دیئے گئے ایک انٹرویو میں میں کہا تھا کہ اگر امریکہ پاکستان میں محض فوج پر نہیں بلکہ اسکولوں پر اور لڑکیوں کی تعلیم پر زیادہ سرمایہ لگاتاتو دہشت گردی کے خلاف جنگ کے بہتر نتائج برآمد ہوتے۔امریکہ نائن الیون کے واقعہ کے بعد پاکستانی فوج پر سات ارب ڈالر صرف کرچکا ہے۔ ہلیری کلنٹن کاکہنا تھا کہ میں نے ایک دفعہ پاکستان کے سابق صدر پرویز مشرف کو بتایا تھا کہ تعلیمی سرمایہ کاری پر زیادہ توجہ دینی چاہئے ۔اس سے نوجوانوں اوربچوں میں انتہا پسندی کے رجحانات میں کمی آئے گی۔ امریکی وزیر خارجہ نے دینی مدارس کو ہی خود کش حملوں کا ذمہ دار قرار دیا ہے۔ ان کا خیال ہے کہ اسکولوں پر زیادہ توجہ دی جائے تو بچے مدرسوں کا رخ نہیں کریں گے۔دہشت گردی کے حوالے سے دینی مدارس کا کردار مسلسل زیر بحث رہا ہے۔ وزارت داخلہ کے ایک حالیہ اجلاس میں دینی مدارس میں جدید علوم رائج کرنے اور انہیں قومی دھارے میں لانے کےاقدامات کا جائزہ لیا گیا ۔بعض تجزیہ نگاروں کا کہنا ہے کہ علم وحکمت بانٹنے والے بعض قدیم ادارے اب مذہبی منافرت اور انتہا پسندی کی راہ ہموار کررہے ہیں۔ ایک حالیہ سروے کی روشنی میں یہ بات سامنے آئی ہے کہ انتہاپسند عناصرسامنے لانے میں مدرسوں کا کردار اتنا ہی اہم نہیں جتنا کہ عموماً خیال کیا جاتا ہے ۔ اس حقیقت کو فراموش نہیں کرنا چاہئے کہ عسکریت پسندوں کو اکثریت ،جنہوں نے 1980کےعشرے میں افغانستان اورکشمیر کے جہاد میں حصہ لیا، اوسط درجےسے کچھ زیادہ پڑھے لکھے تھے ،تاہم اس سے انکار نہیں کہ خود کش بمبار وں کی ایک قلیل تعداد مدرسوں سے ہی فارغ التحصیل تھی۔گرفتار ہوئے خود کش بمباروں سے کی گئی تحقیقات سے یہ بات سامنے آئی ہے کہ ان کی زیادہ تعداد نوجوانوں پر مشتمل تھی جو ناخواندہ اور غریب تھے اور ان کو وزیر ستان کی قبائلی ایجنسیوں میں واقع مدارس میں تربیت دی گئی تھی۔ حکومت چاہتی ہے کہ مدارس میں ایسا نصاب رائج کیا جائے جو معاشی  طور پر قابل قبول ہو اور بہتر روزگار کے مواقع بھی مہیا کرے۔ اس مقصد کی خاطر حکومت دو پہلوؤں پرتوجہ دے رہی ہے ۔ ایک تویہ کہ تمام مدارس کی رجسٹریشن کی جائے اور دوسری طرف اسکولوں کے حالات کوبہتر بنانا مقصود ہے۔ 2001میں حکومت نے پاکستان مدرسہ ایجوکیشن آرڈینس متعارف کرایا تھا مگر مسلکی اختلافات کے باعث اس پر پیش رفت نہ ہوسکی۔2006میں مدارس ریفارمز کیلئے ایک ادارے کا قیام عمل میں آیا مگر اصلاحات کے اس پروگرام پر بھی کچھ پیش رفت نہ ہوسکی ۔ امریکی وزیر خارجہ کے اس تجزئے سے کسی کو اختلاف نہیں ہوسکتا کہ تعلیمی سرمایہ کاری سے نہ صرف غربت اور ناخواندگی کو دور کیا جاسکتا ہے بلکہ انتہا پسندی کا خاتمہ بھی ممکن ہے ۔تعلیمی پسماندگی نے ہمیں جن پیچیدہ مسائل سے دوچار کیا ہے، ان میں بڑھتی ہوئی آبادی کا مسئلہ بھی شامل ہے۔ ایک حالیہ رپورٹ کے مطابق پاکستان کی آبادی 18کرور 80لاکھ سے تجاوز کرگئی ہے جب کہ 1970میں سقوط ڈھاکہ کے وقت ہماری آبادی چار کروڑ تھی۔ وسائل اور آبادی میں مطابقت نہ ہونے کے باعث غربت ،بیروزگاری اور شدت پسندی سمیت کئی مسائل نے جنم لیا ہے۔ رپورٹ کے مطابق پاکستان آبادی کے لحاظ سے دنیا کا چھٹا بڑا ملک ہے اور اگر آبادی میں اضافہ اسی طرح جاری رہا تو بہت جلد وطن عزیز آبادی کے لحاظ سے دنیا کا چوتھا بڑا ملک بن جائے گاب ،یہ بات ہم سب کیلئے لمحہ فکر یہ ہے۔

اب اصل سوال یہ نہیں رہ گیا ہے کہ مدرسے دہشت گردی کو فروغ دے رہے ہیں یا نہیں؟سوال تو یہ ہے کہ ذمہ داران مدارس کس بات سے خوفزدہ ہیں کہ وہ اپنے تعلیمی اداروں کا رجسٹریشن کرانا چاہتے ۔ کچھ لوگ ملک کے نظام کو گھن کی طرح چاٹ رہی کرپشن کی آڑ لے رہے ہیں لیکن مدارس کے ذمہ داران کی اکثریت اپنی اجارہ داری کےخاتمہ کے تصور سے خوفزدہ ہے۔ وہ کسی ضابطہ گی پابندی کے خیال سے بے چین ہے، مدرسین وملازمین کی تنخواہوں سے لے کر تعلیم کے معیار تک قدم  قدم پر پائی جانے والی بے ایمانیوں کے طشت ازبام ہونے کا خوف ان کو ستارہا ہے۔مدرسوں کے رجسٹریشن کی پیش رفت سے ہمارے مذہبی طبقے کی ‘یمانداری’ بے نقاب ہوگئی ہے لیکن ارباب اقتدار وسیاست ان کے سامنے بے بس ہیں اور وہ ان کی ناراضگی مول لینا نہیں چاہئے۔

URL for this article:

http://www.newageislam.com/urdu-section/مدرسہ-ایجوکیشن-بورڈپاکستان-میں-بھی-مخالفت-/d/1928

 




TOTAL COMMENTS:-    


Compose Your Comments here:
Name
Email (Not to be published)
Comments
Fill the text
 
Disclaimer: The opinions expressed in the articles and comments are the opinions of the authors and do not necessarily reflect that of NewAgeIslam.com.

Content