certifired_img

Books and Documents

Urdu Section (05 Aug 2009 NewAgeIslam.Com)



The Muslim Agenda in the present century رواں صدی میں مسلمانوں کی ترجیحات کیا ہوں؟

First of all, the Muslims should try to find out the reasons for their tragic condition. How and why have they been degraded to such a low-level as to remain an undeveloped and unstable community, whereas other communities of the world have succeeded even in harming them? Why are the Muslims lagging behind and have remained backward educationally, financially and politically? Other communities, who were the victim of impoverishment, lifted their status and raised themselves to greater heights.

Obviously, there are certain reasons for Muslim backwardness – the greatest of all is that they have lagged behind in education, research and technology. -- Maulana Asrarul Haque Quasmi

Translated from Urdu by Raihan Nezami, NewAgeIslam.com

URL of this page: http://www.newageislam.com/urdu-section/the-muslim-agenda-in-the-present-century--رواں-صدی-میں-مسلمانوں-کی-ترجیحات-کیا-ہوں؟/d/1604

---------- 

The Muslim Agenda in the present century


Maulana Asrarul Haque Quasmi

Translated from Urdu by Raihan Nezami, NewAgeIslam.com

 The condition of Muslims is very bad in the present century; it is even getting worse day by day. Muslims are facing numerous insurmountable problems from all directions, making their survival more difficult. There seems to be no immediate solution in sight in the near future. The hapless, wretched Muslim is being referred to as terrorist, aggressive, uncivilized and uncultured. It is quite common to call Muslims with titles like “terrorist”, “orthodox” and “conservative”. The western media is leaving no stone unturned in seeking to denigrate Muslims. The irony is that the anti-Muslim elements are garnering success too, in their ugly endeavour through various means and ways. The life of the Muslim Ummah is being made miserable with baseless charges being levelled at them from each and every nook and corner. In the light of the prevailing situation, Muslims should try to take effective measures to elevate their status and clear the doubtful clouds from the minds of other communities.

 

In this attempt, first of all, the Muslims should try to find out the reasons for their tragic condition. How and why have they been degraded to such a low-level as to remain an undeveloped and unstable community, whereas other communities of the world have succeeded even in harming them? Why are the Muslims lagging behind and have remained backward educationally, financially and politically? Other communities, who were the victim of impoverishment, lifted their status and raised themselves to greater heights.

Obviously, there are certain reasons for Muslim backwardness – the greatest of all is that they have lagged behind in education, research and technology. On the other hand, other communities especially the western communities pulled their socks up, continued their struggle for all-round progress and succeeded in their hardy endeavour, obtaining notable successes in financial, political and cultural fields as well as in defence and science and technology. The economy of the western countries is quite strong; so the American dollar and the European euro are enjoy greater standing throughout the world. This gives them an upper hand in the international trade market; their products sell like hot cakes everywhere in the world making their currencies more valuable than others.

 

The people of the affluent countries are financially well-to-do and leading a contented life in a complete comfort zone far away from the hassles of poverty and hunger, even though some companies, banks and institutions have been affected by the present global economic crisis. Now let us consider the situation of Muslim countries. The currencies of various Muslim countries, except UAE, Malaysia and Saudi Arabia, have been devalued to an alarming level. The products of Arab countries are invisible in the world market as they are in no demand. The situation of the Arab world is even worse in matters of defence – they neither have arms and ammunition for their defence nor the modern technology to produce it.

 

Another thought-provoking issue is of education, Muslims are extremely backward in terms of education and technology – everyone knows education is an utmost necessity for the human beings. In Islamic teachings too, great emphasis is laid upon acquiring learning. In the light of the present situation, two points seem to be very important

First, how can Muslims break the jinx to come out of this exceeding deterioration?  

Second, how scan Muslims achieve success to fulfil their ambitions?

 

We need to pay attention at various fronts to respond to these questions and achieve the target of uplifting the sagging morale of the Muslims, anyhow, on a priority basis. Special attention should be given to education, learning and technical training. For the attainment of educational goal, initially education can be divided in two parts.

Primary or Basic education

Higher education

 

The subjects which are most important in life should be taught at primary level such as – religious teachings and the knowledge of day-to-day life because the religious and general knowledge is quite essential for every human being till the last breath. Not a single day can be completed without the sacred knowledge of Islam; hence a certain level of Islamic knowledge is essential so that everyone is able to perform his religious duties with contentment and live like a true devoted Muslim.

 

 The mother tongue and the national language should also be included in the primary education, which are quite important in modern era. The mother tongue must be learnt at a commanding level, but a little bit of knowledge of the national language is enough, by which one may be able to handle the official works and draft any document at any level. As this is the age of globalization, any international language as a contact language seems to be required for businessmen, industrialists, exporters, etc.

All the above-mentioned essential subjects must be included in the higher education whose importance is undeniable, and may be helpful in the service to the mankind especially for the Muslims. From the Islamic point of view, some authentic centres for the education and training of “Fiqah”, “Tafseer”, “Hadeeth”, and the Islamic studies should be opened where Muslim youths can be transformed into renowned and erudite “Fuqaha”, “Ulema”, “Mufassareen”, “Muhaddatheen”, and Islamic scholars – so that they are able to perform their religious duties by serving the Muslim world.

 

When we consider the significance of modern subjects, “Information and Technology”, “Engineering”, “Medical Science”, “Journalism” and other professional subjects seem to be given special attention. Information and Technology is of utmost importance – the significant branches of Engineering, important courses such as MBBS, MD and some other degrees in medical science should be obtained on a priority basis. Furthermore, the higher education in Political Science, sociology, Psychology, History, General Science and professional subjects too, is extremely essential.

Only then, it will provide financial help and stability to our staggering and limping Muslim economy as well as become an important tool for all-round development. On condition, if the presently discussed educational structure is implemented successfully to the fullest, we can  visualize the educational goal set for the 21st century, and some remarkable achievements can be expected in the coming few decades or so.


Translated from Urdu by Raihan Nezami, NewAgeIslam.com


URL of this page: http://www.newageislam.com/urdu-section/the-muslim-agenda-in-the-present-century--رواں-صدی-میں-مسلمانوں-کی-ترجیحات-کیا-ہوں؟/d/1604

© Copyright: New Age Islam 2008-2009

 

مولانا اسرا ر الحق قاسمی

5اگست، 2009

موجودہ صدی میں مسلمانوں کی صورت حال اس قدر خستہ ہوچکی ہے کہ ہر چہار جانب سے مسائل نے ان کا محاصرہ کیاہوا ہے اور دور دور تک مستقبل قریب میں اس صورت حال سے باہر نکلنے کے امکانات نظر نہیں آتے۔ عالمی سطح پر انہیں غیر مہذب ،بداخلاق ، جنگجو اور دہشت گرد خیال کیا جارہا ہے۔ تاریک خیال اوربنیاد پرست جیسے ناموں سے مسلمانوں کا ذکر کرنا اب ایک عام بات بن کر رہ گئی ہے۔ مسلمانوں کو دہشت گرد، تاریک ،بنیاد پرست جیسے ناموں سے مشہور کرنے کےلئے مغربی ذرائع ابلاغ شب وروز ایک کیے ہوئے ہیں۔ افسوسناک بات یہ ہے کہ مسلمانوں کو بدنام کرنے کے لئے مسلم دشمن عناصر جو حربے استعمال کررہےہیں، انہیں اس کامیابی بھی مل رہی ہے۔ کون نہیں جانتا کہ بے بنیاد الزامات لگاکر ہر جگہ مسلم امہ کا جینا دشوار کیا جارہا ہے، ایسے میں انتہائی ضروری ہے کہ مسلمان اپنی شبیہ کو صاف رکھنے اور دیگر اقوام کی غلط فہمیوں کو دور کرنے کے لئے مؤثر کن قدم اٹھائیں ۔

سب سے پہلی اور بنیادی بات یہ ہے کہ موجودہ زمانہ میں ہونے والی ایک اس درگت کے اسباب کو دریافت کریں ،یہ دیکھیں کہ آخر ان کی یہ حالت کیسے ہوئی، کیسے وہ اس قدر پسماندہ ہوگئے ، کیسے دوسری اقوام ان کو نقصان پہنچانے میں کامیاب ہوگئیں، مسلمان تعلیمی، معاشی اور سیاسی سطح پر کیسے پچھڑ گئے اور وہ اقوام جو صدیوں سے زبوں حالی کا شکار چلی آرہی تھیں کیسے ترقی کے اعلی مدارج کو طے کرنے لگیں ؟ مسلمانوں کی پسماندگی کی بہت سی وجوہات میں سے ایک بڑی وجہ یہ ہے کہ و  ہ جمود کے شکار ہوگئے، تعلیم، تحقیق، ٹکنالوجی سے ان کا رشتہ کمزور ہوگیا اور وہ غور وفکر کے عمل کو چھوڑ بیٹھے، جب کہ دوسری جانب دیگر اقوام خصوصاً مغربی اقوام نے ترقی کے میدان میں اپنی کوششوں کو جاری رکھا، چنانچہ معاشی، سیاسی، تہذیبی، دفاعی اور تحقیقی وفکری لحاظ سے انہیں نمایاں کامیابی حاصل ہوتی چلی گئی۔مغربی اقوام کی اقتصادی جدوجہد کا عالم یہ ہے کہ فی زمانہ امریکہ کے ‘‘ڈالر’’ اور یورپ کے ‘‘یورو’’ کو پوری دنیا میں زبردست مقبولیت حاصل ہورہی ہے ۔ اسی طرح عالمی تجارتی منڈیوں میں انہیں کی بالادستی ہے اور عالمی بازاروں میں بھی انہیں کے تیار کردہ پروڈکٹس فروخت ہورہے ہیں۔ نتیجہ کے طور پر ان کی کرنسی دیگر ممالک کے مقابلے میں بہت بلند ہے ۔ حکومتوں کے مالدار ہونے کے ساتھ وہاں کے عوام بھی امیر ہیں اور معاشی بدحالی سے آزاد ہوکر بنیادی و فروعی اشیا کے ساتھ زندگی گزار رہے ہیں۔ یہ الگ بات ہے کہ حال ہی میں عالمی سطح پر اقتصادی بحران کے سبب بعض کمپنیاں ،بینک اور ادارے متاثر ہوئے ہیں، اقتصادی بحران نے انہیں اپنی زد میں لے لیا ہے ۔اگر بات مسلم ممالک کی کی جائے تو متحدہ عرب امارات ،ملیشیا اور ایک دوملکوں کو چھوڑ کر زیادہ تر مسلم ممالک کی کرنسی تشویشناک حد تک گری ہوئی ہے۔ مسلم ممالک کے تیار کردہ پروڈکٹس عالمی مارکیٹ میں نظر نہیں آتے۔

مسلم دنیا کی اس سے بھی زیادہ گئی گزری صورت حال دفاعی سطح پر نظر آتی ہے ۔ نہ ان کے پاس دفاعی سازوسامان ہے اور نہ ہی ان کےے پاس جدید ٹکنالوجی ہے۔ اس سے بھی زیادہ تشویشناک بات یہ ہے کہ مسلمان تعلیم میں بھی بہت زیادہ پچھڑ ے ہوئے ہیں، حالانکہ تعلیم بنی نوع انساں کےلئے انتہائی ضروری ہے پھر دین اسلام نے بھی تعلیم پر بہت زیادہ زور دیا ہے۔

ان تمام حالات کو ذہن میں رکھتے ہوئے موجودہ صدی میں دوباتوں پرتوجہ دینا بہت زیادہ ضروری ہے۔ ایک یہ مسلمان ز وال کے دائرہ سے کس طرح باہر آئیں ،دوسرے یہ کہ وہ ترقی وکامیابی کیسے حاصل کریں۔ ان دونوں چیزوں کے حصول کے لئے اگر چہ بہت سے کام کرنے کی ضرورت ہے تا ہم ترجیحی طور پر تعلیم کی طرف توجہ مرکوز کرنا زیادہ ضروری ہے، تعلیمی میدان میں کامیابی حاصل کرنے کےلئے تعلیم کو ابتدا دوحصوں میں تقسیم کیا جاسکتا ہے ۔(1)ابتدائی تعلیم (2) اعلیٰ تعلیم۔ ابتدائی وبنیادی تعلیم میں ان ضروری مضامین کو شامل کیا جائے، جس کی ہر شخص کو ضرورت پڑتی ہے۔ مثلاً دینی تعلیم اور روز مرہ کی مصروفیات میں کام آنے والی تعلیم ۔دینی تعلیم اس لئے ہر صاحب ایمان کو پوری زندگی میں دینی تعلیم سے واسطہ پڑتا ہے۔ اس کا کوئی بھی دن بغیر دین کے مکمل نہیں ہوتا ہے۔ اس لیے اتنی دینی تعلیم ، جس کی بنیاد پر ہر صاحب ایمان شخص اپنی دینی ضرورتوں کی تکمیل کرسکے اور اسلام کے مطابق آسانی سے زندگی گزارسکے، ضروری ہے۔ بنیادی تعلیم میں ان عصری مضامین کو بھی شامل کیا جائے جو موجودہ حالات میں زندگی گزارنے کے لئے ضروری ہیں۔مثلاً مادری وقومی زبانوں سے واقفیت ،مادی زبان پر عبور اور قومی زبان سے اس قدر شناسائی کہ سرکاری اور قومی سطح کے معاملات کو بخوبی انجام دیا جاسکے۔ دستاویزات کو پڑھا، سمجھا جاسکے اور ضرورت کے مطابق لکھا جاسکے۔ چونکہ یہ دور گلوبلائزیشن کا ہے، اس لئے اگر ایک بین الاقوامی زبان بھی آئے تو زیادہ بہتر ہے ۔تاجر ین کو عموماً امپورٹ وایکسپورٹ کے عمل سے گزرنا پڑجاتا ہے ، اس لیے رابطہ کے طور پر کوئی بین الاقوامی زبان بھی ہونی چاہئے۔

اعلیٰ تعلیم میں ایسے تمام مضامین شامل ہونے چاہئیں ،جو وقت کی ضرورت ہوں اور جن کی بنیاد پر وسیع پیمانہ پر خلق خدا کی خدمت انجام دی جاسکتی ہو۔ دینی لحاظ سے فقہ، تفسیر، حدیث اور اسلامک اسٹڈیز کے ایسے مراکز ہوں، جہاں سے کثیر تعداد میں مسلمان فقہا ، علما ، مفسرین ،محدثین اور اسلامی اسکالرز بن کرنکلیں تاکہ وہ دینی میدان میں اپنی اعلی تعلیم کی بنیاد پر بڑے پیمانہ پر دینی خدمات انجام دے سکیں۔

عصری مضامین میں ‘‘انفارمیشن ٹکنالوجی’’، ‘‘انجینئر نگ ’’، ‘‘میڈیکل ’’ ، جرنلزم اور دیگر پروفیشنل علوم خصوصی توجہ کے حامل ہیں۔ انفارمیشن ٹکنالوجی اس لیے ضروری ہے کہ موجودہ زمانہ میں ہر طرف آئی ٹی (I.T)کا شہرہ ہے۔ انجینئر نگ میں بھی بہت شعبے ہیں، میڈیکل میں ایم بی بی ایس، ایم ڈی اور دیگر مخصوص ڈگریوں کے حصول کے لئے بھی تگ ودو کی جانی چاہئے ۔علاوہ ازیں سیاسیات ،سماجیات، نفسیات، ریاضی، سائنس اور تاریخ میں بھی اعلیٰ تعلیم ضروری ہے تاکہ جہاں ان علوم کے حصول کے بعد معاشی اعتبار سے استحکام آئے ،وہیں دیگر لحاظ سے بھی ترقی ممکن ہو۔ 21ویں صدی میں تعلیمی سطح پر کام کرنے کےلئے موجودہ تعلیمی خاکہ کو کامیابی کے ساتھ نافذ کردیا جائے تو اگلی چند دہائیوں میں بڑی حصولیابی کی توقع کی جاسکتی ہے۔

URL for this article:

http://www.newageislam.com/urdu-section/the-muslim-agenda-in-the-present-century--رواں-صدی-میں-مسلمانوں-کی-ترجیحات-کیا-ہوں؟/d/1604

 




TOTAL COMMENTS:-   1


  • We should Islamise Western sciences as was done by earlier Muslims.Then only it will be popular in Muslim society.

                                                                         


    By ahzacki -



Compose Your Comments here:
Name
Email (Not to be published)
Comments
Fill the text
 
Disclaimer: The opinions expressed in the articles and comments are the opinions of the authors and do not necessarily reflect that of NewAgeIslam.com.

Content