certifired_img

Books and Documents

Urdu Section (08 Aug 2010 NewAgeIslam.Com)



چین میں صوفی اور اسلامی باقیات

By Syed Najmi Zafar

(Translated from Urdu by Sohail Arshad)

China has been a centre of curiosity and attraction for us since day one. The Chinese doll finds references in folk tales and our elderly women generally liken the gentilesse of pretty young girls to that of a Chinese doll. Our dear Prophet (PBUH) said, “Acquire knowledge even if you have to go to China.” This tradition of the Holy Prophet (PBUH) has given China a unique place. It was because of these motivations that several sufis of different mystic schools carried the message of the divine in their perch and cassock and reached the land called China and enlightened the servants of God with his message. The study of the travelogues of the Chinese tourists, ancient monuments and other antiquities reveals that Muslims and Islam arrived in this region through commercial and political relations with Iran. The footsteps of Iranian rulers and traders are found in this country before the advent of Islam. That’s why the sufi or Islamic manuscripts, writings and the books are mostly found in old Iranian language. The famous Chinese Muslim author who is the founder of Shandong Islamic traditional school, has written in his book ‘Minhajul Na’alab’ that most of the writings on Islamic jurisprudence, exegesis and edicts found in China are in Persian, so the students will have to depend on Persian language for the study of Islamic texts. Moreover, in central Chinese cities, words of Persian language are frequently used in day to day interactions. In the Uyghur language, about 60 per cent of words are derived from Persian. Iranian scholar and Uyghur language expert Ibn Badee’ has compiled the words of Persian language in Uyghur in his book. The names of food and beverages, dress and objects of daily use used in Shandong, Yunan, Fijan, Xinjiang and Jiang are mostly in Persian. The word Hui Hui was also used to mean the Persian speaking Chinese population. Now the word means the Muslim population of China. The Chinese Turkistan, the ancient state of China which is also called Xiang Jiang was a cradle of Iranian Sufism which is mentioned in the book of the history of Chinese Sufism titled ‘Nuzhat al Uns’. The sufi series of Turkistani school had a place of its own and the groups of the sufis of this series are found even today in the ancient capital of Kashghar. The shrine of Khwaja Rasheeduddin and the monastery of Khwaja Afaque is present in the city of Kashghar with its traditional pomp and grandeur. A big urn named Dostkami with Persian inscription on it is still preserved in the museum of Khatan. The monastery of Ghazni had received the urn from the sufis of the city of Khatan. The urn was used on the congregation of sufis, celebrations, Urs and other religious ceremonies. The remnants of sufi monasteries and shrines are scattered all over China most of whom are specimens of Iranian architecture. Due to ignorance, the Chinese department of Tourism has introduced them as mosques or graveyards. Even the Chinese guide books have mentioned them as mosques or graveyards.

Unfortunately, most of the remnants, the relics of Islamic history and the specimens of Iranian art and culture are in shambles, for example, the shrine and monastery of Sheikh Abul Shaqi Wali in Shahryar Qand. The causes of this impoverishment and dilapidation are historical incidents and accidents and natural calamities like the earthquakes that rocked the 19th century. Apart from that internal feuds have also contributed to the ruin of these historical places. A tribe of the Chinese Turkistan destroyed the Uzbek Shia buildings in revenge against the Safvi group. During the rule of the Russian Czar, most of the relics of Sufism, Islamic culture and society in Turkistan and China were wiped out. The last cause of this destruction was the Chinese Revolution during which books, shrines and other Islamic relics became extinct. Nevertheless, domes, tombs and shrines of sufis are found in abundance across the length and breadth of China even today. It is noteworthy that the city of Quan Xi Lu has been rechristened Zaytun which is derived from Arabic.

In China, apart from Iranian sufi sects, non-Iranian sufi sects are also found. The ancient graveyard in the suburbs of the city of Kan’an and the shrine of Khwaja Bahauddin amidst it is testimony to this. The most important of the factors behind the arrival of Islam and sufism in China is the interpretation of the sufi thought that the acquisition of knowledge through observation and experience is inevitable for a sufi. Apart from that the dominant belief among the sufis has been the fact that after the banishment of Adam from the heaven, his first step fell on Sarandip (Sri Lanka) which still has its impression. To the sufis, the pilgrimage to the sacred footprint leads to divine requital. There are two ways to reach Sarandip: one is land route and the other is via sea. The land route went through China. So the sufis of Iran would set out on the journey in groups and would reach there via China. This has been stated by the famous sufi guide Zainul Abedin Sherwani in his book. Ibn Batuta has said that the dervishes going to Sarandip via China would get a letter from the men at the monastery of Sheikh Abul Ishq which assured them financial help from various institutions associated with Sheikh Abul Ishq on the way. In this way, the religious journeys by the sufis and their interaction with the common Chinese People left a deep impact on the society and culture of China. Gradually, the influence of the Naqshbandia order of Sufism became so powerful in the society of China by the 18th century that they declared a revolt against the royal family. But the ruler Kiang Lun crushed the sufi movement led by Khwaja Afrin and captured the Turkistan region of China. Later, to win the loyalty of the Muslims, he married the daughter of a sufi of the Naqshbandia order belonging to Kashghar. The king took his new queen to Beijing. The woman of the sufi household was able to have her influence on the king and maintained her faith until the king built a mosque for his queen with Quranic verses and hadiths inscribed on it. It should be noted that it was a period when building mosques, worshipping and cow-slaughter was prohibited by the government. Unfortunately the influences of the Naqshbandia order are rarely seen in the present Chinese society, though different sufi sects of China are the flagbearers of the Naqshbandia order. It is said that the sufis of Naqshbandia order interfered with the contemporary politics and the governance keeping the government on tenterhooks. Consequently, the government dealt with them strictly and dissolved their existence.

Jahria sect is a famous sufi sect of China. The remains of this sect are still found in China. In fact, it is a branch of Naqshbandia order. The founder and guide of this sect was Nia Mingxin. The followers of this sect represent the puritanical interpretation of Islam in their beliefs and thoughts that are strictly adherent to the Quran and hadiths. This sect has resemblance to the Ahle Haq sect of Iran while the Khafia sect also claims closeness to Naqshbandia order of China. Nia Mingxin travelled through various Arab countries between 1760 to 1780. The purpose of this journey was to acquire a practical knowledge of the conditions and teachings of different sufi orders. It is said that the Jahriya sect organised many movements among the Muslims of China. These movements put the Deng royal family in constant trouble. The cause of these movements among the Chinese Muslims is said to be the issue of their religious identity. The question whether they were Chinese first or Muslims first was foremost in their minds and would perplex them continuously. However, the disciples of the Jahriya sect would keep their belief a secret and their incantations were known only to their own colleagues. The Deewan-e-Hafiz, the Mukhammas of Mohammad Tabdkani and Tafsir-e-Hussaini are famous religious and literary books which are very popular among the Chinese Muslims. Apart from the Jahriya sect, the Qadria sect is also found in China. The centre of this sufi sect is the city of Linxia in the district of Busu. The shrine of Sheikh Abu Abdullah in Larigose in the state of Sichuan is the important centre of the Chinese Qadria order. The speciality of this shrine is that Shiekh Abdullah is buried here according to his will and his monastery also stood here. The followers of the Qadria order celebrate the Urs on the birthday of Hadhrat Abdul Qadir Jeelani. Though Khafia sect is also a branch of the Naqshbandia order, the relics of this sect are seen rarely in Chinese Muslims.

Another famous sect of China is Kubrviyah. Most of the monasteries are within the access of this sect. It has its central monastery in Wang Tao village where the Urs of the Principal Peer is held and thousands of devotees assemble even today. Mehfil-e- sama’a  is also common in Kubrviyah sect till now. The components of Shiaism are found in their poetry and Rubayees (quartets). The thought of sustentation from the 12th imam is found in them, though their guides are followers of Hanafi shool of jurisprudence. It is said about Sheikh Kubrviya that he fasted for 90 days and went into solitary meditation in the mountains of Wang Tao. On completion of the fasts, he appeared in Kherqah (cassock) before his disciples and held celebrations. Sheikh Md Ibrahim Zahang, the contemporary guide of the Kubrviyah sect, is of the view that the Qalandaria sect has been associated with Kubrviyah monasteries though it is also a fact that the representatives or representative institutions of the Qalandariah sect are rarely found in China in modern times.

URL: http://www.newageislam.com/urdu-section/چین-میں-صوفی-اور-اسلامی-باقیات/d/3258

سید نجمی ظفر

ملک چین ہمارے سماج کا ایک نقطہ بحس اور اشتیاق ازل سے رہا ہے ۔اکثر قصہ کہانیوں میں چینی گڑیاں کا تذکرہ ملتاہے او رہماری بوڑھیاں معصوم بچیوں کی نزاکت وجاذبیت کو ‘‘چینی گڑیا’’ سے گردانتی ہیں ۔ ہمارے پیارے حبیب صلی اللہ علیہ وسلم کا ارشاد ہے کہ ‘‘علم حاصل کرو خواہ چین جانا پڑے’’ ۔ اس ارشاد نبوی نے ہم مسلمانوں کے درمیان ملک چین کا ایک الگ مقام طے کردیا ہے، شاید انہی محرکات کے مدّ نظر مختلف صوفی سلاسل پیغام حق کو اپنے صوف وقبا میں سمیٹ کر چین کی سرزمین تک پہونچے اور فرزندان خدا کودین حق سے روشناس فرمایا۔ چین کے مشہور سیاحوں کے سفر ناموں ،آثار قدیمہ اور دیگر باقیات کے مطالعے سے پتا چلتا ہے کہ اس خطہ ارضی میں ، اسلام اور مسلمان ایران کے سیاسی وتجارتی تعلقات کے ذریعہ پہونچے ۔ ایرانی حکمرانوں اور تاجروں کی آمد اس ملک میں تاریخ اسلام سے قبل پائی جاتی ہے، اس لئے چین کے اسلامی یا صوفی مسودوں ،تحریروں اور کتابوں کے ذخائر اکثر قدیم ایرانی زبان میں پائے جاتےہیں ۔ ‘‘منہا العلب’’ کے مشہور چینی مسلمان مصنف جو شانڈانگ اسلامی روایتی اسکول کے بانی بھی ہیں، اپنی کتاب میں لکھا ہے کہ چین کے اکثر اسلامی فقہ تفاسیر اور فتا سے فارسی زبان میں ہیں ، اس لئے طلبہ کو اسلامی درسی ونصابی مطالعہ کے لئے فارسی زبان میں ہیں، اس لئے طلبہ کواسلامی درسی و نصابی مطالعہ کے لئے فارسی زبان پر انحصار کرنا ہوگا۔ یہاں تک کہ چین کے مرکز ی شہروں میں روز مرہ کی بولی میں فارسی زبان کے الفاظ کثرت سے مستعمل ہیں۔ ایرانی اسکالر اور یوگھری زبان کے ماہر جناب ابن بدیع نے اپنی ایک کتاب میں یوگھری زبان میں فارسی سے مستعار الفاظ کو جمع کیا ہے۔چین کے سانڈانگ ،ینان، فیجان ڈونیانگ اور جیانگ سو علاقہ جات میں اشیا ئے خورد ونوش ،لباس اور روز مرہ کے استعمال کی چیزوں کے نام اکثر فارسی زبان میں ہیں۔ لفظ ہیوئی ہیوئی کا استعمال بھی فارسی زبان والی چینی آبادی کے لئے ہوا کرتا تھا ،اب اس لفظ سے چین کی مسلم آبادی مراد لی جاتی ہے۔

چین کا قدیمی صوبہ چینی ترکستان جس کا نیا نام زیانگ جیانگ ہے ۔ یہ کسی زمانے میں ایرانی صوفیت کاگہوارہ تھا جس کا تذکرہ چینی صوفی تاریخ کی کتاب ‘‘نزہت الائس ’’ میں ملتا ہے ۔ترکستانی مکتبہ فکر کا صوفی سلسلہ اپنی ایک خاص شناخت رکھتا تھا اور آج بھی کاشفر کی قدیم راجدھانی میں اس سلسلے کے مسائخ کی آبادیات ملتی ہیں۔ خواجہ رشید الدین کا روضہ اور خواجہ آفاق کی خانقاہ اپنی روایتی تزک وشان کے ساتھ کا شفر شہر میں موجود ہے ۔ فتن کے عجائب گھر میں ‘‘دوستکامی’’ نام کا ایک برا پیالہ محفوظ ہے جس پر ایرانی زبان میں تحریر نقش ہے۔ یہ پیالہ غزنی خانقاہ کو نتن شہر کی صوفیوں سے ملا تھا ۔ اس پیالہ کا استعمال صوفیوں کے اجتماعی جشن ، عرس ،مذہبی تقریبات وغیرہ میں ہوتا تھا ۔پورے چین میں صوفی خانقاہوں اور مقبروں کی باقیات جابجا بکھری پڑی ہیں ، ان میں بیشتر ایرانی فن تعمیر کے نمونے ہیں مگر لاعلمی کی وجہ سے محکمہ سیاحت (چین) نے اس کا تعارف مسجد یا قبرستانوں کی شکل میں کرایا ہے یہاں تک کہ چینی تاریخی گائڈ بک میں بھی یہ مسجد اور قبرستان ہی بتائے گئے ہیں۔

افسوس کی بات یہ ہے کہ بیشتر باقیات ،اسلامی تاریخ کے آثار اور ایرانی فن وتہذیب کے نمونے خستہ حالی اور بدحالی کے شکار  ہیں ۔مثلاً شہر یا قند میں شیخ ابوالشقی ولی کی خانقاہ اورروضہ ۔ اس بربادی اور بدحالی کے موجب تاریخ کے واقعات وحادثات ،قدرتی آفات، جیسے انیسویں صدی کے زلزلے وغیرہ رہے ہیں ۔ اس کے علاوہ اندرونی اور آپسی رسہ کشی نے بھی ان تاریخی مقامات کی بربادی کا سامان مہیا کیا ہے۔ چینی ترکستان کے ایک قبیلہ نے صفوی گروہ کے بدلے کی کارروائی میں اژبیک شیعہ عمارات اور مقبروں کو برباد کیا۔ روسی زار کے دور حکومت میں ترکستان اور چین کے زیادہ تر صوفی ،اسلامی تہذیب اور معاشرتی باقیات کو اکھاڑ پھینکا گیا اور آخری وجہ اس بربادی کی چینی تہذیبی انقلاب ہے جس کے دوران کتابیں ،مقبرے  اور دیگر تاریخی باقیات صفحہ ہستی سے ناپیدہوگئیں ۔بہر حال آج بھی چین میں مغرب سے مشرق تک صوفیا کے روضے ،مقبرے اور گنبد بھرپڑے ہیں۔ قابل ذکر بات یہ ہے کہ قوان ڈیلو شہر کا نام زیتون رکھا گیا ہے جو عربی زبان سے مشق ہے۔

چین میں ایرانی صوفی سلسلے کے علاوہ غیر ایرانی صوفی سلسلے بھی ملتے ہیں ۔کننان شہر کے مضافاقی علاقوں میں واقع قدیم قبرستان اور اس کے درمیان خواجہ بہا الدین کا مقبرہ اس بات کی شہادت دیتا ہے ۔چین میں اسلام اور صوفی تعلیمات کی رسائی کے سلسلے میں جو عوامل کارفرما رہے ہیں ان میں سب سے قابل ذکر صوفی فکر کی یہ ترجمانی ہے کہ سیاحت اور دنیا کے سفر کے ذریعے علمی مشاہدہ اور تجربہ حاصل کیا جانا صوفی کےلئے ناگزیر ہے ۔ اس کے علاوہ صوفیوں کے درمیان یہ خیال غالب رہا کہ بابا آدم جب جنت سے نکلے تو زمین پر ان کا سب سے پہلا قدم سراندیپ(سرلنکا )پر پڑا جس کے نقوش آج بھی باقی ہیں، صوفیوں کے نزدیک اس قدم مقدس کی زیارت باعث ثواب ہے۔ سراندیپ جانے کا راستہ دو ہے، ایک بڑی دوسرا بحری۔ بڑی راستہ چین سے ہوکر گزرتا ہے ،اس لئے ایران کے صوفی حضرات بڑی تعداد میں اس سفر کو نکلتے اور چین سے گزرتے ہوئے وہاں جاتے ،اس کا تذکرہ زین العابدین شیروانی مشہور صوفی رہنما اپنے تذکرے میں کرتے ہیں ۔ ابن بطوطہ نے ذکر کیا ہے کہ جو درویش چین سے ہوکر سراندیپ جاتے ، انہیں شیخ ابولعشق کی خانقاہ کے کارندے ایک خط دیتے، اس خط کی وجہ سے وہ درویش حضرات راستے میں شیخ ابولعشق کے مختلف اداروں سے مالی تعاون حاصل کرپاتے ۔اس طرح مذہبی سفر اور راستے  میں جگہ جگہ عام چینیوں کے درمیان ان ایرانی صوفیوں کے میل ملاپ نے چین کے سماج اور معاشرے پر بہت عمیق اثر چھوڑا ہے ۔ آہستہ آہستہ اٹھارہویں صدی تک نقش بند یہ سلسلے کا اثر ورسوخ چین کے معاشرے پر اتنا بڑھ گیا کہ انہوں نے اس وقت کے شاہی خاندان کے خلاف غدر کا اعلان کردیا ۔مگر کیا نگ لون جو اس وقت کا حکمراں تھا اس نے خواجہ آفرین کی قیادت والی صوفیوں کی اس تحریک کو سختی سے کچل دیا اور چین کے ترکستان والے علاقے پر اپنا قبضہ کرلیا ۔ بعد میں اس بادشاہ نے مسلمانوں میں اپنی وفاداری پیداکرنے کی نیت سے نقش بند یہ سلسلے کے ایک شیخ کی بیٹی سے شادی کی جو کاشغر کی رہنے والی تھی۔ بادشاہ اپنی اس نئی ملکہ کو اپنے ہمراہ بیجنگ لے گیا۔ اس مسلمان صوفی گھرانے کی عورت نے بادشاہ پر اپنا اثر قائم کیا اور خود کو اسلامی تعلیمات پر قائم رکھا یہاں تک کہ بادشاہ نے اپنی اس ملکہ کی عبادت کے لئے مسجد تعمیر کرائی جس میں قرآنی آیات اور حدیث نبوی نقش کرایا ۔قابل ذکر بات یہ ہے کہ یہ وہ دور تھا جب مسجد بنوانا، مسلمانوں کو عبادت کرنا اور گوکشی وغیرہ حکومت کی طرف سے ممنوع تھا۔ افسوس نقش بندیہ سلسلے کے ظاہری اثرات موجودہ چینی سماج میں کم نظرآتے ہیں اگر چہ چین کے مختلف سلاسل نقش بندیہ سلسلے ہی کے علمبردار ہیں۔ کہاجاتا ہے کہ نقش بندیہ سلسلے کے خواجگان اپنے دور میں وقت کی حکومت اور اس کی سیاست میں محل ہوا کرتے تھے اور ان صوفی حضرات کے اثر سے حکومت پریشان رہتی تھی۔ نتیجتاً حکومت نے اس کے ساتھ سختی کا رویہ اختیار کیا اور ان کا وجود تحلیل ہوگیا۔

جبریہ سلسلہ ،چین کا ایک مشہور صوفی سلسلہ ہے۔ اس کی باقیات آج بھی چین میں موجود ہیں۔ دراصل یہ نقش بندیہ سلسلے کی ایک شاخ ہے۔ اس سلسلے کے رہنما او ربانی مامنگڑین ہیں ۔ اس سلسلے کے پیروکار اپنے عقائد اور افکار میں اسلام کی خالص ترجمانی کرنا چاہتے ہیں یعنی دین میں قرآن اور اسوہ رسول کی خالص پیروی ۔ اس سلسلے کی مماثلت ایران کے اہل حق فرقے سے ہوتی ہے ۔ جبکہ خفیہ سلسلے بھی چین میں نقش بندی  سلسلے سے نزدیکی کی دعویداری کرتے ہیں۔ مامنگڑین نے 1760سے 1780کے درمیان مختلف عرب ممالک کا دورہ کیا۔ اس دورے کا مقصد تھا ،مختلف صوفی سلسلوں کے حالات اور تعلیمات کے عملی جائزہ کا حصول۔ کہا جاتا ہے کہ جبریہ سلسلہ نے چین کے مسلمانوں کے درمیان بہت ساری تحریکیں چلائیں ۔ان تحریکوں سے اس وقت کا ذینگ شاہی خاندان کافی پریشان رہتا تھا ۔چینی مسلمانوں کے درمیان ان تحریکوں کی وجہ ان کی ملی شناخت کا مسئلہ بتایا جاتا ہے۔ ان کے درمیان یہ سوال ہمیشہ درپیش رہتا تھا اور ان کے لئے کشمکش کا باعث بنتا تھا کہ کیا وہ پہلے چینی ہیں اور بعد میں مسلمان ؟یاپہلے مسلمان ہیں اور بعد میں چینی؟بہر حال جبریہ سلسلہ کے مریدان اپنے عقائد مخفی رکھتے تھے اور ان کے اور ادووظائف صرف ان کے ہم عقیدہ افراد کو ہی معلوم ہوتے تھے ۔دیوان حافظ ،جناب محمد تبدکافی کی مخامینں اور تفسیر حسینی وغیرہ مذہبی کتابیں چینی مسلمانوں کے درمیان کافی مقبول ہیں۔ جبریہ سلسلہ کے علاوہ چین میں قادریہ سلسلہ بھی موجود ہے۔ اس سلسلے کا مرکز بوسو ضلع کا لینکسیا (Linxia)شہر ہےسیچوان صوبہ کے شہر لاریگوژ میں شیخ ابوعبداللہ کا مقبرہ چینی قادریہ سلسلے کا اہم مرکز ہے۔ اس مقبرے کی خصوصیت یہ ہے کہ شیخ عبداللہ اپنی وصیت کی بنیاد پر یہیں دفن ہیں اور یہیں ان کی خانقاہ بھی تھی ۔ قادریہ سلسلے کے لوگ شیخ عبدالقادر جیلانی رحمتہ اللہ علیہ کے یوم پیدائش پر ان خانقاہ میں جشن اور اعراس مناتے ہیں ۔اگر چہ خفیہ سلسلہ بھی نقش بندیہ سلسلے کی ایک شاخ ہے مگر اس سلسلے کے نشانات اب چینی مسلمانوں کے درمیان کم نظر آتے ہیں۔

چین کا ایک دوسرا مشہور سلسلہ کبروریہ ہے۔اکثر خانقاہیں اس سلسلے کی دسترس میں ہیں ۔     داون تاؤگاؤں میں ان کا مرکزی خانقاہ ہے اور اس میں بڑے پیر کاعرس ہوتا ہے اور آج بھی ہزاروں زائرین جمع ہوتے ہیں ۔محفل سماع ،کبرویہ سلسلے میں آج بھی عام ہے۔ ان کی شاعری اور رباعی میں شیعیت کا جزوپایا جاتا ہے ۔ بارہویں امام سے استعانت کی فکر ان کے یہاں پائی جاتی ہے، جب کہ اس سلسلے کے رہنما حنفی مسلک کے ماننے والے ہیں۔ شیخ کبرویہ کے بارے میں کہا جاتا ہے کہ انہوں نے نوے(90) دنوں کا روزہ رکھا اور داؤن تاؤ پہاڑ کے دامن میں خلوت نشینی اختیار کی اور ان روزوں کے اختتام پر خرفہ پہن کر اپنے مرید ان کے بیچ جلوہ افروز ہوئے اور جشن وتقریب منائی ۔شیخ محمد ابراہیم ڈیانگ جو کبرویہ سلسلے کے ہم عصر رہنما ہیں ان کا خیال ہے کہ قلندر یہ سلسلہ ،کبرویہ خانقاہوں سے منسلک رہا ہے ۔ یہ بات دیگر ہے کہ عصر جدید میں قلندر یہ سلسلے کے نمائندے یا نمائندہ ادارے چین میں مشکل سے نظر آتے ہیں۔

URL for this article:

http://www.newageislam.com/urdu-section/چین-میں-صوفی-اور-اسلامی-باقیات/d/3258

 




TOTAL COMMENTS:-   2


  • http://www.timesonline.co.uk/tol/news/article5960010.ece

    You may like to note that you now have around 70 million to 100 million Christians in China and Buddhism is also starting a revival.

    http://en.wikipedia.org/wiki/Church_of_the_East_in_China (Christianity also flourished in China in the 7th century)

    Around 100 years ago you would have had many more Muslims in China than Christians; however, now it is the opposite and Christianity is growing all over China and like I said the Buddhist faith is gaining ground once more.

    Christianity is a potent force in China and South Korea; and South Koreans are spreading this faith in China and Central Asia.

    Yet in Australia it is very different because Buddhism is growing amongst the younger generation.

    China, like India, is very rich when it comes to religion and philosophy.

    http://leejaywalker.wordpress.com

    Lee Jay Walker

     

     


    By Lee Jay Walker -



  • I had some idea of Islam's connection to China because of all the trade in the medieval period. But I had no idea of these deep Sufi connections, and its evidence in architecture. Very informative article!


    By Juhi, Boston -



Compose Your Comments here:
Name
Email (Not to be published)
Comments
Fill the text
 
Disclaimer: The opinions expressed in the articles and comments are the opinions of the authors and do not necessarily reflect that of NewAgeIslam.com.

Content