certifired_img

Books and Documents

Urdu Section (07 Oct 2009 NewAgeIslam.Com)



ولی رحمانی مدرسہ بورڈ کے مسئلے میں قوم وملت کو گمراہ کررہے ہیں: امام کونسل

The Formation of Central Madrasa Board is an age-old demand of Muslims of the country. The issue is deliberately being obfuscated, says Dr Khwaja Akram

Translated from Urdu by Raihan Nezami

 

New Delhi: 2 Oct. Hindustan Express (News Bureau): A like-minded group of people like Wali Rahmani are misguiding Muslims on the issue of establishment of a Central Madrasa Board. They are trying to drag an age-old demand of Muslims into a controversy and also trying to frighten innocent people by imaginary dangers looming ahead. By this malicious act, the character and the nature of madrasas will become suspicious and mystifying. This opinion is expressed by an eminent member of Muslim scholars’ group in reaction to the statement of Maulana Wali Rahmani, Sajjada Nashin of Khanqah Rahmani, Munger and the organizer of Madrasa Modernization Committee of central government that “the formation of Central Madrasa Board is no panacea for any disease; this idea is the brain-child of Mr. L.K.Advani”.

 

Another group of scholars and intellectuals is supporting the idea. Maulana Maqsoodul Hassan Qasmi and Maulana Mahmoodul Hassan Nadvi, the president and the vice-president of Imam Council of India respectively, have asserted in a joint statement without naming anyone: “Imam Council condemns the blind opposition of Central Madrasa Board expressed by an eminent Islamic scholar in an interview to a newspaper”. This interview was published in the 30th Sep.2009 edition of Hindustan Express. The leaders of Imam Council are trying to save the innocent Muslims of India from being betrayed by some selfish people. They are always obedient to serve for their personal gains, in exchange of the membership in different committees or to get a ticket to parliament. They have also questioned him for being the chairman of the Madrasa Modernization Committee of central government formed by Mr. Arjun Singh. Why is he still continuing on the post if the Central Madrasa Board is of no use?

 

They further said that the scholars of international level, who stay in five-star hotels and fly by air, cannot realize the atrocities inflicted on the poor and hapless teachers by the administrators of madrasas. These people are talking rubbish over the idea of establishing Central Madrasa Board because they are afraid of losing their control and possession of the madrasas. They must know, no educational board, it may be CBSE, interferes in the administrative functioning of educational institutions. The attached institutions, of course, have to abide by the terms and conditions of the board. They also asserted that the establishing of Central Madrasa Board is an important necessity of the present time. But it should be an autonomous body like UGC and other boards. The control and governing power should be in the hands of the Muslim scholars and educationists.

 

Maulana Khushtar Noorani, the editor of Islamic magazine “Jam-e-Noor” published from New Delhi, has advised Maulana Wali Rahmani to express his annoyance by commencing an agitation in Bihar, where more than 3000 (Three thousand) madrasas of the board are running. He said it is a baseless allegation that this idea is the brain-child of Mr. L.K. Advani. There is no proof of any such report which might have been submitted in NDA regime. This is also a false accusation that the government had suggested it. This proposal was initiated from the Muslims’ side and forwarded by the then minister of state for human resources and development Mr Ashraf Ali Fatmi. Later on, this proposal was hijacked by Mr Arjun Singh and he involved the Mullahs of Congress like Maulana Wali Rahmani to delay the proposal by converting it into a controversy. Had the government been honest, the Central Madrasa Board could have been silently formed without any hue or cry or controversy.

 

Prof. Dr. Khwaja Akram, the associate professor of Jawahar Lal Nehru University, New Delhi, has rightly observed; the idea of Central Madrasa Board is a long-pending demand of the Muslims of the country – that is intentionally being dragged into a controversy.

Mohammad Adeeb, Member of Parliament (Rajya Sabha) has expressed his views that he would oppose the establishing of Central Madrasa Board in the forthcoming meeting of the Muslim Members of Parliament being called by the central minister of human resources and development Mr Kapil Sibbal. He refused to share the draft of the bill with the media at present that is sent to the Muslim Members of Parliament. But he will oppose the wrong methodology to be adopted; it should not be politicicised and the opinion of the Islamic scholars should be given preference.

 

Now the question arises; which scholars’ opinion should be preferred: The opinion of popular political clerics like Maulana Wali Rahmani on the one hand or the viewpoint of Maulana Maqsoodul Hassan Qasmi, Maulana Shahul Hameed Malbari, Maulana Khushtar Noorani and Dr Khwaja Akram on the other? Maulana Shahul Hameed Malbari, Director of Islamic educational board of India, says: “We of course, have some objection over some of the points in the draft of the bill, but we can not ignore the fact – that Central Madrasa Board is the long-pending demand of the Muslims, also it is the urgent need of the time.

Maulana Usman Ghani Bapu of Ameen-e-Shariat Educational Trust (Gujrat) feels that the government wants to interfere in the functioning of the madrasas in the name of modernization and reformation. The same opinion is expressed by Prof. Haleem Khan, Ex Chairman Madhya Pradesh Madrasa Board.

 

Qari Mian Mazhari asserted that the government is only making sounds like empty vessels; they are not honest in their intention. First, the government should present the bill and establish a Central Madrasa Board, and then the matter of affiliation with the board will come into discussion; whether we will or we will not totally depend upon the situation prevailing after the establishment of the Central Madrasa Board. The people who are creating ruckus are absolutely wrong, moreover, the politics being played by the government is also of the worst kind and deplorable. The government has involved the Muslims in a never-ending fight for its entertainment.

Translated from Urdu by Raihan Nezami

URL of this page: http://www.newageislam.com/urdu-section/ولی-رحمانی-مدرسہ-بورڈ-کے-مسئلے-میں-قوم-وملت-کو-گمراہ-کررہے-ہیں--امام-کونسل-/d/1864

ڈاکٹر خواجہ اکرام

نئی دہلی ،12اکتوبر،ہندوستان ایکسپریس نیوز بیورو: مولانا ولی رحمانی اور ان جیسے کچھ لوگ مرکزی مدرسہ بورڈ کے قیام کے سلسلے میں قوم وملت کو گمراہ کررہے ہیں ۔ یہ لوگ خواہ مخواہ دینی مدارس کے کردار کو مشتبہ بنانے اور ملک کے مسلمانوں کے ایک دیرینہ مطالبہ کو جان بوجھ کر ہیجان انگیز اندیشوں اور خدشات میں الجھا نے میں لگے ہوئے ہیں۔ ان خیالات کا اظہار مسلم علما اور دانشوروں کی ایک خاص تعداد نے حکومت ہند کی مدرسہ موڈرنائزیشن کمیٹی کے سربراہ اور خانقاہ رحمانی مونگیر کے سجادہ نشین مولانا ولی رحمانی کے اس بیان پر اپنے رد عمل میں کیا ہے جس میں انہوں نے کہا تھا کہ مدرسہ بورڈ کا قیام کسی بھی مرض کا علاج نہیں ہے بلکہ یہ تجویز ایل کے اڈوانی کے دماغ کی اُپج ہے جب کہ دوسری جانب بعض دیگر علماء وقائدین ان کی حمایت میں اتر آئے ہیں۔ امام کونسل آف انڈیاکے صدر مولانا مقصود الحسن قاسمی اور نائب صدر مولانا محمود الحسن ندوی نے اپنے ایک مشترکہ بیان میں کسی کا نام لیے بغیر کہا ہے کہ امام کونسل ایک عالم دین کے ذریعے ایک اخبار کو دیے گئے انٹرویو میں مرکزی مدرسہ بور ڈ کی اندھی مخالفت کی شدید مذمت کرتی ہے۔واضح رہے کہ یہ انٹرویو ہندوستان ایکسپریس میں بدھ 30ستمبر کو شائع ہوا تھا۔ امام کونسل کے رہنماؤں نے ’’مسلمانان ہند سے اپیل کی ہے کہ وہ چند مفاد پرست لوگوں کے جھا نسے میں نہ آئیں۔ یہ وہ افراد ہیں جو ہر حال میں حکومت سے صرف ذاتی منفعت کے حصول کے لیے ،کمیٹیوں کے ممبر بننے اور پارلیامنٹ میں پہنچنے کے لیے سب کچھ کرنے کے لیے تیار رہتے ہیں ‘‘ ۔ انہوں نے سوال کیا ہے کہ جب مدرسہ بورڈ کسی مرض کا علاج نہیں ہے تو وہ ارجن سنگھ کے ذریعے بنائی گئی مدرسہ موڈرنائزیشن کمیٹی کے چیئر مین کیوں بنے اور اس کمیٹی کے وہ اب تک چیئرمین کیوں ہیں۔ انہوں نے کہا کہ مدارس کے ذمہ داران آج مدراس کے مجبور ومفلس مدرسین پر جس قدر ظلم وستم کررہے ہیں اس کا اندازہ فائیو اسٹا ر ہوٹلوں میں قیام کرنے اور ہوائی جہاز کاسفر کرنے والے انٹر نیشنل قسم کے علماء کو نہیں ہوسکتا۔ یہ لوگ بورڈ کے قیام کی تجویز پر اس لیے بے سروپا باتیں کررہے ہیں کہ وہ مدارس پر اپنی اجارہ داری کے خاتمہ کے تصور سے خوفزدہ ہیں حالانکہ کوئی بھی تعلیمی بورڈ چاہے وہ سی بی اسی ای ہی کیوں نہ ہو تعلیمی ادارے کے انتظامی امور میں مداخلت نہیں کرتا ۔ ہاں ، اسے قواعد وضوابط پر عمل ضرور کرنے پڑتے ہیں۔ انہوں نے آگے کہا کہ مرکزی مدرسہ بورڈ کا قیام وقت کی اہم ضرورت ہے۔ لیکن اسے یوجی سی اور دوسرے اداروں کی طرح خود مختار ہونا چاہئے اور اس کی باگ ڈور ملک کے معتمدد معتبر مسلم ماہرین تعلیم اور علمائے دین کے ہاتھوں میں ہونی چاہئے ۔ دہلی سے شائع ہونے والے کثیر الاشاعت دینی جریدہ ’جام نور‘ کے ایڈیٹر مولانا خوشتر نورانی نے کہا ہے کہ مولانا ولی رحمانی اگر مدرسہ بورڈ کے اتنے ہی خلاف ہیں تو بہار جانے کی چھوٹ ہے کہ مدرسہ بورڈ کے قیام کی تجویز اڈوانی کے دماغ کی اُپج ہے۔ ایسی کسی رپورٹ کا کہیں کوئی وجود نہیں جو این ڈی اے کے دور میں آئی ہو ۔ یہ خیال بھی بے بنیاد اور گمراہ کن ہے کہ یہ تجویز حکومت کی جانب سے آئی تھی، یہ تجویز مسلمانوں کی جانب سے آئی تھی جس کو اس وقت کے وزیر مملکت برائے فروغ انسانی وسائل علی اشرف فاطمی نے آگے بڑھایا تھا لیکن بدقسمتی سے ارجن سنگھ نے اس کو یرغمال کرلیا اور ارجن سنگھ ہی ولی رحمانی جیسے مولویوں کو لائے تاکہ یہ کانگریسی مولوی اس تجویز کو الجھا کر رکھ دیں۔ حکومت اگر مرکزی مدرسہ بورڈ کا قیام دل سے چاہتی تو اس پرکسی بحث وتمحیص اور تنازع کا بازار گرم کیے بغیر اس کا قیام عمل میں آجاتا ۔ جواہر لال نہرو یونیورسٹی نئی دہلی کے ایسوسی ایٹ پروفیسر ڈاکٹر خواجہ اکرام نے کہا کہ مرکزی مدرسہ بورڈ کا قیام ملک کے مسلمانوں کا دیرنہ مطالبہ ہے جس کو جان بوجھ کر الجھایا جارہا ہے۔ جب کہ دوسری جانب رکن پارلیامنٹ (راجیہ سبھا) محمدادیب کا کہنا ہے کہ مرکزی وزیر فروغ انسانی کپل سبل نے وسائل مسلم ممبران پارلیامنٹ کی جو میٹنگ طلب کی ہے اس میں مدرسہ بورڈ کے قیام کی مخالفت کریں گے۔ وہ کہتے ہیں کہ فی الحال تو قانون کے اس مسودہ کو جو مسلم ممبران پارلیامنٹ کو بھیجا گیا ہے وہ میڈیا سے تحریک چلائیں جہاں ملک میں بورڈ کے سب سے زیادہ مدارس ہیں جن کی تعداد تین ہزار سے اوپر بتائی جاتی ہیں۔ انہوں نے کہا کہ یہ الزام سراسر کرام کی رائے کو ہی ترجیح دی جائے لیکن سوال یہ ہے کہ حکومت کن علماء کی رائے کو ترجیح دے۔ مولانا رحمانی جیسے بڑے اور سیاسی علما ء کی رائے کو یا مولانا مقصود الحسن قاسمی ، مولانا خوشتر نورانی ، ڈاکٹر خواجہ اکرام ، مولانا شاہ الحمید کی رائے کو؟ اسلامی تعلیمی بورڈ آف انڈیا کے ڈائریکٹر مولانا شاہ الحمید ملباری کا کہنا ہے کہ مرکزی مدرسہ بورڈ کے قیام کا جو مسودہ ہمیں بھیجا گیا تھا اس کی کچھ باتوں پر ہمیں ضرور اعتراض ہے لیکن مرکزی مدرسہ بورڈ کا قیام ملک کے مسلمانوں کا دیرینہ مطالبہ اور وقت کی اہم ضرورت ہے۔جب کہ امین شریعت ایجوکیشن (ٹرسٹ) گجرات کے مولانا عثمان غنی باپو کا خیال ہے کہ حکومت مدارس کی جدید کاری کے نام پر ان میں مداخلت چاہتی ہے ۔ یہی خیال مدھیہ پردیش مدرسہ بورڈ کے سابق چیئر مین پروفیسر حلیم خاں کا بھی ہے جو کہتے ہیں کہ مدرسہ بورڈ کے قیام کی اسکیم سے مدارس میں مداخلت کے خدشات بڑھ جاتے ہیں۔لیکن قاری میاں محمد مظہری کہتے ہیں کہ حکومت مرکزی مدرسہ بورڈ کے قیام کا صرف شور مچارہی ہے۔ پہلے وہ مسودہ پیش تو کرے، بورڈ کا قیام عمل میں تو آئے ، یہ مسئلہ تو بعد میںآئے گا کے اس بورڈ سے ہم اپنے مدارس کا الحاق کرائیں یا نہیں کرائیں ؟ جو لوگ اس پر شور مچارہے ہیں وہ بھی غلط ہیں اور اس پر حکومت کی سیاست ۔

URL for this article:

http://www.newageislam.com/urdu-section/ولی-رحمانی-مدرسہ-بورڈ-کے-مسئلے-میں-قوم-وملت-کو-گمراہ-کررہے-ہیں--امام-کونسل-/d/1864

 




TOTAL COMMENTS:-    


Compose Your Comments here:
Name
Email (Not to be published)
Comments
Fill the text
 
Disclaimer: The opinions expressed in the articles and comments are the opinions of the authors and do not necessarily reflect that of NewAgeIslam.com.

Content